Book Name:Guldasta e Durood o Salam

(شان حبیب الرحمن، ص ۱۸۴، ۱۸۵ ملخصاً)

وُہی رَبّ ہے جس نے تجھ کو ہمہ تَن کرم بنایا

ہمیں بھیک مانگنے کو تِرا آستاں بتایا (حدائقِ بخشش ، ص۳۶۳)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

جو نہ بُھولا ہم غریبو ں کو رضا

          میٹھے میٹھے اِسلامی بھائیو! حُصُولِ بَرَکت اور ترقی ٔمعرفت اور حُضُور صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی قُربت کے لیے  دُرُود و سلام سے بہتر کوئی ذَریعہ نہیں  ہے ۔ یقینا سرکارِ مدینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ پر دُرُود و سلام بھیجنے کے بے شُمار فَضائل و بَرَکات ہیں جن کو بیان کرنا ممکن نہیں  ۔ دُرُود شریف کے فَضائل میں بے شُمار کُتُب تصنیف کی جاچکی ہیں ، اس کے فضائل وثَمَرَات اکثر مُبَلِّغین بیان کرتے رہتے ہیں ۔ قَلَم کی روشنائی تو خَتْم ہوسکتی ہے ، بیان کے الفاظ بھی خَتْم ہوسکتے ہیں مگر فضائلِ دُرُود و سلام بَرْ خَیْرُ الاَ نَام کا اِحاطہ نہیں ہو سکتا ۔ دن ہو یا رات ہمیں اپنے مُحسن وغمگُسار آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ پر دُرُود و سلام کے پُھول نِچھاور کرتے ہی رہنا چاہیے ۔ اِس میں کوتاہی نہیں کرنی چاہیے کیونکہ سرکار ِمدینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکے ہم پر بے شُمار اِحسانات ہیں ۔ بطنِ سیّدہ آمِنہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہاسے دُنیائے آب و گِل میں جلوہ اَفروز ہوتے ہی آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَنے سجدہ فرمایا اور ہونٹوں پر یہ دُعا جاری تھی :   ’’ رَبِّ ھَبْ لِی اُمَّتِییعنی پروَردگار عَزَّوَجَلَّ!میری اُمَّت میرے حوالے فرما ۔  ‘‘

          امام زرقانی قُدِّسَ سرُّہُ الرَّباّنی نَقْل فرماتے ہیں  : ’’ اُس وَقْت آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اُنگلیوں کو اِس طرح اُٹھا ئے ہوئے تھے جیسے کو ئی گِرْیَہ وزاری کرنے والا اُٹھا تا ہے ۔ ‘‘ (زرقانی علی المواہب، ذکرتزویج عبداللّٰہ آمنۃ، ۱  /  ۲۱۱)

رَبِّ ھَبْ لِی اُمَّتِیکہتے ہوئے پیدا ہوئے

حق نے فرمایا کہ بخشا  اَلصَّلٰوۃُ وَالسَّلام  (قبالہ ٔ بخشش ، ص۹۴)

            رَحمتِ عالَم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَسَفَرِمعراج پر رَوانگی کے وَقْت اُمَّت کے عاصیوں کو یاد فرما کر آبْدِیدہ ہوگئے  ۔ دیدارِ جمالِ خداوندی عَزَّوَجَلَّاور خُصُوصی نوازشات کے وَقْت بھی گُنہگارانِ اُمَّت کو یاد فرمایا ۔  عُمر بھر گنہگارانِ اُمَّت کے لیے غمگین رہے ۔

