We have moved all non-book items like Speeches, Madani Pearls, Pamphlets, Catalogs etc. in "Pamphlet Library"

Book Name:Fatawa Razawiyya jild 17

سے کرنے کے یہ معنی نہیں کہ عمرو ضامن ہوا اور زیادت وثوق کو اپنی جائداد پیش کی جس کاحکم وہ تھا کہ ضمانت جب زید کی درخواست پر ہے بلاشبہ صحیح ہوگئی کہ ذکر جائداد نہ ہونا فضولی ہے بلکہ یہ معنی ہے کہ آپ ضمانت نہ کی جو اپنا ذمہ مشغول نہ کیا خود نفس جائداد کو کفیل بنایا یہ قطعاباطل محض ہے جیسا کہ جوابات سابقہ میں روشن کردیا گیا مدعی نے کفالت بالمال کو پوچھا اس کا جواب قطعا یہی تھا کہ صحیح ہے،اب ملاحظہ کاغذات سے ظاہر ہواکہ اس کی غلط بیانی ہے یہاں صورت واقعہ کفالت بالمال نہ تھی جسے شرع میں کفالت بالمال کہتے ہیں اور اس سے جو معنی خادمان شرع سمجھتے ہیں کہ مامکفول بہ ہو یعنی وہ چیز جس کا مطالبہ کفیل نےاپنے ذمہ لیا بلکہ یہاں کفالت المال باضافت الی الفاعلی تھی یعنی خود مال وجائداد کسی مطالبہ کی کفیل ہو یہ قطعا باطل ہے او ر وہ قطعا صحیح،لاجرم فتوٰی کہ مدعی نے غلط بیانیوں سے حاصل کیا ہر گز متعلق مقدمہ نہیں،متعلق مقدمہ وہی فتاوٰی سابقہ مدخلہ مدعا علیہ ہیں اور عذر مدعی باطل محض اور عذر مدعاعلیہ صحیح وواجب القبول۔واﷲ تعالٰی اعلم۔

_____________________


 

 



Total Pages: 715

Go To