Book Name:Bargah e Risalat Main Sahabiyat Kay Nazranay

بکر صِدّیق رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا کی زوجہ محترمہ تھیں، بارگاہِ نُبوّت میں اپنی مَحبَّت کا اِظْہَار کچھ یوں فرماتی ہیں:

اَمْـسَـتْ مَـرَاكِـبُـهُ اَوْحَـشَـتْ                                                          وَ قَدْ كَانَ يَـرْكَـبُـهَـا زَيْـنُـهَـا

وَ اَمْـسَـتْ تُـبَـكِّـی عَـلٰى سَـيِّـدٍ                                                   تُـرَدِّدُ عَـبْـرَتَـهَـا عَـيْـنُـهَـا

وَ اَمْـسَـتْ نِسَاؤُكَ مَا تَسْتَفِيقُ                                                  مِـنَ الْـحُـزْنِ يَـعْـتَادُهَا دَيْـنُـهَـا

وَاَمْـسَـتْ شَوَاحِبَ مِثْلَ الـنِّصَا                                                       لِ قَدْ عُـطِّـلَـتْ وَكَـبَـا لَـوْنُـهَـا

يُـعَـالِـجْـنَ حُزْنًا بَعِيدَ الذَّهَابِ                                                     وَفِی الصَّدْرِ مُكْتَـنِـعٌ حَـيْـنُـهَـا

يَـضْرِبْنَ بِالْـكَفِّ حُـرَّ الْـوُجُوهِ                                                                      عَلٰى مِـثْـلِـهٖ جَـادَهَـا شُـونُـهَـا

هُـوَ الْـفَاضِلُ السَّيِّدُ الْمُصْطَفٰى                                                              عَلَى الْـحَـقِّ مُـجْـتَـمِـعٌ دِيْـنُـهَـا

فَـكَيْفَ حَـيَـاتِی بَـعْدَ الـرَّسُولِ                                                                وَ قَـدْ حَـانَ مِـنْ مَّـيْـتَـةٍ حِـيـنُـهَـا [1]

            یعنی سواریاں مُتَوَحِّش (وَحْشَت انگیز) ہوئی جارہی ہیں کہ جن پر  حُضُورصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سوار ہوتے   تو اِن کی شان بڑھ جاتی ۔ آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے وِصَالِ باکمال پر آنکھیں ہیں کہ روتی ہی جا رہی ہیں اور آنسو لگاتار جاری ہیں ۔ اے رَسولِ خُدا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم!آپ کی  اَزواجِ مُطَہِّرات کی حَالَت یہ ہوگئی ہے کہ انہیں فَرْطِ رنج و غَم سے اِفاقہ ہوتا ہی نہیں، بلکہ رنج ہے کہ بڑھتا ہی جاتا ہے  ۔ وہ فَرْطِ غَم سے اس طرح دبلی پتلی ہو گئی ہیں جیسے کوئی بیکار اور بے رنگ دھاگا ہو ۔  بَظاہِر وہ اپنے دُکھ پر قابو پانے کی کوشِش کر رہی ہیں مگر ان کا یہ حُزْن و مَلال (غَم) جَلْدی جانے والا نہیں بلکہ وہ تو ان کے سینے میں قید ہے ۔ وہ اپنی ہتھیلیوں میں چہرے چھپائے ہوئے ہیں، ایسی حَالَت میں ایسا ہی ہوتا ہے ۔ حُضُور صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم صَاحِبِ فَضْل و سردار اور برگزیدہ تھے ، اُن کا دِین حَق پر مُجْتَمِع تھا ۔ اب میں آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے بعد زندہ کیسے رہوں گی، آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم تو اس جَہانِ فانی سے کوچ فرما گئے ہیں ۔  