            مَدارِجُ النُّبُوَّۃ میں ہے  :  حضرتِ سیِّدُنا قُثَم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ وہ شخص تھے جو آپصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو قَبْرِ اَنور میں اُتارنے کے بعد سب سے آخِر میں باہَر آئے تھے ۔ چُنانچِہ اُن کا بیان ہے کہ میں ہی آخِری شخص ہوں جس نے حُضُورِ اَنْوَرصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا رُوئے مُنوَّر ، قَبْر اَطہر میں دیکھا تھا ۔ میں نے دیکھا کہ سلطانِ مدینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ قَبْر اَنور میں  اپنے لَبْہَائے مبارَکہ کو جُنبِش فرما رہے تھے ۔ (یعنی مبارَک ہونٹ ہل رہے تھے ) میں نے اپنے کانوں کو اللّٰہ عَزَّوَجَلَّکے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکے دَہَن (یعنی منہ)مبارَک کے قریب کیا ، میں نے سنا کہ آپصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کہہ رہے تھے  :  ’’ رَبِّ اُمَّتِی اُمَّتِیْ ۔ ‘‘ (یعنی اے میرے پروَردْگار! میری اُمّت میری اُمّت) ۔    (مدارج النبوۃ، ۲ / ۲۴۴)

            فرمانِ مصطَفٰیصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  : ’’ جب میری وفات ہو جائے گی تو اپنی قَبْرمیں ہمیشہ پکارتا رہوں گا ، یا رَبِّ اُمَّتِی اُمَّتِی یعنی اے پروَردگار! میری اُمَّت میری اُمَّت ، یہاں تک کہ دوسرا صُور پھونکا جائے  ۔ ‘‘(کنز العمال ، کتاب القیامۃ، ۷ / ۱۷۸، حدیث : ۳۹۱۰۸ )

جو نہ بھُولا ہم غریبوں کو رضا

ذِکْر اُس کا اپنی عادت کیجئے   (حدائقِ بخشش، ص۱۹۸)

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! جب ہمارے پیارے آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَہم سے اس قدر مَحَبَّت فرماتے ہیں تو ہماری عَقیدت بلکہ مُرَوَّت کا بھی یہی تقاضا ہوناچاہئے کہ غمخوارِ اُمَّتصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی یاد اور دُرُود وسلام سے کبھیغَفْلَت نہ برتی جائے ۔

          حضرتِ سیِّدُناحافظ رشید عطَّارعَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللّٰہ الْغَفَّار اَشعار کی صورَت میں فرماتے ہیں  :  

اَلاَ اَیُّہَا الرَّاجِی الْمَثُوْبَۃَ وَالْاَجْرَ                                                                                                               وَتَکْفِیْرَ ذَنْبٍ سَالِفٍ اَنْقَضَ الظَّہْرَا

عَلَیْکَ بِاِکْثَارِ الصَّلَاۃِ مُوَاظِباً                                                                                                              عَلٰی اَحْمَدَالْہَادِیْ شَفِیْعِ الْوَرٰی طُرًّا

’’یعنی اے اَجْر وثواب اور اُس گُزَشْتَہ گناہ کی تلافی کی اُمید رکھنے والے جس نے (تیری) کمر توڑدی ہے ، سن لے ! تجھ پر لازم ہے کہ اُس ذاتِ گرامی پرہمیشہ کثرت سے دُرُود بھیج جن کا نام اَحمد ہے ، اِنسانِیَّت کے ہادی اور تمام مخلوق کے شفیع ہیں ۔ ‘‘(القول البدیع ، خاتمۃ الباب الثانی ، الفصل الاول، ص۲۸۴)

ٹوٹ جائیں گے گُنہگاروں کے فوراً قید و بند                 حَشْر کو کھل جائے گی طاقت رسولُ اللّٰہ کی (حدائقِ بخشش، ص۱۵۳)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                                صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

          اے ہمارے پیارے اللّٰہ عَزَّوَجَلَّّ! ہمیں اپنے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی مَحَبَّت میں ڈوب کر آپ کی ذاتِ طیبہ پر کثرت سے دُرُودِ پاک پڑھنے کی توفیق عطا فرما اور روزِ قیامت آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی شَفاعت سے بہرہ مند فرما ۔ اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

بیان نمبر : 33

ہونٹوں پر مُتَعَیَّن فِرِشتے

 



Total Pages: 141

Go To