Book Name:Rasail e Madani Bahar

۱۳ربیع الغوث۱۴۳۳ ھ بمطابق 07مارچ 2012ء   

بُلند رُتبہ کتاب

       قراٰنِ مجید اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ  کی وہ بلند رتبہ کتاب ہے کہ نہ صرف اس کی تلاوت کرنا کارِثواب ہے بلکہ اس کی زیارت کرنا بھی عبادت ہے چنانچہ حضرت عبداللّٰہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعالٰی عَنْہ نے ارشاد فرمایا :  النَظْرُ فِی الْمُصْحَفِ عِبَادَۃٌ الخ یعنی قراٰن مجید کو دیکھنا عبادت ہے۔ (شُعَبُ الایمان ۔ج۶ ص ۱۸۷ حدیث ۷۸۶۰)

        اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ  یہ بات پسند فرماتا ہے کہ قراٰنِ مجید اُسی طرح پڑھا جائے  جیسا اسے نازل فرمایاگیا، چنانچہ حضرت سیِّدنا زید بن ثابت رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ ارشاد فرماتے ہیں :  ’’اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ  یہ بات پسند فرماتا ہے کہ قراٰنِ مجید کی تلاوت اس طرح کی جائے جیسا اسے نازل فرمایا گیا ہے۔ ‘‘حضرت علامہ عبدالرّء وف مناوی عَلَیہ رَحْمَۃُ اللّٰہِ الْقَوِی اس حدیث کی شرح میں ارشاد فرماتے ہیں ’’قراٰنِ مجید کی تلاوت کرنے والا نہ کوئی حرف زیادہ کرے نہ کم اور نہ اس طرح غلط اور بلاوجہ کھینچ کر ہی  پڑھے کہ جیسا ہمارے زمانے میں قُرّاء پڑھتے ہیں ۔‘‘ (فَیضُ القَدِیر ج ۲، ص ۳۷۷ دارالکتب العلمیۃ بیروت)

       قراٰنِ مجید، فُرقانِ حمید ربُّ الانام  عَزَّوَجَلَّ  کا مبارَک کلام ہے ، اس کا پڑھنا، پڑھانااور سننا سنانا سب ثواب کا کام ہے۔ قراٰنِ پاک کا ایک حرف پڑھنے پر 10 نیکیوں کا ثواب ملتا ہے ، چُنانچِہ خاتَمُ الْمُرْسَلین، شَفِیعُ الْمُذْنِبِیْن، رَحمَۃٌ لِّلْعٰلمین صلَّی اﷲ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّمکا فرمانِ دِلنشین ہے :  ’’جو شخص کتابُ اللّٰہ کا ایک حَرف پڑھے گا، اُس کو ایک نیکی ملے گی جو دس کے برابر ہوگی۔ میں یہ نہیں کہتا   الٓمّٓۚ   ایک حَرف ہے، بلکہ اَلِف ایک حَرف ، لام  ایک حَرف اور میم ایک حَرف ہے۔‘‘(سُنَنُ التِّرْمِذِی ج۴ ص ۴۱۷ حدیث ۲۹۱۹)

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو ! یاد رکھئے! یہ ثواب اسی وقت ملے گا جبکہ درست تلفظ کے ساتھ پڑھا گیا ہو ورنہ بسا اوقات ثواب کے بجائے بندہ عذاب کا مستحق بن جاتا ہے مثلاً اَلحَمْدُ میں اگر کوئی (ح )کو (ہ) پڑھے تو اَلْھَمْدُ کا معنی ’’ہلکااور کمزور ہو جانا‘‘ ہے جبکہ اَلْحَمْدُ  کامعنی ’’تمام تعریفیں ‘‘ہے۔ مذکورہ مثال سے معلوم ہوا کہ قراٰنِ مجیدکی تلاوت میں تلفظ کی غلطی کی وجہ سے کیا سے کیا معنی بن جاتے ہیں اور ایسا کرنے والا قراٰنِ پاک سے اکتسابِ فیض کے بجائے عذاب کا مستحق ہو جاتا ہے۔ قراٰنِ مجید کو تجوید کے ساتھ پڑھنے کے بارے میں شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہاپنے رسالے ’’تلاوت کی فضیلت‘‘ کے صفحہ 19پرتحریر فرماتے ہیں :  ’’میرے آقااعلیٰ حضرت، امامِ اہلسنّت، مولانا شاہ امام احمد رضا خان علیہ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن فرماتے ہیں :  ’’بِلاشُبہ اتنی تجوید جس سے تَصحیحِ (تَصْ۔حِی ۔حِ ) حُروف ہو (قواعدِتجوید کے مطابِق حُرُوف کودُرُست مخارِج سے ادا کر سکے)  اورغَلَط خوانی (یعنی غلط پڑھنے) سے بچے، فرضِ عَین ہے۔‘‘ (فتاویٰ رضویہ مُخَرَّجَہ ج۶ ص ۳۴۳)

