Book Name:Fatawa Razawiyya jild 14

 

 

 

المحجۃ المؤتمنۃ فی اٰیۃ المُمتحنۃ ۱۳۳۹ھ

(سورۂ ممتحنہ کی آیت کریمہ کے بارے میں درمیانی راستہ)

 

مسئلہ ۱۸۲: از مرسلہ مولوی حاکم علی صاحب بی اے حنفی نقشبندی مجددی پروفیسر سائنس اسلامیہ کالج لاہور ۱۴ صفر ۱۳۳۹ھ

اﷲ تعالٰی نے ہمیں کافروں اوریہودونصارٰی کے تولی سے منع فرمایا ہے مگر ابوالکلام زبردستی تولٰی کے معنی"معاملت"اور ترك موالات کو"ترك معاملت"(نان کوآپریشن)قرار دیتے ہیں اوریہ صریح زبردستی ہے جو اﷲ تعالٰی کے کلام پاك کے ساتھ کی جارہی ہے،مذکور نے ۲۰ اکتوبر ۱۹۲۰ء کی جنر ل کونسل کی کمیٹی میں تشریف لاکر اطلاق یہ کردیاکہ جب تك اسلامیہ کالج لاہورکی امداد بندنہ کی جائے اور یونیورسٹی سے اس کا قطع الحاق نہ کیا جائے تب تك انگرویزوں سے ترك موالات نہیں ہوسکتی اور اسلامیہ کالج کے لڑکوں کو فتوٰی دے دیا کہ اگر ایسا نہ ہو تو کالج چھوڑدو،لہذا اس طرح سے کالج میں بے چینی پھیلادی کہ پھر پڑھائی کا سخت نقصان ہونا شروع ہوگیا۔علامہ مذکور کا یہ فتوٰی غلط ہے یونیورسٹی

نقل خط مولوی صاحب: آقائے نامدار مؤید ملت طاہرہ مولٰینا وبالفضل اولٰینا جناب شاہ احمد رضاخاں صاحب دام ظلہم السلام علیکم ورحمۃ اﷲ وبرکاتہ،پشت ہذا(باقی برصفحہ آئندہ)


 

 



Total Pages: 712

Go To