Book Name:Nekiyan Barbad Honay Say Bachaiye

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                 صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

گوشہ نشینی کی وجہ(حکایت:25)

       جب حضرتِ سیِّدُناامام جعفر صادِق علیہ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْخالِق تارِکُ الدُّنیا (یعنی گوشہ نشین)ہو گئے تو حضرت سیِّدُنا سُفیان ثَوری علیہ رَحمَۃُ اللّٰہِ القوی نے حاضرِ خدمت ہو کرکہا : تارِکُ الدُّنیا ہونے سے مخلوق آپ رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہ کے فُیُوض و بَرَکات سے محروم ہو گئی ہے!  آپ رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہنے اس کے جواب میں مُندَرَجَۂ ذَیل دو شعر پڑھے   ؎

ذَھَبَ الْوَفَاءُ ذِھَابَ اَمْسِ الذَّاھِبِ                                     وَالنَّاسُ بَیْنَ مُخَایِلٍ وَّ مَآرِبٖ

یُفْـشُـوْنَ بَیْنَھُمُ الْمَـوَدَّۃَ وَالْـوَفَا                                                                    وَ قُلُوبُـہُـمْ مَحْـشُـوَّۃٌ بِعَـقَـا رِ بٖ

یعنی وفاکسی جانے والے کل کی طرح چلی گئی اورلوگ اپنے خیالات وحاجات میں غَرَق ہو کر رہ گئے۔ لوگ یوں تو ایک دوسرے کے ساتھ اظہارِمَحَبَّت و وفا کرتے ہیں لیکن ان کے دل ایک دوسرے کے بُغْض وکینے کے بچھوؤں سے لبریز ہیں! (تذکرۃُ الاولیاء ، ص۲۲)

        شیخِ طریقت امیرِ اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ اس حکایت کو نقل کرنے کے بعد لکھتے ہیں : میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!دیکھا آپ نے!   سیِّدُناامام جعفر صادِق علیہ رَحمَۃُ اللّٰہِ الخالق لوگوںکی مُنافَقَت والی رَوِش سے تنگ آکرخَلْوَت(تنہائی) میں تشریف فرما ہوگئے۔ اس پاکیزہ دور میں بھی یہ صورتِ حال ہونے لگی تھی تو اب تو جو حال بے حال ہے اُس کا کس سے شکوہ کیجئے۔ آہ!آج کل تو اکثر لوگوں کاحال ہی عجیب ہو گیا ہے جب باہم ملتے ہیںتو ایک دوسرے کے ساتھ نہایت تعظیم کے ساتھ پیش آتے اورخوب حال اَحوال پوچھتے ہیں ، ہر طرح کی خاطر داری اور خوب مہمان داری کرتے ہیں کبھی ٹھنڈی بوتل پلا کرنِہال کرتے ہیں توکبھی چائے پلا کر ، پان گٹکے سے منہ لال کرتے ہیں ۔ بظاہِر ہنس ہنس کرخوش کلامی و  قِیْل و قَال کرتے ہیں مگر اپنے دل میں اُس کے بارے میںبُغض و ملال رکھتے ہیں۔  (غیبت کی تباہ کاریاں ، ص۱۲۸)

ظاہر و باطن ہمارا ایک ہو          یہ کرم یامصطَفٰے فرمایئے

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                 صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(19) مسجد میں دنیا کی باتیں کرنا

صَدرُ الشَّریعہ،بدرُ الطَّریقہحضرتِ  علّامہ مولانامفتی محمد امجد علی اعظمی علیہ رحمۃُ اللّٰہِ القویلکھتے ہیں : مسجد میں دنیا کی باتیں کرنی مکروہ ہیں۔ مسجد میں کلام کرنا نیکیوں کو اس طرح کھاتا ہے جس طرح آگ لکڑی کو کھاتی ہے ، یہ جائز کلام کے متعلق ہے ناجائز کلام کے گناہ کا کیا پوچھنا۔  (بہار شریعت ، ۳ / ۴۹۹بحوالہ ردالمحتار ، ۹ / ۶۹۰)

ان کو اﷲسے کچھ کام نہیں

          حضرت سیِّدُنا حَسَن بصری رضی اﷲتعالٰی عنہسے مروی ہے : یَأتِیْ عَلَی النَّاسِ زَمَانٌیَکُوْنُ حَدِیْثُھُمْ فِیْ مَسَاجِدِھِمْ فِیْ اَمْرِ دُنْیَاھُمْ فَلَا تُجَالِسُوْھُمْ فَلَیْسَ لِلّٰہِ فِیْھِمْ حَاجَۃٌ  یعنی لوگوں پر ایک زمانہ ایسا آئے گاکہ مساجِدمیں دُنیاکی باتیں ہوں گی ، تم ان کے ساتھ مت بیٹھوکہ ان کواﷲعَزَّوَجَلَّ سے کچھ کام نہیں۔  (شُعَبُ الایمان،باب فی الصلوات،فصل المشی الی المساجد ، ۳ / ۸۶حدیث : ۲۹۶۲)

مسجد ہر متقی کا گھرہے

          سرکارِ ابد قرار ، شافعِ روزِ شمارصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کا فرمانِ عظمت نشان ہے : اَلْمَسْجِدُ بَیْتُ کُلِّ تَقِیٍّ وَتَکَفَّلَ اللّٰہُ لِمَنْ کَانَ



Total Pages: 42

Go To