Book Name:Bargah e Risalat Main Sahabiyat Kay Nazranay

مَنْ حَجَّ  مِنْهُمْ اَوِ اعْتَمَرْ                              اَحْسَنُ مِنْ وَّجْهِ الْـقَمَرْ

مِنْ كُلِّ اُنْثٰى وَذَكَـرْ                                                                                              مِنْ كُلِّ مَشْبُوبٍ اَغَـرْ

جَـنِّبْنِیَ اللهُ الْغِـيَـرْ                                                                                                         فِـيْهِ وَاَوْضِحْ لِیَ الْاَثَـرْ[1]

یعنی جو اِنسان گزَر چکے اور جو آئیں گے ان سب سے بہتر حضرت محمد صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ہیں ۔ میرے آقا حج و عمرہ کی سَعَادَت پانے والوں میں بھی سب سے اعلیٰ بلکہ حُسن و جَمال میں چاند سے بھی بڑھ کرہیں ۔ آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم تو ہر خُوبْصُورَت اور بَہَادُر مَرد و عورت سے بڑھ کر غیرت والے ہیں ۔  اے میرے رب! مجھے حَوَادِثِ زمانہ سے بچا کر  میرے لیے میرے آقا کی راہ کو واضِح فرما دے ۔

سیدتنا  عائشہ صدیقہ کے اشعار

ایک رِوایَت میں اُمُّ الْمومنین حضرت سَیِّدَتُنا عائشہ صِدّیقہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا سے نعتیہ کلام پر مُشْتَمِل یہ اَشعار مَرْوِی ہیں:

فَلَوْ سَمِعُوْا فِیْ مِصْرَ اَوْصَافَ خَدِّہٖ                             لَمَا بَذَلُوْا فِیْ سَوْمِ يُوْسُفَ مِنْ نَّقْدٍ

لَـوَّامِیْ زُلَيْخَا لَوْ رَائَيْنَ جَبِيْنَهُ                                               لَاَ ثَرْنَ بِالْـقَطْعِ الْـقُلُوْبِ عَلَی الْيَدِ

یعنی اگرآپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے رُخسار مُبارَک کے اَوصَاف اَہْلِ مِصر سن لیتے تو سَیِّدُنا یوسُف عَلَیْہِ السَّلَام  کی قیمت لگانے میں سیم و زر نہ بہاتے اور اگر زُلیخا کو مَلَامَت کرنے والی عورتیں آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی جبینِ اَنْوَر دیکھ لیتیں تو ہاتھوں کے بجائے اپنے دِل کاٹنے کو ترجیح دیتیں  ۔ [2]

وفات ظاہری کے بعد صحابیات کا کلام

پیاری پیاری اِسْلَامی بہنو! سرکارِ مدینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے وِصَالِ باکمال پر صحابیات طیبات رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُنَّ نے جن اَلفاظ میں آپ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے اَوصافِ حَمیدہ ذِکْر کئے ان سے ظاہِر ہوتا ہے کہ انہیں اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے کتنا گہرا قلبی لگاؤ اور مَحبَّت تھی ۔  ذیل میں صحابیات طیبات کے چند کلام پیشِ خِدْمَت ہیں:

سرکار کی پھوپھی جنابِ سیدتنا  اَرویٰ کے اَشعار

سرورِ کائنات، فَخْرِ مَوجُودات صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی پھوپھی حضرت سَیِّدَتُنا  اَرویٰ بنت عبد المطلب رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا  کا شُمار ان صَاحِبِ فَضْل خواتین میں ہوتا ہے جنہیں اِسلام سے قَبْل زمانۂ جاہِلیَّت میں بھی قَدْر کی نِگاہ سے دیکھا جاتا تھا، آپ صائب الرائے تھیں اور امیر المومنین حضرت سَیِّدُنا  عمر فاروق رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کے زمانہ تک حَیات رہیں ۔  آپ سے بَہُت ہی عُمدہ اَشعار مَرْوِی ہیں ۔ [3] چنانچہ آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا نے اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کے مَحبوبصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی یادمیں کئی کلام کہے ، ان میں سے ایک کلام کے چند اَشعار پیشِ خِدْمَت ہیں:

