Book Name:Gunaho ke Azabat Hissa 1

دُرُود شریف کی فضیلت

فرمانِ مصطفے ٰ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم: جِبْرَائیل( عَلَیْہِ السَّلَام )نے مجھ سے عرض کی کہ اللہ پاک فرماتا ہے : ”اے مُحَمَّد! کیا تم اِس بات پر راضی نہیں کہ تمہارا اُمَّتی تم پر ایک سلام بھیجے ، میں اُس پر دس سلام بھیجوں!“( [1] )

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                       صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

( 6 )...زکوٰۃ نہ دینا

”زکوٰۃ نہ دینے “کے مُتَعَلِّق  مختلف اَحْکَام

( 1 ): زکوٰۃ نہ دینا گُنَاہِ کبیرہ ( [2] )اور جہنّم میں لے جانے والا کام  ہے ۔ ( 2 ): زکوٰۃ فَرْض ہونے کے بعد اس کی ادائیگی فوری طور پر لازِم ہو جاتی ہے ، بلا عُذْر تاخیر کرنے والا گنہگار ہوتا ہے ۔( [3] )

آیتِ مُبَارَکہ

وَ الَّذِیْنَ یَكْنِزُوْنَ الذَّهَبَ وَ الْفِضَّةَ وَ لَا یُنْفِقُوْنَهَا فِیْ سَبِیْلِ اللّٰهِۙ-فَبَشِّرْهُمْ بِعَذَابٍ اَلِیْمٍۙ( ۳۴ )یَّوْمَ یُحْمٰى عَلَیْهَا فِیْ نَارِ جَهَنَّمَ فَتُكْوٰى بِهَا جِبَاهُهُمْ وَ جُنُوْبُهُمْ وَ ظُهُوْرُهُمْؕ-هٰذَا مَا كَنَزْتُمْ لِاَنْفُسِكُمْ فَذُوْقُوْا مَا كُنْتُمْ تَكْنِزُوْنَ( ۳۵ ) ( پ١٠، التوبة: ٣٤ و٣٥ )

ترجمۂ کنزالایمان: اور وہ کہ جوڑ کر رکھتے ہیں سونا اور چاندی اور اسے اللہ كی راہ  میں خرچ نہیں کرتے انہیں خوش خبری سناؤ درد ناک عذاب کی جس دن وہ تپايا جائے گا جہنّم کی آگ میں پھر اس سے داغیں گے ان کی پیشانیاں اور کروٹيں اور پیٹھیں یہ ہے وہ جو تم نے اپنے لئے جوڑ کر رکھاتھا اب چکھو مزا اُس جوڑنے کا ۔

فرمانِ مصطفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

جس کو اللہ پاک نے مال دیا اور وہ اس کی زکوٰۃ ادا نہ کرے تو قیامت کے دِن وہ مال گنجے سانپ کی صورت میں کر دیا جائے گاجس کے سَر پر دو چِتِّیاں ( یعنی دو نِشان ) ہوں گے ، وہ سانپ اس کے گلے میں طَوْق بنا کر ڈال دیا جائے گا پھر اس کی باچھیں پکڑے گا اور کہے گا: میں تیرا مال ہوں، میں تیرا خزانہ ہوں ۔ ( [4] )

زکوٰۃ ادا نہ کرنے کے بَعْض اَسْبَاب

( 1 ): بُخْل ( یعنی کنجوسی ) ( 2 ): مال ودَوْلت کی مَحَبَّت ( 3 ): محتاجی اور مال کم ہونے کا اندیشہ ۔

زکوٰۃ ادا کرنے کا ذِہْن بنانے کے لئے

٭ زکوٰۃ دینے کے فَضَائِل وبَرَکات اور نہ دینے کے عذابات پڑھئے / سنئے اور اپنے نازُک بدن پر غَور کیجئے کہ زکوٰۃ نہ دینے کے سبب اگر ان میں سے کوئی عذاب ہم پر مُسَلَّط کر دیا گیا تو ہمارا کیا بنے گا ۔ ٭ قَبْر کی تنگی ووَحْشَت اور قِیامت کی ہَولْناکیوں پر غَور کیجئے ، اِنْ شَآءَ اللہ! دل سے دنیا اور مال ودَوْلَت کی مَحَبَّت نکلے گی اور آخرت بہتر بنانے کے لئے شَرِیْعَت وسُنَّت کے مُطَابِق زندگی گُزَارنے کا مدنی ذِہْن بنے گا ۔ ٭ یہ بات ذِہْن میں اچھی طرح بِٹھا لیجئے کہ راہِ خدا میں خرچ کرنے سے مال کم نہیں ہوتا بلکہ بڑھتا ہے چنانچہ نبی اکرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ بَرَکت نِشان ہے : دَرْگُزَر کرنا بندے کی عزّت کو بڑھاتا ہے پس مُعَاف کیا کرو اللہ پاک تمہیں عزّت عطا فرمائے گا، عاجِزی واِنکِساری بندے کے مرتبے میں اِضافہ کرتی ہے پس تَوَاضُع اِخْتِیار کرو اللہ پاک تمہیں رِفْعَت ( بُلَندی ) عطا فرمائے گا اور صدقہ مال کو بڑھاتا ہے پس صدقہ کرو اللہ پاک تم پر رَحْم فرمائے گا ۔( [5] )

مَدَنی مشورہ: زکوٰۃ کے بارے میں تفصیلی مَعْلُومات حاصِل کرنے کے لئے دعوتِ اسلامی کے اِشَاعَتی اِدارے مکتبۃ المدینہ کی مطبوعہ کِتَاب بہارِ



[1]    نسائى ،  كتاب السهو ،  باب الفضل فى الصلاة     الخ ،  ص٢٢٢ ،  حديث: ١٢٩٢.

[2]    رسائل ابن نجيم ،  الرسالة الثالثة والثلاثون فى بيان الكبائر    الخ ،  ص٣٥٣.

[3]    فتاوى هنديه ،  كتاب الزكاة ،  الباب الاول فى تفسيرها    الخ ،  ١ / ١٨٨.

[4]    بخارى ،  كتاب الزكاة ،  باب اثم مانع الزكاة ،  ص٣٩٣ ،  حديث: ١٤٠٣.

[5]    الترغيب و الترهيب للاصفهانى ،  باب فى الترغيب فى التواضع ،  ص٣٦٤ ،  حديث: ٦٢٤.



Total Pages: 42

Go To