        قراٰنِ مجید پڑھنا اور پڑھانا کس قدر باعثِ فضیلت ہے چنانچہ نبیِّ مُکرَّم نُورِمُجسَّم، رسولِ اکرم صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کا فرمانِ معظَّم ہے : خَیْرُکُمْ مَنْ تَعَلَّمَ الْقُراٰنَ و َعَلَّمَہٗ۔ یعنی تم میں بہترین شخص وہ ہے جس نے قراٰن سیکھا اور دوسروں کو سکھایا۔ (صَحِیحُ البُخارِی ج ۳ ص ۴۱۰ حدیث ۵۰۲۷)

        حضرتِ سیِّدُناابو عبد الرحمن سُلَمی رَضِیَ اللّٰہُ تَعالٰی عَنْہ مسجِد میں قراٰنِ پاک پڑھایا کرتے اور فرماتے :  اِسی حدیثِ مبارک نے مجھے یہاں بٹھا رکھا ہے۔ (فَیضُ القَدیر ج۳ ص۶۱۸ تحتَ الحدیث۳۹۸۳)

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! تبلیغِ قراٰن وسنّت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے تحت دنیا کے مختلف ممالِک میں بے شمار مدارِس بنام مَدرَسۃُُ المَدِ ینَہ قائم ہیں ، اَلْحَمْدُ لِلّٰہ  عَزَّوَجَلَّ  تادمِ تحریر (۱۴ رمضان المُبارک ۱۴۳۲ھ/  15اگست 2011ء) صِرف پاکستان میں برائے حِفظ و ناظِرہ مَدَنی منّوں کے تقریباً 766 اور مَدَنی منیوں کیتقریباً 316 مدارسُ المدینہ چلائے جا رہے ہیں جن میں مَدَنی منّوں اور مَدَنی منّیوں کو ملا کر کُل تعداد تقریباً 72000 ہے۔ نیز اسلامی بھائیوں کے مَدْرَسۃُ المدینہ (بالِغان، جن کا وقت عُموماً بعدِ عشاء 40 مِنَٹ ہے)  کی تعداد تقریباً 3316  ہے  اور اسلامی بہنوں کے مَدرَسۃُ المدینہ ( بالِغات، جن کا وقت : صبح  00: 8 تا نمازِعصر مختلف اوقات میں ہے ، ان کا دورانیہ :  1گھنٹہ 12 منٹ ہے ) کی تعداد تقریباً 39938 ہے۔ ان تمام مدارِس میں فی سبیلِ اللّٰہ دُرُست تلفظ کے ساتھ قراٰنِ مجید پڑھایا جاتا، مختلف دعائیں یاد کروائی جاتیں اور سنّتیں بھی سکھائی جاتی ہیں ۔ ملک بھر سے بے شمار اسلامی بھائی وقتاًفوقتاً  ’’مدرسۃ المدینہ (بالغان)‘‘ کی بَرَکت سے اپنے دل میں برپا ہونے والے مَدَنی انقلاب کی مدنی بہاریں تحریری صورت میں بھیجتے رہتے ہیں ۔ دعوتِ اسلامی کی مجلس اَلْمَدِ یْنَۃُ الْعِلْمِیّۃ مدرسۃ المدینہ (بالغان) کی ان مَدَنی بہاروں کی پہلی قسط ’’سنیما گھر کا شیدائی‘‘ کے نام سے پیش کرنے کی سعادت حاصل کر رہی ہے۔

        اللّٰہ تَعَالٰی ہمیں ’’اپنی اور ساری دنیا کے لوگوں کی اصلاح کی کوشش‘‘ کرنے کے لئے مدنی انعامات پر عمل کرنے اور مدنی قافلوں میں سفر کرتے  رہنے کی توفیق عطا فرمائے اور دعوت ِ اسلامی کی تمام مجالس بشمول مجلس اَلْمَدِیْنَۃُ الْعِلْمِیّۃ کو دن پچیسویں رات چھبیسویں ترقی عطا فرمائے۔

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

شعبہ امیرِاَہلسنّت    مجلسِ اَلْمَدِیْنَۃُ الْعِلْمِیّۃ    (دعوتِ اسلامی)

۸ذوالقعدۃ الحرام  ۱۴۳۲ھ، 06  اکتوبر  2011ء   

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

دُرُود ِپاک کی فضیلت

       شیخِ طریقت



Total Pages: 81

Go To