اَلَا یَا رَسُوْلَ اللهِ کُنْتَ رَجَاءَنَا                                                                                              وَکُنْتَ بِنَا بَـرًّا وَّلَمْ تَكُ جَافِیَا

وَكُنْتَ بِنَا رَءُوفًا رَّحِيمًا نَبِيَّـنَا                                                                                                 لِيَبْكِ عَلَيْكَ الْيَوْمَ مَنْ كَانَ بَاكِيَا

لَعَمْرُكَ مَا اَبْكِی النَّبِیَّ لِـمَوْتِهٖ                                                                                                      وَلٰـكِنْ لِـهَرْجٍ كَانَ بَعْدَكَ آتِيَا

كَاَنَّ عَلٰى قَلْبِىْ لِذِكْرِ مُحَمَّدٍ                                                                                                       وَّمَا خِفْتُ مِنْ بَعْدِ النَّبِىِّ الْـمَكَاوِيَا

فِدًا لِرَسُولِ اللهِ اُمِّی وَخَالَتِی                                                                                                       وَعَمِّی وَنَفْسِی قُصْرَةً ثُمَّ خَالِيَا

صَبَرْتَ وَبَلَّغْتَ الرِّسَالَةَ صَادِقًا                                                                                        وَّقُمْتَ صَلِيبَ الدِّينِ أَبْلَجَ صَافِيَا

فَلَوْ اَنَّ رَبَّ الـنَّاسِ اَبْقَاكَ بَينَنَا                                                                                     سَعْدُنَا وَلٰكِنْ اَمْرُنَا كَانَ مَاضِيَا

عَلَيْكَ مِنَ اللهِ السَّلَامُ تَـحِـيَّـةً                                                                                          وَّاُدْخِلْتَ جَنَّاتٍ مِنَ الْعَدْنِ رَاضِيَا[4]

یعنی یارسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم! آپ ہماری اُمِّید اور ہمارے ساتھ اَچھّا سلوک کرنے والے تھے اور بِالْکُل سَخْت مِزاج نہ تھے ۔  آپ ہمارے نبی عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام ہیں اور آپ ہم پر کمال مِہربانی و رَحْم فرمانے والے تھے ، آج (ہم آپ کے دِیدار سے مَحْرُوم ہوگئے ہیں، لہٰذا)اب ہر رونے والے کو چاہیے کہ آپ کی یاد میں اَشک بہائے ۔ آپ کی عُمْر کی قَسَم! میں اپنے آقا کے جَہانِ فانی سے کوچ کر جانے کے باعِث نہیں روتی بلکہ مجھے تو ان مصائب و آفات پر رونا آتا ہے جو آپ کے بعد ہم پر نازِل ہوں گی ۔ گویا میرا دِل آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی یاد میں تڑپنے اور ان کے بعد درپیش مصائب و آفات کا خوف لاحِق ہونے کی وجہ سے داغ دار ہوتا جا رہا ہے ۔ میری ماں، میری خالہ، میرے چچا ، میرے آباؤ اَجداد بلکہ میری جان اور مال سب کچھ میرے آقا پر قُربان، آپ نے صَبْر و اِسْتِقَامَت کا دامَن ہمیشہ تھامے رکھا اور آخِر کار اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کے پیغام کو راستی کے ساتھ ہر ایک تک پہنچا  کر دین کو اُسْتُوار فرمایا  اور اسے خُوب واضِح کر دیا ۔ اگر تمام لوگوں کا پالنہار ہمارے نبی عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو ہمارے پاس مزید رہنے دیتا تو یہ ہماری خوش قسمتی ہوتی مگر اس کا ہمارے



[1]    سبل الهدى والرشاد،جماع ابواب رضاعهالخ،الباب الثانی فی اخوته من الرضاعة، ۱/۴۶۴

[2]     شرح العلامة الزرقانی،الفصل الثالث فی ذکر ازواجه الطاهرات، عائشةام المومنین، ۴/۳۹۰

[3]     الاعلام للزرکلی، ۱/۲۹۰

[4]     الطبقات  الکبری لابن سعد،ذکر من رثی النبی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ،قالت اروی الخ، ۲/۲۴۸



Total Pages: 15

Go To