Book Name:Islam kay Bunyadi Aqeeday

ترجمۂ کنزالایمان:  تم فرماؤ اے میرے وہ بندو جنہوں نے اپنی جانوں پر زیادتی کی اللّٰہ کی رحمت سے ناامید نہ ہو بیشک اللّٰہ سب گناہ بخش دیتا ہے بیشک وہی بخشنے والا مہربان ہے اور اپنے رب کی طرف رجوع لاؤ اور اسکے حضور گردن رکھو قبل اسکے کہ تم پر عذاب آئے پھر تمہاری مدد نہ ہو اور اسکی پیروی کرو جو اچھی سے اچھی تمہارے رب سے تمہاری طرف اتاری گئی قبل اس کے کہ عذاب تم پر اچانک آجائے اور تمہیں خبر نہ ہو۔

سوال:  کچھ لوگ یہ مانتے ہیں کہ مسلمان حضرت محمدصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکی عبادت کرتے ہیں کیا یہ سچ ہے؟

جواب: مسلمان کسی طرح سے بھی اللّٰہ تعالیٰ کے رسول اور بندے حضرت محمدصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکی عبادت نہیں کرتے،  ہم یہ مانتے ہیں کہ وہ اللّٰہ کے آخری رسول ہیں ،  سارے نبیوں کے امام ہیں اور اللّٰہ نے اُنہیں مبعوث کیا جیسا کہ دوسرے انبیاء کو مبعوث کیا،  بہرحال کچھ لوگ غلطی سے اپنے تئیں یہ فرض کرلیتے ہیں کہ مسلمان حضرت محمد صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی عبادت کرتے ہیں حالانکہ جس طرح عیسیٰ عَلَیْہِ السَّلَام نے کبھی خدائی کا دعویٰ نہیں کیا اُسی طرح محمدصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے بھی کبھی خدائی کا دعویٰ نہیں کیا،  اُنہوں نے لوگوں کو صرف ایک خدا کی عبادت کی طرف بُلایا،  حضرت محمدصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ہمیشہ اپنے بارے میں یہ فرماتے کہ میں اللّٰہ کا بندہ اور اس کا رسول ہوں ۔

          حضرت محمدصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو اللّٰہ تعالیٰ نے آخری نبی کے طور پر چنا اور انہوں نے اللّٰہ تعالیٰ کا کلام ہم تک پہنچایا،  ناصرف الفاظ کی حد تک بلکہ عمل کرکے جیتی جاگتی مثالوں کے ساتھ اللّٰہ تعالیٰ کا پیغام ہمیں پہنچایا اور ہمیں دین سکھایا،  مسلمان ان سے بہت پیار کرتے ہیں اور ان کی بہت عزت و احترام کرتے ہیں کیونکہ ان کا اَخلاق اور کردار بہت مثالی ہے،  انہوں نے اللّٰہ تعالیٰ کا پیغام ہم تک مکمل طور پر پہنچا دیا نیز وہ اللّٰہ تعالیٰ کے چُنے ہوئے اور اس کے محبوب ہیں نیز اللّٰہ تعالیٰ نے ان کی محبت کو ہمارے ایمان کی بنیاد بنادیاہے،  یہ اسلام کی خالص توحید ہے۔

          مسلمان کوشش کرتے ہیں کہ وہ حضرت محمدصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکی کامل اِطاعت کریں لیکن کسی طرح بھی ان کی عبادت نہیں کرتے،  اسلام اس بات کی بھی تعلیم دیتا ہے کہ مسلمان اللّٰہ تعالیٰ کے سارے نبیوں کی عزت کریں اوراُن سے محبت کریں لہٰذا عزت کرنے اور احترام کرنے کا مطلب عبادت کرناہر گز نہیں ہے کیونکہ فقط احترام اور عبادت کے مابین بڑا واضح فرق موجود ہے اورمسلمان اس بات کو بخوبی جانتے ہیں کہ ساری عبادتیں صرف اللّٰہ تعالیٰ کے لیے ہیں ۔

          درحقیقت اسلام میں اللّٰہ تعالیٰ کے سوا کسی کی عبادت کرنا ایسا گناہ ہے کہ جس کی معافی نہیں ہے خواہ وہ حضرت محمدصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمکی عبادت ہو یا کسی اور کی،  اگر کوئی شخص مسلمان ہونے کا دعویٰ کرتا ہو اور اللّٰہ تعالیٰ کے سواکسی اور کو پوجتاہو تو وہ اپنے دعویٰ میں جھوٹا ہے،  جب ہم کلمۂ شہادت پڑھ کر اپنے ایمان کی گواہی دیتے ہیں تو یہ اس بات کا واضح اِعلان ہوتا ہے کہ ہم مسلمان صرف اور صرف اللّٰہ تعالیٰ کی عبادت کرتے ہیں ۔ 

سوال:  کیا اسلام دَقیانوسی  (فرسودہ) دین ہے؟

جواب:   مسلمانوں کو اس بات پر بڑی حیرانگی ہوتی ہے کہ اُن کا دین جس کے اندر عمل اور عقیدے کے اعتبار سے ایک قابل تعریف توازُن پایا جاتا ہے بعض اوقات اس پر دَقیانوسی ہونے کا بہتان لگادیا جاتا ہے شاید یہ غلط فہمی لوگوں کے اندر اس وجہ سے پیدا ہوگئی ہے کہ ہر خوشی و غم کے موقع پر مسلمان اَلْحَمْدُ للّٰہکہتے سنائی دیتے ہیں ،  ایسا اس لیے ہوتا ہے کہ مسلمان یہ جانتے ہیں کہ ’’  ہر شے اللّٰہ تعالیٰ



Total Pages: 55

Go To