Book Name:Jannati Zevar

وہ بیٹھے ہوں اٹھا ہو بارگاہ پاک کا پردہ                                         

کہانی در پہ کہتا ہوں شفیق جاں نثار اپنی                                        

دیگر

اجالی رات ہوگی اور میدان قبا ہوگا

زبان شوق پر یا مصطفی یا مصطفی ہوگا

کہ اترے ہونگے رحمت کے فرشتے آسمانوں سے

خدا کا نور ہوگا روضۂ خیر الورٰی ہوگا

وہ نخلستان مکہ وہ مدینہ کی گزرگاہیں

کہیں نور نبی ہوگا کہیں نور خدا ہوگا

یلملم ہی سے شورش ہوگی دل کی بیقراری میں

پہن کر جامۂ احرام زائر جھومتا ہوگا

نہ پوچھو عاشقوں کا ولولہ جدہ کے ساحل پر

لبوں پر نغمہ  اِنْ نِلْتِ یَا رِیْحَ الصَّبَا  ہوگا

جھکی ہوگی مری گردن گناہوں کی خجالت سے

زباں پر یا رسول اللہ  اُنْظُرْحَالَنَا  ہوگا

کچھ اونٹوں کی قطاروں میں انوکھی سادگی ہوگی

حدی خوانوں سے طیبہ کا بیاباں گونجتا ہوگا

کبھی کوہ مفرح سے نظارے ہونگے گنبد کے

کبھی بیر علی پر عاشقوں کا جھمگھٹا ہوگا

شفیق اس دن نہ پوچھو درد الفت کی فراوانی

کہ ہم ہوں گے حجاز پاک کا دار الشفا ہوگا

دیگر

نہیں تیرے سوا کوئی پیامی     اِلَیْہِ یَاصَبَا بَلِّغْ سَلَامِیْ

وہ سوجائیں تو معراج منامی     وہ جاگیں تو خدا سے ہم کلامی

ہے شاہوں کو بھی وجۂ نیک نامی   شہِ خوباں ترے در کی غلامی

ہر اک شیدا ہے سلطان عرب کا  عراقی ہو کہ رومی ہو کہ شامی

   

نگاہ سیر گاہ لِیْ مَعَ اللّٰہِ     تَعَالٰی اللّٰہ تری عالی مقامی

اسی سروِ خراماں کا ہے صدقہ   نسیم صبح! تیری خوش خرامی

شفیق انداز حسرت کے علاوہ

مرے اشعار میں ہے رنگ جامی

از مولانا نسیم بستوی               

محمد کا دارالسلام اللہ  اللہ          وہ باران فیض دوام اللہ  اللہ

جہان رسالت کے خورشید تابان    نبوت کے ماہ تمام اللہ  اللہ

نگاہوں میں طیبہ کی پھرتی ہے اکثر   حسیں صبح پر نورشام اللہ  اللہ

سر حشر تشنہ لبوں کو وہ اپنے         پلائیں گے کوثر کا جام اللہ  اللہ

جبیں اسکے قدموں پہ جھکتی ہے سب کی   جوہے مصطفی کا غلام اللہ  اللہ

دل مضطرب بہر طیبہ ہے نالاں      کریں اب کوئی اہتمام اللہ  اللہ

 



Total Pages: 188

Go To