$header_html

Book Name:Islam Ki Bunyadi Batain Part 03

ترجمہ: اے اللہ عَزَّ وَجَلَّ !  مجھے حلال رزق عطافرما کرحرام سے بچا اور اپنے فضل وکرم سے اپنے سواغیروں سے بے نیاز کر دے۔)[1](

مصیبت زدہ کو دیکھتے وقت کی دعا

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِیْ عَافَانِیْ مِمَّا ابْتَلَاكَ بِہٖ وَفَضَّلَنِیْ عَلٰی كَثِیْرٍ مِّمَنْ خَلَقَ تَفْضِیْلًا )[2](

ترجمہ:  اللہ عَزَّ وَجَلَّ کا شکر ہے جس نے مجھے اس مصیبت سے عافیت دی جس میں تجھے مبتلا کیا اور مجھے اپنی بہت سی مخلوق پر فضیلت دی۔)[3](

ستاروں کو دیکھتے وقت کی دعا

رَبَّنَا مَاخَلَقْتَ ھٰذَا بَاطِلًا سُبْحٰنَكَ فَقِنَا عَذَابَ النَّارِ       ؕ

ترجمہ: اے ہمارے ربّ!  تونے اس کو بے کار نہ بنایا۔ پاکی تیرے لیے، پس ہمیں دوزخ کی آگ سے بچالے۔

 

بدہضمی کی دعا

كُلُوْا وَ اشْرَبُوْا هَنِیْٓــٴًـۢا بِمَا كُنْتُمْ تَعْمَلُوْنَ(۴۳)اِنَّا كَذٰلِكَ نَجْزِی الْمُحْسِنِیْنَ(۴۴)(پ۲۹،المرسلت: ۴۳، ۴۴))[4](

ترجمۂ کنز الایمان:  کھاؤ اور پیو رچتا ہوا اور اپنے اعمال کا صلہ بے شک نیکوں کو ہم ایسا ہی بدلہ دیتے ہیں ۔

بخار سے شفا کی دعا

بِسْمِ اللّٰہِ الْكَبِیْرِ اَعُوْذُ بِاللّٰہِ الْعَظِیْمِ مِنْ شَرِّ كُلِّ عِرْقٍ نَّعَّارٍ وَّمِنْ شَرِّ حَرِّ النَّارِؕ )[5](

ترجمہ:  اللہ کے نام سے جو بڑا ہے اور میں پناہ چاہتاہوں اللہ بزرگ وبرتر کی ہر جوش مارنے والی رگ اور آگ کی گرمی کے نقصان سے۔

ہرموذی مرض سے پناہ کی دعا

اَللّٰہُمَّ اِنِّیْۤ اَعُوْذُبِكَ مِنَ الْبَرْصِ وَالْجُزَامِ وَالْجُنُوْنِ وَمِنْ سَیِّئِ الْاَسْقَامِؕ      )[6](

ترجمہ:  یاالٰہی!  میں تجھ سے برص، جزام، جنون اور دوسری بیماریوں سے پناہ چاہتا ہوں ۔

مجلس کے اختتام کی دعا

سُبْحَانَكَ اللّٰہُمَّ وَبِحَمْدِكَ اَشْھَدُ اَن لَّاۤ اِلٰہَ اِلَّاۤ اَنْتَ اَسْتَغْفِرُكَ وَاَتُوْبُ اِلَیْكَ)[7](

ترجمہ: تیری ذات پاک ہے اور اے اللہ ! تیرے ہی لیے تمام خوبیاں ہیں ، تیرے سوا کوئی معبود نہیں ، میں تجھ سے بخشش چاہتاہوں اور تیری طرف توبہ کرتاہوں ۔

٭…٭…٭

سورہ بقَرہ کے فضائل

 



[1]     یہ دُعا تیر بہدف نسخہ ہے اگر ہر مسلمان ہمیشہ ہی یہ دُعا ہر نماز کے بعد ضرور ایک بار پڑھ لیا کرے اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  قرض و ظلم سے محفوظ رہے گا۔ (مراٰۃ المناجیح،   ۴ / ۵۱)

[2]     ترمذی،   كتاب الدعوات ، باب مایقول اذا رای مبتلی،   ۵ / ۲۷۲،   حدیث: ۳۴۴۲

[3]     شیخِ طریقت،   امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ مدنی پنج سورہ ص 209پر فرماتے ہیں: جوشخص کسی بلا رسیدہ کو دیکھ کر یہ دُعا پڑھ لے گا اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  اس بلا سے محفوظ رہے گاَ۔ ہرطرح کے امراض وبلا میں مبتلا کو دیکھ کر یہ دُعا پڑھ سکتے ہیں،   لیکن تین قسم کی بیماریوں میں مبتلا شخص کو دیکھ کر یہ دُعا نہ پڑھی جائے کیونکہ منقول ہے کہ تین بیماریوں کو مکروہ نہ رکھو: (۱) زکام کہ اس کی وجہ سے بہت سی بیماریوں کی جڑ کٹ جاتی ہے (۲) کھجلی کہ اس سے امراضِ جلدیہ اور جذام وغیرہ کا اِنسداد ہو جاتا ہے (۳) آشوبِ چشم نابینائی کو دفع کرتا ہے۔ (اس دُعا کو پڑھتے وقت اس بات کا خیال رکھیں کہ مصیبت زدہ تک آواز نہ پہنچے کیونکہ اس سے اس کی دل شکنی ہوسکتی ہے)

[4]     فیضانِ سنت ، آداب طعام،   ۱ / ۶۰۹

[5]     حضرت سیدنا ابن عباس رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا سے مروی ہے کہ یہ دعا ہر قسم کے درد اور بخار وغیرہ کی صورت میں سرکارِ دو عالم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم صحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان کو سکھاتے تھے۔ (المعجم الكبير،   ۱۱ / ۱۷۹،   حديث: ۱۱۵۶۳) چنانچہ شیخِ طریقت،   امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ مدنی پنج سورہ ص 234پر فرماتے ہیں: جس کو بخار ہو سات بار یہ دعا پڑھے،   اگر مریض خود نہ پڑھ سکے تو کوئی دوسرا نمازی آدمی سات بار پڑھ کر دم کر دے یا پانی پر دم کر کے پلا دے،   اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  بخار اتر جائے گا۔ ایک مرتبہ میں بخار نہ اترے تو بار بار یہ عمل کریں۔

[6]     ابو داود،   كتاب الوتر،   باب فی الاستعاذة ، ۲ / ۱۳۲،   حدیث: ۱۵۵۴

[7]     ابو داود،   كتاب الادب،   باب فی كفارة المجلس،  ۴ / ۳۴۸،   حدیث: ۴۸۵۹



Total Pages: 146

Go To
$footer_html