Book Name:Yateem kisay kehtay hain?

کہ پانی زمینِ حرم سے ختم ہو چکا ہے اور سُرخ رنگ کی مٹی ظاہِر ہو گئی ہے۔ کبوتر کے دونوں پاؤں سُرخ مٹی سے رنگین ہو گئے اور وہ اسی حالت میں حضرتِ سیِّدُنا نوح عَلٰی نَبِیِّنَا وَ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام  کے پاس واپس آ گیا اور عرض کی : یَا نَبِیَّ  اللّٰہ! میرے لیے یہ بات خوشی کا باعث ہو گی کہ آپ عَلٰی نَبِیِّنَا وَ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام   میرے گلے میں خوبصورت ہار پہنا دیجیے اور میرے پاؤں سُرخ فرما دیجیےاور مجھے زمینِ حرم میں رہائش کا شرف بخش دیجیے۔ حضرتِ سیِّدُنا نوح عَلٰی نَبِیِّنَا وَ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام  نے کبوتر کی چونچ اور گردن پر دستِ شَفْقَت پھیرا ، اسے  ہار  پہنایا ، اس کے پاؤں کو سرخی عطافرمائی ، اس کے لیے اور اس کی اولاد کے لیے برکت کی دُعا مانگی۔([1])

کبوتر کی خاص عادات وصفات

سُوال : کبوتر کی کچھ خاص عادات بیان فرما دیجیے۔

جواب : حضرتِ سیِّدُنا علّامہ کمال الدین الدمیری عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللّٰہ ِالْقَوِی فرماتے ہیں : کبوتر کی خاص عادت یہ ہے کہ اگر اس کو ایک ہزار میل کے فاصلے سے بھی چھوڑا جائے تو یہ اُڑ کر اپنے گھر پَہُنچ جاتا ہے نیز دُور دراز ملکوں سے خبریں  لاتا  اور لے جاتا ہے اور یہ بھی دیکھنے میں آیا ہے کہ اگرکبھی کسی کا پالتو کبوتر اور کسی جگہ پکڑا گیا اور تین تین سال یا اس سے بھی زیادہ مُدَّت تک اپنے گھر سے غائب رہا مگر باوُجُود اس طویل غیر حاضری کے وہ اپنے گھر کو نہیں بھولتا اور اپنی ثباتِ عقل ، قُوَّتِ حافِظہ اور کششِ گھر پر برابر قائم رہتا ہے اور جب کبھی اسے  موقع ملتا ہے اُڑ کر اپنے   گھر آجاتا ہے۔ مزید فرماتے ہیں : اگر کسی شخص کے اَعْضاء شل ہوجائیں یا لَقْوہ ، فالج کا اَثر ہو جائے تو ایسے شخص کو کسی ایسی جگہ جہاں کبوتر رہتے ہوں وہاں یا کبوتر کے قریب رہنا مفید ہے ، یہ کبوتر کی عجیب و غریب خاصیّت ہے ، اس کے علاوہ ایسےشخص کے لیے اس کا گوشت بھی فائدہ مند ہے۔ ([2])  

کبوتر کا گوشت حلال ہے

سُوال : کبوتر کا گوشت کھانا حلال ہے یا حرام؟

جواب : کبوتر حلال پرندوں میں سے ہے۔ فقہائے کرامرَحِمَہُمُ اللّٰہ ُ السَّلَام نے اونچا اُڑنے والے حلال پرندوں میں کبوتر اور چڑیا  کا بھی ذکر فرمایا ہے۔([3]) لہٰذا اس کا گوشت کھانے میں کسی قسم کی کراہت نہیں میرے آقا اعلیٰ حضرت عَلَیْہِ رَحْمَۃُرَبِّ الْعِزَّت کی بارگاہ میں سوال ہوا کہ “ کبوتر کے کھانے میں کسی قسم کی کراہت ہے؟ “ تو آپرَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہِ نے جواباً اِرشاد فرمایا : کچھ نہیں ۔ ([4])

ماخذ و مراجع

قرآنِ پاک                          ٭٭٭٭                     ٭٭٭٭                     ٭٭٭٭

نام کتاب                    مطبوعہ       مطبوعہ          نام کتاب  نام کتاب         مطبوعہ      مطبوعہ

 کنزالایمان                            مکتبۃ المدینہ۱۴۳۲ھ              مرآۃ المناجیح                     ضیاء القرآن پبلی کیشنز لاہور

نورُ العرفان                          پیر بھائی کمپنی مرکزالاولیا لاہور     البحر الرائق                     کوئٹہ ۱۴۲۰ھ

حاشیۃ الصاوی علی الجلالین                                                  دار الفکر بیروت۱۴۲۱ھ           فتح القدیر                    کوئٹہ

الدر المنثور                           دار الفکر بیروت۱۴۰۳ھ          الدر المختار                          دار المعرفہ بیروت۱۴۲۰ھ

صحیح مسلم                             دار ابن حزم بیروت ۱۴۱۹ھ        رد المحتار                            دار المعرفہ بیروت۱۴۲۰ھ

سنن ابنِ ماجہ                        دار المعرفہ بیروت۱۴۲۰ھ        فتاویٰ رضویہ                     رضا فاؤنڈیشن مرکز الاولیا لاہور

مسندِ امام احمد                         دا ر الفکر بیروت۱۴۱۴ھ           بہارِ شریعت                       مکتبۃ المدینہ كراچی پاکستان

مسندِ بزار                              مکتبۃ العلوم والحکم  ۱۴۲۴ھ         وقار الفتاویٰ                       بزم وقار الدین کراچی

المعجم الاوسط                          دار الکتب العلمیہ بیروت ۱۴۲۰ھ  الحدیقۃ الندیۃ                  مطبعۂ عامر۱۲۹۰ھ

فردوس الاخبار                      دار الفكر بيروت ۱۴۱۸ھ          حیاۃ الحیوان الکبریٰ           دارالکتب العلمیہ بیروت ھ

 



   [1] تَفْسِیرصَاوی  ،  پ۱۲ ، ھود  ،  تحت الآیة: ۴۸ ، ۳ / ۹۱۶  مُلَخصاً

   [2] حَیاةُ الْحَیوان الْکُبْریٰ  ، الحمام