Book Name:Bargah e Risalat Main Sahabiyat Kay Nazranay

دُوسری آیتِ مُبارَکہ

مَيدانِ مَحْشَر میں شانِ مُصْطَفَائی کے ڈنکے کا اِعلان کرتے ہوئے اللہ عَزَّ  وَجَلَّ نے اِرشَاد فرمایا:

عَسٰۤى اَنْ یَّبْعَثَكَ رَبُّكَ مَقَامًا مَّحْمُوْدًا(۷۹) ۱۵، بنی اسرآئیل: ۷۹)

ترجمۂ کنز الایمان:قریب ہے کہ تمہیں تمہارا رب ایسی جگہ کھڑا کرے جہاں سب تمہاری حَمد کریں ۔

فقط اتنا سَبَب ہے اِنْعِقَادِ بَزمِ محشر کا

کہ ان کی شانِ محبوبی دکھائی جانے والی ہے [1]

بخدا خُدا کا یہی ہے دَر، نہیں اور کوئی مَفَر مَقَر

جو وہاں سے ہو یہیں آکے ہو، جو یہاں نہیں تو وہاں نہیں[2]

تیسری آیتِ مُبارَکہ

سارے جَہان کیلئے آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا باعِثِ رَحْمَت ہونا اس فرمان سے بخوبی واضِح ہے : وَ مَاۤ اَرْسَلْنٰكَ اِلَّا رَحْمَةً لِّلْعٰلَمِیْنَ(۱۰۷) ۱۷، الانبیآء: ۱۰۷)ترجمۂ کنز الایمان:اور ہم نے تمہیں نہ بھیجا مگر رَحْمَت سارے جہان کے لئے ۔  

رَحْمَت رَسولِ پاک کی ہر شے پہ عام ہے

ہر گل میں ہر شجر میں محمد کا نام ہے

چوتھی آیتِ مُبارَکہ

سَیِّدُ الْـمَحْبُوبِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا ذِکْر نُورِ اِیمان وسُرورِ جان ہے اور آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا ذِکْر  بِعَیْـنِہٖ ذِکْرِ رحمٰن ہے  ۔ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ فرماتا ہے :

وَ رَفَعْنَا لَكَ ذِكْرَكَؕ   (پ۳۰، الم نشرح:۴)

ترجمۂ کنز الایمان:اور ہم نے تمہارے لئے تمہارا ذکْر بُلَند کردیا ۔

اللہ اللہ  آپ کا رتبہ                        صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّم

پڑھتی ہے دنیا رتبے کا خطبہ                   صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّم

حدیث شریف میں ہے کہ اس آیَتِ کریمہ کے نُزول کے بعد سَیِّدُنا جبرائیل امین عَلَیْہِ السَّلَام حاضِرِ بارگاہ ہوئے اور عَرْض کی :آپ کا ربّ فرماتا ہے : کیا تم جانتے ہو کہ میں نے کیسے بُلَند کیا تمہارے لئے تمہارا ذِکْر؟ نبی کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے جواب دیا :اَللهُ اَعْلَم ۔ اِرشَاد ہوا :اے مَحْبُوب میں نے تمہیں اپنی یادوں میں سے ایک یادکیا کہ جس نے تمہارا ذِکْر  کیا بے شک اس نے میرا ذِکْر  کیا  ۔ [3]

سلطانِ جَہاں، محبوبِ خُدا تِری شان و شوکت کیا کہنا

ہر شے پہ لِکھا ہے نام تِرا، تِرے ذِکْر کی رِفْعَت کیا کہنا

صَلُّوا عَلَی الْحَبیب!      صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

عظمتِ سرکار کا اظهار  بزبانِ صحابیات

پیاری پیاری اِسْلَامی بہنو! حُضُورِ اَقْدَس صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو اللہ عَزَّ  وَجَلَّ نے جس طرح کمالِ سِیْرَت میں تمام اَوّلین و آخِرِین سے مُمْتَاز اور اَفضل و اَعلیٰ بنایا اسی طرح آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو جَمالِ صُورَت میں بھی بے مِثل و بے مِثال پیدا فرمایا ۔  ہم اور آپ حُضُورِ اَکرم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی شانِ بے مِثال کو بھَلا کیا سمجھ سکتے ہیں؟ حضراتِ صَحابہ کِرام رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُم جو دِن رات سَفَر و حَضَر میں جَمالِ نُبوّت کی تجلیاں دیکھتے رہے انہوں نے مَحْبُوبِ خدا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے جَمالِ بے مِثال کے فَضْل و کمال کو جس طرح بیان کیا ہے وہ بھی اپنی مِثال آپ ہے ۔  جیسا کہ



[1]     مراۃ المناجیح، حضور کے نام اور حلیہ شریف، ۸/۴۲

[2]     حدائق بخشش، ص۱۰۷

[3]    ماخوذ من فتاویٰ رضویہ ،۲۳/۷۵۲ بحواله کتاب الشفاء، القسم الاول، الباب الاول، الفصل الاول فیما جاء من ذالكالخ، ص۲۱ملخصًا



Total Pages: 15

Go To