Book Name:Jannati Zevar

نبی کی نگاہ کرم اللہ  اللہ      بیاباں ہے رشک ارم اللہ  اللہ

کہاں بارگاہ رسالت کی رفعت    کہاں معصیت کار ہم اللہ  اللہ

وہ شہر مدینہ کی صبح دل آراء     وہ پر کیف شام و سحر اللہ  اللہ

جب آمد ہوئی سرور دوجہاں کی     گرے منہ کے بل سب صنم اللہ  اللہ

سوالی کوئی ان کا محروم کیوں ہو    وہ ہیں شاہ جود و کرم اللہ  اللہ

وہ چاہیں تو ذرے بنیں ماہ و انجم      اشاروں مین رب کی قسم اللہ  اللہ

نسیم ان کے جنت بکف آستاں پر

   فرشتوں کے سر بھی ہیں خم اللہ  اللہ   

مالکِ کونین

مکیں آپ کے مکاں آپ کا ہے       حقیقت میں سارا جہاں آپ کا ہے

ہیں شاہان عالم جہاں سر خمیدہ       وہ جنت بکف آستاں آپ کا ہے

حقیقت کی آنکھوں سے دیکھے توکوئی    ہر اک شے میں جلوہ عیاں آپ کا ہے

سر عرش ہے ان کی عظمت کاپرچم    دو عالم میں سکہ رواں آپ کا ہے

یہاں سے وہاں تک ہے رحمت ہی رحمت     اگر نام ورد زباں آپ کا ہے

مقدس مطہر مبارک منور       ازل ہی سے نام و نشاں آپ کا ہے

حبیب خدا تاجدار مدینہ         زمیں آپ کی آسماں آپ کا ہے

نسیم حزیں پر نگاہ کرم ہو

کہ وہ بھی شہا مدح خواں آپ کا ہے

جانِ ایمان

جان ایمان یارسول اللہ        تیرے قربان یارسول اللہ

عرش وفرش و فلک ہیں سب تیرے    زیر فرمان یارسول اللہ

اور کس کے حضور لے جاؤں       خالی دامان یارسول اللہ

تیری ہستی بنائی ہے رب نے     کیسی ذیشان یارسول اللہ

منزلیں قبر و حشر کی ہوں گی     تم سے آسان یارسول اللہ

ہوگا محشر میں سائباں سر پر    تیرا دامان یارسول اللہ

تا ابد قلب میں رہے روشن      شمع ایمان یارسول اللہ   

تیرے انسانیت پہ ہیں بے شک    لاکھوں احسان یارسول اللہ

کعبۂ دل نہ کیوں ہوں عرش مقام   تم ہو مہمان یارسول اللہ

کردو پورے نسیم کے دل کے

سارے ارمان یارسول اللہ

از حضرت مفتی اعظم صاحب قبلہ بریلوی مدظلہ

تو شمع رسالت ہے عالم تیرا پروانہ

تو ماہ نبوت ہے اے جلوہ جانانہ

جوساقیٔ کو ثر کے چہرے سے نقاب اٹھے

ہر دل بنے مے خانہ ہر آنکھ ہو پیمانہ

دل اپنا چمک اٹھے ایمان کی طلعت سے

کر آنکھیں بھی نورانی اے جلوۂ جانانہ

میں شاہ نشیں ٹوٹے دل کو نہ کہوں کیسے

 



Total Pages: 188

Go To