Book Name:Faizan e Syed Ahmed Kabir Rafae

جو لوگوں کو فائدہ پہنچائے۔([1]) کی عملی تصویر ہواکرتے تھے،لہٰذا ہمیں بھی اپنے مسلمان بھائیوں کے ساتھ خیرخواہی ودِلجوئی سے پیش آنا چاہئے ۔

شیخِ طریقت ،امیرِ اہلسنَّت بانیِ دعوتِ اسلامی حضرت علامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطار قادری دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ خیر خواہی اور دِلجَوئی کے متعلق ارشاد فرماتے ہیں:مسلمانوں کی دِلجوئی کی اَہمِّیَّت بَہُت زیادہ ہے۔چُنانچِہ حدیثِ پا ک میں ہے: فرائض کے بعد سب اعمال میں اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کو زِیادہ پیارا مسلمان کا دل خوش کرنا ہے۔([2])واقِعی اگرا س گئے گزرے دَور میں ہم سب ایک دوسرے کی غمخواری وغمگُساری میں لگ جائیں تو آناً فاناً دُنیا کا نقشہ ہی بدل کررَہ جائے۔لیکن آہ!اب تو بھائی بھائی کے ساتھ ٹکرا رہا ہے،آج مسلمان کی عزّت وآبرو اور اُس کے جان ومال مسلمان ہی کے ہاتھوں پامال ہوتے نظر آرہے ہیں۔ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ ہمیں نفرتیں مٹانے اور مَحَبَّتیں بڑھانے کی توفیق عطا فرمائے۔([3])

صَلُّوا عَلَی الْحَبیب!                                              صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

مجھے میرا عیب بتاؤ

اىک دن حضرت سیِّد احمد کبیر رفاعی عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ ِالْقَوِی نے بطورِ عاجزی اپنے

 



[1]جامع صغیر،ص۲۴۶،حدیث:۴۰۴۴

[2]معجم کبیر،۱۱/۵۹،حدیث :۱۱۰۷۹

[3] فیضان سنت ، ۱/۱۲۴۴ ،مکتبۃالمدینہ



Total Pages: 34

Go To