Book Name:Gunaho ke Azabat Hissa 1

چھوڑ دینا ٭ شادی کے موقعے پر ناچ گانا وغیرہ گُنَاہوں بھری تقریبات ( Function’s ) پر مال خَرْچ کرنا وغیرہ

”اِسراف“ کے مُتَعَلِّق  مختلف اَحْکَام

( 1 ): اِسراف شَرع میں مَذْمُوْم ( بُرا ) ہی ہو کر آیا ہے ۔( [1] ) ( 2 ): دو صورتوں میں اِسراف ناجائز وگُنَاہ ہے ایک  ( یہ ) کہ کسی گُنَاہ کے کام میں خَرْچ واِسْتِعْمال کریں، دوسرے بے کار مَحْض مال ضائع کریں ۔( [2] ) ( 3 ): واضِح رہے کہ بھلائی کے کاموں میں خَرْچ کرنا مثلاً عیدِ میلاد النبی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے مَوقع پر گھروں، گلیوں اور محلوں کو سجانا، چَراغاں کرنا اِسراف نہیں ۔ عُلَما فرماتے ہیں: لَا خَیْرَ فِی الْاِسْـرَافِ وَلَا اِسْـرَافَ فِی الْخَیْر یعنی اِسراف میں کوئی بھلائی نہیں اور بھلائی کے کاموں میں کوئی اِسراف نہیں ۔( [3] )

آیتِ مُبَارَکہ

 

وَ لَا تُسْرِفُوْاؕ-اِنَّهٗ لَا یُحِبُّ الْمُسْرِفِیْنَۙ( ۱۴۱ ) ( پ٨، الانعام: ١٤١ )

ترجمۂ کنز الایمان: اور بے جا نہ خرچو بے شک بے جا خرچنے والے اسے ( یعنی اللہ کو ) پسند نہیں ۔

فرمانِ مصطفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

قِیامت کے دِن اِنسان کے قدم نہ ہٹیں گے حتی کہ اُس سے پانچ۵ چیزوں کے بارے میں سُوال کیا جائے گا: ( 1 ): اس کی عُمْر کے بارے میں کہ کِن کاموں میں بَسَر کی ( 2 ): اس کی جوانی کے مُتَعَلِّق کہ کس طرح گُزَاری ( 3-4 ): اس کے مال کے حوالے سے کہ کہاں سے کمایا اور کہاں خرچ کیا اور ( 5 ): اپنے عِلْم پر کتنا عَمَل کیا ۔( [4] )

اِسراف کے گُنَاہ میں مبتلا ہونے کے بَعْض اَسْبَاب

( 1 ): غُرُور وتَکَـبُّـر ( ایسا شَخْص دوسروں پر اپنی برتری جَتانے کے لئے بے جا دولت خَرْچ کرتا ہے ) ۔ ( 2 ): عِلْمِ دِین سے دُوری ( مختلف کاموں میں اِسراف کے مختلف پہلو ہوتے ہیں لہٰذا جب آدمی کسی کام کا اِرادہ کرتا ہے تو اس کام کے مُتَعَلِّق شَرْعِی اَحْکَام کا عِلْم نہ ہونے کی صورت میں اس کا اِسراف اور اس کے عِلاوہ دوسرے گُنَاہوں میں پڑنے کا قوی اِحْتِمال ہوتا ہے ) ۔ ( 3 ): اپنی واہ واہ کی خَواہِش ( دوسروں سے داد وُصُول کرنے کے لئے پیسے کا بے جا اِسْتِعْمال ہمارے مُعَاشَرے میں عام ہے ) ۔ ( 4 ): غَفْلَت ولاپرواہی ( کئی بار آدمی مَحْض اپنی غَفْلَت اور لاپرواہی کے سبب اِسراف میں مُبْتَلا ہو جاتا ہے جیسے وُضو کرتے ہوئے نَل کُھلا چھوڑ دینا، گھر اور آفِس وغیرہ میں بجلی پر چلنے والی اَشیاء کو مَحْض سستی کی وجہ سے چلتا چھوڑ دینا، خوشی غمی کے موقعے پر کھانے پینے والی چیزیں سستی کی وجہ سے ضائع کر دینا ) ۔ ( 5 ): شہرت کی خَواہِش ( بے حَیَائی پر مشتمل فنکشن اور اس طرح کی دیگر خُرافات میں خرچ کی جانے والی رَقَم کا اَصْل سبب شُہرَت کی طَلَب ہی ہوتا ہے ) ۔

اِسراف سے بچنے کے لئے

٭ اِسراف کے اَنْجام پر غَور کیجئے کہ نِعْمَت کی بے قدری کرنے کی وجہ سے اگر وہ نِعْمَت ہم سے چھین لی گئی تو کیسی مُشْکِل پیش آئے گی ۔ ٭ عِلْمِ دِین حاصِل کیجئے تا کہ جہالت کے سبب ہونے والے اِسراف سے مَحْفُوظ رہیں ۔ ٭ عاجزی اِخْتِیَار کیجئے ۔ ٭ مَوت کو کثرت سے یاد کیجئے ، اِنْ شَآءَ اللہ! دل سے دنیاکی مَحَبَّت دُور ہو گی اور گُنَاہوں سے بچنے اور نیکیاں کرنے کا ذِہْن بنے گا ۔

مَدَنی مشورہ: اِسراف کی بَعْض صورتوں کے مُتَعَلِّق مَعْلُومات حاصل کرنے کے لئے شیخِ طریقت، اَمِیْرِ اہلسنت حضرت علَّامہ مولانا ابوبِلال محمد اِلیاس عطار قادِری دَامَتْ بَـرَکَاتُہُمُ الْعَالِـیَہ کا رِسالہ بجلی اِسْتِعْمال کرنے کے مدنی پھول اور وُضو کا طریقہ، صفحہ 37 تا 48 کا مُطَالعہ کیجئے ۔

 



[1]    فتاوی رضویہ ،  ۱ / ۹۸۴.               

[2]     فتاویٰ رضویہ ،  ۱ / ۹۴۰ ،  بتغیر قلیل.

[3]    ملفوظاتِ اعلیٰ حضرت ،  ص۱۷۴.

[4]    ترمذى ،  ابواب صفة القيامة و الرقائق و الورع ،  باب فى القيامة ،  ص٥٧٤ ،  حديث: ٢٤١٦.



Total Pages: 42

Go To