Book Name:Fatawa Razawiyya jild 14

واحد اخیرلك من ان یکون لك حمر النعم [1]۔رواہ البخاری ومسلم عن سہل بن سعدی رضی اﷲ تعالٰی عنہ جعل اﷲ لنا السہل والسعدی فی القبل والبعد وصلی اﷲ تعالٰی علی سیدنا واٰلہ وصحبہ وابنہ وحزبہ وبارك وسلم۔

ایك شخص کو ہدایت فرمادے تیرے لئے سرخ اونٹوں کا مالك ہونے سے بہتر ہے،یہ حدیث بخاری ومسلم نے سہل بن سعد رضی اﷲ تعالٰی عنہ سے روایت کی(اﷲ تعالٰی انھیں ہمارے اگلے پچھلوں کے لئے سہل اور مبارك بنائے وصلی اﷲ تعالٰی علی سیدنا وآلہ وصحبہ وابنہ وحزبہ وبارك وسلم۔ت)

سنانی جہاد کےاحکام و اقسام کا ذکر

تنبیہ: جہاد کہ اعظم وجوہ ازالہ منکر ہے اسی کی تین قسمیں ہیں :

(۱)جنانی                   (۲)لسانی                  (۳)

جہاد جنانی: یعنی کفر وبدعت وفسق کو دل سے براجاننا جو ہر کافر مبتدع وفاسق سے ہے اور ہر مسلمان کہ اسلام پر قائم ہو یہ کرتاہے مگر جنھوں نے اسلام کو سلام اور اپنے آپ کو مشرکین وکفار کا غلام کیا ان کی راہ جدا ہے ان کا دین غیر دین خداہے۔

لسانی: کہ زبان وقلم سے رد،وہ ابھی سن چکے کہ ایسوں ہی پر سب سے اہم وآکد،یہ بحمداﷲ تعالٰی خادمان شرع ہمیشہ سے کررہے ہیں اور اﷲ ورسول کی مدد شامل ہو تو دم آخر تك کریں گے،۱وہابیہ،۲نیاچرہ،۳دیوبندیہ،۴قادیانیہ، ۵روافض، ۶غیر مقلدین،۷ندویہ،۸ آریہ ۸نصارٰی وغیرہم سے کیا اوراب ان گاندھویہ سے بھی وہی برسرپیکار ہیں حق کی طرف بلاتے اور باطل کوباطل کردکھاتے اور مسلمانوں کو گمراہ گروں کے شر سے بچاتے ہیں وﷲ الحمد آگے ہدایت رب عزوجل کے ہاتھ ہے۔

رہا جہاد سنانی: ہم اوپر بیان کرچکے ہیں کہ یہ نصوص قرآن عظیم ہم مسلمانان ہند کو جہاد برپا کرنے کاحکم نہیں اور اس کا واجب بتانے والا مسلمان کا بدخواہ مبین۔

یہاں کے مسلمانوں کو جہاد کا حکم نہیں اور واقعہ کربلا سے لیڈران کا استناد اغوائے مسلمین:

بہکانے والے یہاں واقعہ کربلا پیش کرتے ہیں یہ ان کا محض اغواہے۔اولا اس لڑائی میں ہر گز حضرت


 

 



[1] صحیح البخاری کتاب الجہاد قدیمی کتب خانہ کراچی ۱/ ۴۱۳۔۴۲۲،صحیح مسلم با ب من فضائل علی ابن ابی طالب قدیمی کتب خانہ کراچی ۲/ ۲۷۹



Total Pages: 712

Go To