اسلامی بہنوں کا نعت  پڑھنا کیسا؟

پیاری پیاری اسلامی بہنو! نعت خوانی اعلیٰ دَرَجہ کی چیز ہے ۔  اچّھی اچّھی نیّتیں کر کے نعت شریف پڑھنا اور سننا باعِثِ ثوابِ آخِرَت اور مُوجِبِ خَیرو بَرَ کت ہے ۔  اَلْحَمْدُ لِلّٰہ  عَزَّ  وَجَلَّ تبلیغِ قرآن و سنّت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے مہکے مہکے مَدَنی  ماحول کی بَرَکت  سے اسلامی بہنوں کے دِلوں میں عِشْقِ مصطفے ٰ کی جو شَمْع روشن ہوئی ہے اس کی روشنی گھر گھر تک پہنچ چکی ہے ۔  اس مَدَنی  مَاحَول میں ایک سے ایک خوش آواز نعت خوان اِسلامی بہنیں کَثَّرَھُنَّ اللہُ تعالٰیسرکارِ مدینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو چاہنے والیوں کے قُلوب کو گرماتی اور انہیں عِشْقِ مصطفے ٰ میں تڑپاتی ہیں ۔ مگر ایسی تمام اِسْلَامی بہنوں کو شیخ طریقت، امیر اہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی یہ باتیں ہمیشہ یاد رکھنی چاہئیں جو آپ نے دعوتِ اسلامی کے اِشَاعتی اِدارے مکتبۃ المدینہ کی مَطْبُوعَہ  400 صَفحات پر مُشْتَمِل کِتاب پردے کے بارے میں سوال جواب صَفْحَہ 254تا 256پر سوالاً جواباً یوں تحریر کی ہیں:

سوال…… اسلامی بہنیں اسلامی بہنوں میں نعتیں پڑھ سکتی ہیں یا نہیں؟

جواب……اسلامی بہنیں، اسلامی بہنوں میں بِغیر مائیک کے اس طرح نعت شریف پڑھیں کہ اُن کی آواز کسی غیر مرد تک نہ پہنچے ۔  مائیک کا اس لئے مَنْع کیا کہ اِس پر پڑھنے یا بیان کرنے سے غیر مَردوں سے آواز کو بچانا قریب قریب نامُمکِن ہے ۔  کوئی لاکھ دِل کو مَنا لے کہ آواز شامیانے یا مکان سے باہَر نہیں جاتی مگر تجرِبہ یہی ہے کہ لاؤڈاسپیکر کے ذَرِیعے عورت کی آواز عُمُوماً غیر مَردوں تک پَہنچ جاتی ہے بلکہ بڑی مَحافِل میں مائیک کا نِظام بھی تو اکثر مرد ہی چلاتے ہیں!سگِ مدینہ عُفِیَ عَنْہُ کو ایک بار کسی نے بتایا کہ فُلاں جگہ مَـحْفِل میں ایک صاحِبہ مائیک پر بیان فرما رہی تھیں، بعض مَردوں کے کانوں میں جب اُس نِسوانی آواز نے رَس گھولا تو ان میں سے ایک بے حَیا بولا :آہا!کتنی پیاری آواز ہے !! جب آواز اتنی پُرکشِش ہے تو خود کیسی ہو گی!!!  وَ لَاحَوْلَ وَلَا قُوَّةََ اِلَّابِالله[2]

اسلامی بہنیں مائیک استِعمال نہ کریں

ياد رہے ! دعوتِ اسلامی کی طرف سے ہونے والے سنّتوں بھرے اجتِماعات اور اِجتِماعِ ذِکْر  و نعت میں اسلامی بہنوں کیلئے لاؤڈ اسپیکر کے استِعمال پر پابندی ہے ۔  لہٰذا اسلامی بہنیں ذِہن بنا لیں کہ کچھ بھی ہو جائے نہ لاؤڈا سپیکر میں بیان کرنا ہے اور نہ ہی اس میں نعت شریف پڑھنی ہے  ۔  یاد رکھئے !



[1]     امتاع الاسماع، فصل فی ذکر نبذة ممارثی به رسول الله، ۱۴/۶۰۲

[2]     پردے کے بارے میں سوال جواب،ص۲۵۴



Total Pages: 15

Go To