Book Name:Sirat ul jinan jild 6

پارہ نمبر…17

سورۂ انبیاء

سورۂ انبیاء کا تعارف

مقامِ نزول:

            سورۂ انبیاء مکہ مکرمہ میں  نازل ہوئی ہے۔( خازن ،  تفسیر سورۃ الانبیاء  ،  ۳ / ۲۷۰)

رکوع اور آیات کی تعداد:

             اس میں  7رکوع  اور 112آیتیں ہیں ۔

’’انبیاء ‘‘نام رکھنے کی وجہ :

             اس سورت میں  بکثرت انبیاء عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کاذکرہے مثلاً حضرت موسیٰ ، حضرت عیسیٰ  ، حضرت ہارون  ،  حضرت لوط ،  حضرت ابراہیم عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَاماور بالخصوص سرکارِ دو عالَم صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا ذکر ہے ،  اسی وجہ سے اس سورت کانام ’’سُوْرَۃُ الْاَنْبِیَاء‘‘ ہے۔

سورۂ اَنبیاء کے مَضامین:

            اس سورت کا مرکزی مضمون یہ ہے کہ اس میں  اسلام کے بنیادی عقائد جیسے توحید ، نبوت و رسالت ، قیامت کے دن دوبارہ زندہ کئے جانے اور اعمال کی جزاء و سزا ملنے کو دلائل کے ساتھ بیان کیا گیا ہے اور ا س سورت میں  یہ چیزیں  بیان کی گئی ہیں :

(1)…اس کی ابتداء میں  قیامت کا وقوع اور لوگوں  کا حساب قریب ہونے اور لوگوں  کے حساب کی سختیوں  اور دیگر چیزوں  سے غافل ہونے کا ذکر کیا گیا اور یہ بیان کیا گیا ہے کہ لوگ قرآن سننے سے اِعراض کرتے ہیں  اور دُنْیَوی زندگی کی لذتوں  سے دھوکہ کھائے بیٹھے ہیں ۔

(2) …مکہ کے مشرکین کی طرف سے نبی کریم صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی نبوت کا انکار کرنے کا سبب بیان کیا گیا کہ وہ آپصَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو بھی اپنی طرح کا عام بشر سمجھتے ہیں  اس لئے وہ لوگ آپ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ پر ایمان نہیں  لاتے  ، نیز ان کے اس نظریے کا رد کیا گیا کہ انبیاءِکرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو کوئی وحی وغیرہ نہ اترتی تھی بلکہ وہ صرف عام بشر تھے جو کھاتے پیتے اور بازاروں  میں  چلتے تھے ، پھر انہیں  بتایاگیا کہ سابقہ امتیں  اپنے اَنبیاء اور رسولوں  عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکو جھٹلانے کی وجہ سے تباہ و برباد کر دیں  گئیں  تو کفارِ مکہ کو بھی ڈرنا چاہئے کہ کہیں  ان کی طرح انہیں  بھی ہلاک نہ کر دیاجائے۔

(3) …کفار ِمکہ نے مطالبہ کیا کہ نبی کریمصَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سابقہ انبیاء عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکی طرح اپنی صداقت پر دلالت کرنے والی کوئی نشانی لائیں  تو  اللہ تعالیٰ نے ان کا رد کیا اور بیان فرمایا کہ ان انبیاء کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے معجزات عارضی تھے اور میرے حبیب صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ قرآن کی صورت میں  جو معجزہ لے کر آئے ہیں  یہ تا قیامت باقی رہنے والا اور آپصَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے وصال کے بعد بھی آپ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی نبوت کی دلیل ہے تو کیا ان کی صداقت کے لئے کفار کو یہ معجزہ کافی نہیں ۔

(4) …کفار فرشتوں  کو  اللہ تعالیٰ کی بیٹیاں  کہتے تھے  ، ان کے ا س عقیدے کا رد کیا گیاکہ فرشتے تو  اللہ تعالیٰ کی فرمانبردار اور عبادت گزار مخلوق ہے۔

(5) … اللہ تعالیٰ نے اپنی وحدانیت اور معبود ہونے پر مختلف دلائل ذکر فرمائے جیسے زمین و آسمان کی پیدائش ، دن اور رات کے سلسلے کو قائم کرنا  اللہ تعالیٰ کی قدرت و وحدانیت کی دلیل ہے  ، اسی طرح وحدانیت پر یہ دلیل قائم فرمائی کہ اگر  اللہ کے ساتھ کوئی دوسرا خدا ہوتا تو کائنات کا نظام درہم برہم ہو جاتا۔

(6) …انہی آیات کے ضمن میں  حضرت موسیٰ ،  حضرت ہارون ،  حضرت ابراہیم ،  حضرت لوط ،  حضرت اسحاق ،  حضرت یعقوب ،  حضرت نوح ،  حضرت داؤد ،  حضرت سلیمان ، حضرت ایوب ،  حضرت اسماعیل ، حضرت ادریس ، حضرت ذوالکفل ،  حضرت یونس ،  حضرت زکریا ،  حضرت یحییٰ اور حضرت عیسیٰ عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے واقعات بیان فرمائے گئے۔

(7) …ان واقعات کو بیان کرنے کے بعد فرمایا گیا کہ سب انبیاءِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکا یہی ایک مقصد تھا کہ وہ مخلوق کو  اللہ تعالیٰ کی عبادت کی دعوت دیں ۔ایمان لانے والوں  اور نیک اعمال کرنے والوں  کو اچھی جزاء کی بشارت سنا

کر مطمئن کریں  اور یہ بیان کردیں  کہ دنیا میں  عذاب یافتہ امتیں  آخرت میں   اللہ تعالیٰ کی طرف ضرور لوٹیں  گی اور جہنم کے عذاب میں  مبتلا ہوں  گی۔

(8) …قیامت قائم ہونے کی ایک علامت بیان کی گئی کہ وہ دیوار ٹوٹ جائے گی جس نے یاجوج اور ماجوج کوروک کر رکھا ہوا ہے۔

(9) …قیامت کے دن کی ہولناکیاں  اور وہ شدید عذاب بیان کیا گیا جس کا سامنا کفار کریں  گے اور یہ ذکر کیا گیا کہ کفار اور ان کے باطل معبود جہنم کا ایندھن بنیں  گے ، اس زمین کو دوسری زمین سے بدل دیا جائے گا ، آسمانوں  کو لپیٹ دیا جائے گا  ،  نیک لوگ ابدی نعمتوں  سے اپنا حصہ پائیں  گے اور جنت میں  اپنی اپنی زمین کے وارث ہوں  گے۔

(10) …اس سورت کے آخر میں  بیان کیا گیا کہ سیّد المرسَلین صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سب جہانوں  کے لئے رحمت بن کر آئے ہیں  اور ان کی طرف یہ وحی کی گئی ہے کہ معبود صرف  اللہ تعالیٰ ہے اورا س کا کوئی شریک نہیں   ، وہ  اللہ تعالیٰ کے احکام بجا لائیں  اور لوگوں  کو قریب آنے والے عذاب اور حتمی طور پر واقع ہونے والی قیامت سے ڈرائیں  اور یہ بتا دیں  کہ انہیں  مہلت ملنا اور عذاب میں  تاخیر ہونا ایک امتحان ہے۔ اللہ تعالیٰ اپنے حبیب صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اور ان کے دشمنوں  کے درمیان فیصلہ فرما دے گا اورکفار کی تہمتوں  اور بہتانوں  کے مقابلے میں اللہ تعالیٰ اپنے حبیب صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکا مددگار ہے۔

 



Total Pages: 239

Go To