Book Name:Fatawa Razawiyya jild 13

 

 

 

 

باب زوجۃ المفقود
(مفقود الخبر کی زوجہ کا حکم)

مسئلہ١٠٦:زوجہ عــــہ مفقود کے لئے چار برس کی مہلت کہ حضرت امام مالك رضی اﷲ تعالٰی عنہ کا مذہب ہے، جمہور ائمہ کرام اس کے خلاف پر ہیں،ادھر قرآن عظیم صاف صاف ارشاد فرمارہا ہے: وَّالْمُحْصَنٰتُ مِنَ النِّسَآءِ [1]تم پر حرام ہیں وہ عورتیں جو دوسرے کے نکاح میں ہیں۔اس عورت کا نکاح مفقود میں ہونا تو یقینا معلوم،اور چار برس کے بعد اس کی موت مشکوك و موہوم،کیا آدمی اتنی مدت میں خواہ مخواہ مرہی جاتا ہے یا اس کی مرگ پر ظن غلبہ کرتا ہے یہاں تك کہ خود علمائے مالکیہ رحمہم اﷲ تعالٰی اقرار فرماتے ہیں کہ اس چار سال کی تقدیر پر سواء تقلید امیر المومنین فاروق اعظم رضی اﷲ تعالٰی عنہ کے ہمارے پاس کوئی دلیل نہیں،نہ ہرگز نظر فقہی اس کے مساعد،

کما نقل العلامۃ الزرقانی فی شرح المؤطا عن الکافی انھا مسئلۃ قلد نافیھا

جیسا کہ علامہ زرقانی نے شرح المؤطا میں کافی سے نقل کیا کہ یہ وہ مسئلہ ہے جس میں ہم نے حضرت عمر فاروق رضی اﷲ عنہ

 

عــــہ:یہ مضمون مسئلہ ازاجین تک،مولوی ضیاء المصطفٰی صاحب نے کسی رسالہ سے نقل کرکے دیا اور مولانا عبدالرؤف صاحب مرحوم نے شامل کیا١٢


 

 



[1] القرآن الکریم ٤/٢٤



Total Pages: 688

Go To