Book Name:Jannati Zevar

فکِروں سے آزاد کر دیا۔ ان کے لیے  میری دُعا  ہے کہ

 

 تم   سلامت   رہو   ہزار  برس

ہر برس کے ہوں دن پچاس ہزار

                                       

                                عبدالمصطفٰی الاعظمی عفی عنہ

                                   ۶ شوال  ۱۳۹۹ھ

   

بِسْمِ اللہ  الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

حمد

اے خداوند  جہاں !  اے  خالق  لیل و نہار                            

 ہو نہیں سکتی  تری حمد  و ثنا  ہے  بے  شمار                                                                                          

تودوعالم کاحقیقی  مالک   و   مختار   ہے

ذرے ذرے پر تراچلتا  ہے  حکم  و  اقتدار

تو نے بخشی ہے فلک کے چاند تاروں کو چمک

تیری قدرت سے گل وغنچہ پہ آتاہے نکھار

رحمت  عالم  کے  دامان کرم کا   واسطہ!

بخش دے میرے گناہوں کو‘ہوں نادم‘شرمسار

کھول دے میری  دعاؤں کے لئے باب قبول

عرض کرتا  ہوں  ترے  آگے بچشم  اشکبار

٭٭٭٭

بِسْمِ اللہ  الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

نعت

روضہ  پر  نور  پر ہم کو بلائیں یا رسول  صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

پھر وہاں سے عمر بھر واپس نہ آئیں یا رسول  صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

منظر طیبہ  بنا  دیتا  ہے  دل کو  بے  قرار

یاد آتی  ہیں  مدینہ کی فضائیں  یا رسول  صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

گلستان  زندگی  نذر  خزاں  ہونے  لگا!

بھیج  دو  باغ  مدینہ  کی  ہوائیں   یا رسول  صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

گنبد خضراء کودیکھیں دشت صحراؤں میں پھریں

تیری  آغوش کرم  میں مسکرائیں  یا رسولصَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

آپ  کے  دربار   اقدس   میں   ہزاروں  کی  طرح

ہم  بھی  آکر   داستان  غم   سنائیں  یا رسول  صَلَّی اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ

٭٭٭٭   

(۱)معاملات

 



Total Pages: 188

Go To