Book Name:Subh e Baharan

داڑھی مبارَک کے انوار اور سر پر سبز سبز عمامہ شریف کی بہار ہے نیز تادمِ تحریر علاقائی مُشاوَرَت کے خادِم ( نگران)  کی حیثیت سے سنّتوں کی دھومیں مچانے کی سعادت مُیَسَّرَّ (مُ۔ یَس۔ سَر)  ہے۔

عطائے حبیبِ خدا مَدَنی ماحول             ہے فیضانِ غوث و رضا مَدَنی ماحول

یہاں سنّتیں سیکھنے کو ملیں گی             دلائے گا خوفِ خدا مَدَنی ماحول

یقینا مقدّر کا وہ ہے سکندر

جسے خیر سے مل گیا مَدَنی ماحول

 (وسائلِ بخشش ص۶۰۴)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                       صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

 {۳} نور کی بارِش

          عید ِمیلادُ النَّبی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  (  ۱۴۱۷؁ ھ)  کو دوپَہر کے وَقت ہر سال کی طرح ظُہر کی نَماز کے بعد دعوتِ اسلامی کے حَلقہ ناظِم آباد بابُ المدینہ کراچی کا مَدَنی جُلوس سرکار کی آمد مرحبا کے نعرے لگاتا اورمرحبا یا مصطَفٰی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی دُھومیں مچاتا سڑکوں سے گزر رہا تھا ۔  جگہ جگہ جُلوس روک کرشُرکاء کو بٹھا کر نیکی کی دعوت پیش کی جارہی تھی ۔ دَرایں اَثنا ایک مقام پر کم وبیش دس سالہ مَدَنی مُنّے نے  ’’نیکی کی دعوت‘‘ پیش کی ۔ جُلوس پرسُکوت طاری تھا۔  بیان خَتم ہونے پر ایک شَخص اُٹھا اورپوچھتا ہوا نگرانِ حلقہ کے پاس پہنچا ، اس پر رِقّت طاری تھی ، کہنے لگا :  ’’میں نے اپنی کُھلی آنکھوں سے دیکھا کہ دورانِ بیان آپ کے ننھے مُنّے مبلّغ سَمیت تمام شُرکائے جُلوس پر نور کی بارِش ہورہی تھی۔  مُعاف کیجئے میں غیر مسلم ہوں ،  مہر بانی کر کے مجھے  جَھٹ داخلِ اسلام کر لیجئے۔   ‘‘ مرحبا کے نعروں سے فَضا کا سینہ دَہل گیا۔  عیدِ میلادُ النبی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے مَدَنی

جُلوس کی عَظَمت اوردعوتِ اسلامی کی بابَرَکت مَدَنی بہار دیکھ کر شیطٰن سر پیٹ کر رَہ گیا ۔  داخلِ اسلام ہونے کے بعد وہ شخص یہ کہتا ہوا چل پڑا کہ اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّمیں اپنے خاندان میں جا کر اسلام کی دعوت پیش کروں گا۔ چُنانچِہ اُس نے ایساہی کیا اور اس کی انفِرادی کوشِش کی بَرَکت سے اس کی بیوی اورتین بچّے نیز اس کے والِد صاحِب دینِ اسلام کے دامن میں آگئے ۔    ؎

عیدِ میلادُ النَّبی ہے دل بڑا مسرور ہے     عید دیوانوں کی تو بارہ ربیعُ النُّور ہے

ہر مَلَک ہے شادماں خوش آ ج ہر اک حور ہے            ہاں مگر شیطان مَع رُفَقَاء بڑا رَنجُور ہے

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                 صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

 {۴} آج بھی جلوے عام ہیں

          ایک عاشقِ رسول کا کچھ اِس طرح کا بیان ہے :  شبِ عیدِ میلادُ النّبی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَککری گراؤنڈ بابُ المدینہ کراچی میں دعوتِ اسلامی کی طرف سے مُنعَقِد (مُن۔  عَ۔ قِد)  کردہ بڑی رات کے غالِباًدُنیا کے سب سے بڑے اِجتِماعِ میلاد میں ہم چند اسلامی بھائی حاضِر ہوئے۔ بَرسَبیلِ تذکِرہ ایک اسلامی بھائی کہنے لگے:  دعوتِ اسلا می کے اِجتِماع میلادمیں پہلے کافی رِقّت ہوا کرتی تھی اب وہ بات نہیں رہی۔  یہ سُن کر دوسرا بولا:  یار !آپ کی یہاں بھول ہو رہی ،  اِجتِماعِ میلادکی کیفیت تو وُہی ہے مگر ہمارے دلوں کی کیفیت پہلے کی سی نہیں رہی،  ذِکر رسول صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  بھلا  کیسےبدل سکتا ہے! ہماری ذِہنیَّت تبدیل ہو گئی ہے !اگر آج بھی ہم تنقید کی خشک وادیوں میں بھٹکنے کے بجائے بصد عقیدت تاجدارِ رسالت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے حَسین تصوُّر میں ڈوب کر نعت شریف سنیں تو اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّکرم بالائے



Total Pages: 16

Go To