Book Name:Faizan e Farooq e Azam jild 1

اِنْ شَآءَ اللّٰہ عَزَّ وَجَلَّ آپ اپنے دل میں اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے مُقَرَّبِین وصالِحین کی محبت کو دن بدن بڑھتا ہوا محسوس فرمائیں   گے  ، اللہ عَزَّ وَجَلَّ کے فضْل وکَرَم سے اِن نفوس قدسیہ کا فیضان اور اِن کی نظرشفقت شاملِ حال ہو گی۔ ترغیب کیلئے ایک مَدَنی بہارپیش کی جاتی ہے چُنانچہ ،

شرابی آیا اور مؤذن بن گیا:

            مَہاراشٹر(ہند)کے اسلامی بھائی کے بیان کا لب لباب ہے: دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے وابستگی سے قبل میں   مرَضِ عِصیاں  (یعنی گناہوں   کی بیماری)میں   انتِہاء درجے تک مبتلا ہو چکا تھا۔دن بھر مزدوری کرنے کے بعدجو رقم حاصل ہوتی رات کو اُسی سےمَعَاذَ اللّٰہ عَزَّ وَجَلَّ شراب خرید کر خوب عَیّاشی کرتا ، شورشراباکرتا ، گالیاں   بکتا اور والدین واہلِ محلہ کو خوب تنگ کرتا اسکے علاوہ میں   پرلے درجے کا جُواری وبدترین بے نَمازی بھی تھا۔اسی غفلت میں   میری زندگی کے قیمتی ایّام ضائِع(ضا۔اِع)ہوتے رہے ، آخرکار میرے مقدر کا ستارہ چمکا۔ہُوا یوں   کہ خوش قسمتی سے میری ملاقات دعوتِ اسلامی کے ایک ذِمَّے دار اسلامی بھائی سے ہوئی۔انہوں   نے اِنفرادی کوشش کرتے ہوئے مجھے مَدَنی قافلے میں   سنّتوں   بھرے سَفَرکی ترغیب دی ، اُن کے میٹھے بول نے کچھ ایسا رنگ جمایا کہ مجھ سے انکار نہ ہوسکا اور میں   ہاتھوں   ہاتھ تین دن کے مَدَنی قافِلے کامسافِربن گیا۔مَدَنی قافِلے میں   عاشِقانِ رسول کی صُحبت ملی اور دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی اِدارے مکتبۃُ المدینہ کے مطبوعہ رسا ئل بھی سننے کو ملے۔جس کی یہ بَرَکت حاصل ہوئی کہ مجھ جیسا پکّا بے نَمازی ، شرابی وجُواری تائِب ہو کر نہ صِرف نَماز پڑھنے والا بن گیا بلکہ صدائے مدینہ لگانے(یعنی فجر کی نَماز کیلئے مسلمانوں   کو جگانے)اور دوسروں   کو مَدَنی قافِلوں   کا مسافِر بنانے والا بن گیا۔ اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّ وَجَلَّ میری اِنفرادی کوشِش سے(تادمِ بیان)۳۰اسلامی بھائی مَدَنی قافلوں   کے مسافِربن چکے ہیں   اور اِس وَقت میں   ایک مسجِد میں   مُؤَذِّن ہوں   اور مَدَنی کاموں   کی دھومیں   مچانے کی کو شِش کررہاہوں  ۔([1])

چھوڑیں   مے نَوشیاں   مت بکیں   گالیاں 

آئیں   توبہ کریں   قافِلے میں   چلو

اے شرابی تُو آ آ جُواری تُو آ

چُھوٹیں   بد عادتیں   قافِلے میں   چلو

ہوگا   لُطفِ   خدا ،    آؤ   بھائی   دُعا

مل کے سارے کریں   ،  قافِلے میں   چلو

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! دیکھا آپ نے! بے نَمازی ، شرابی ، جُواری ، ماں   باپ کا دل دکھانے اور پڑوسیوں   کو ستانے ، گالی گلوچ کرنے والا نوجوان مبلِّغ دعوتِ اسلامی کی  ’’ انفرادی کوشِش  ‘‘   کے نتیجے میں   مَدَنی قافِلے کا مسافِر بنا ، وہاں   عاشِقانِ رسول کی صحبتوں   میں   سنّتوں   بھرے مَدَنی رسائل سننے اور تائب ہو کرسنّتوں   کے مدنی پھول لُٹانے والا ، صدائے مدینہ لگانے والا ، مسجِد میں   اذانیں   دیکر نَمازوں   کیلئے بلانے والا بنا اورمَدَنی قافلوں   کا مسافِر بن کر دوسروں   کو بنانے والا بن گیا۔آپ بھی گناہوں   سے بچنے اور نیک بننے کے لئے تبلیغ ِ قرآن وسنت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے مدنی ماحول سے وابستہ ہوجائیے۔ اِنْ شَآءَ اللّٰہ عَزَّ وَجَلَّ ! مدنی ماحول کی برکت سے اعلیٰ اخلاقی اوصاف غیرمحسوس طور پر آپ کے کردار کا حصہ بنتے چلے جائیں   گے ۔ اپنے شہر میں   ہونے والے دعوتِ اسلامی کے ہفتہ وارسنّتوں   بھرے اجتماع میں   شرکت اور راہِ خدا میں   سفر کرنے والے عاشقان ِ رسول کے مدنی قافلوں   میں   سفر کیجئے۔ اِن مدنی قافلوں   میں   سفر کی برکت سے اپنے سابقہ طرزِزندگی پر غوروفکر کا موقع ملے گا اور دل حُسنِ عاقبت کے لئے بے چین ہوجائے گا جس کے نتیجے میں   ارتکاب ِ گناہ کی کثرت پر ندامت محسوس ہوگی اور توبہ کی توفیق ملے گی۔ عاشقان ِ رسول کے مدنی قافلوں   میں   مسلسل سفر کرنے کے نتیجے میں   زبان پر فحش کلامی اور فضول گوئی کی جگہ دُرُود ِ پاک جاری ہوجائے گا  ،  یہ تلاوتِ قرآن  ،  حمد ِ الٰہی اور نعتِ رسول کی عادی بن جائے گی  ،  غُصیلہ پن رخصت ہوجائے گا اور اس کی جگہ نرمی لے لے گی  ، بے صبری کی عادت ترک کرکے صابروشاکر رہنا نصیب ہوگا  ، بدگمانی کی عادتِ بد نکل جائے گی اور حسنِ ظن کی عادت بنے گی  ،  تکبر سے جان چھوٹ جائے گی اور اِحترامِ مسلم کا جذبہ ملے گا ، دنیاوی مال ودولت کی لالچ سے پیچھا چھوٹے گا اور نیکیوں   کی حرص ملے گی  ، الغرض بار بار راہِ خدا میں   سفر کرنے سے زندگی میں   مدنی انقلاب برپا ہوجائے گا۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!          صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

تیرہواں باب

کرامتِ فاروقِ اعظم

اس باب میں ملاحظہ کیجئے۔۔۔۔۔

سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ  کی شان میں نازل ہونے  والی دو طرح کی آیات ِ مبارکہ

وہ آیات جو سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی شان میں نازل ہو ئیں ۔

وہ آیات جو سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی موافقت میں  نازل ئیں۔

سیِّدُنا فاروقِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی شان میں نازل ہونے  والی بیس  آیات مبارکہ

 



[1]   نیکی کی دعوت ،  ص۴۷۔



Total Pages: 349

Go To