Book Name:Fatawa Razawiyya jild 9

 

 

 

 

 

رسالہ

حیاۃ الموات فی بیان سماع الاموات ١٣٠٥ھ

(بے جان کی زندگی، مُردوں کی سماعت کے بیان میں)

 

بسم اﷲ الرحمن الرحیم

الحمد ﷲ الذی خلق الانسان* علمہ البیان* واعطاہ سمعا وبصرا وعلمافزان* وجعلہ مظھر الصفات الرحمن* ولم یجعلہ معدوما بفناء الابدان* والصلٰوۃ والسلام الاتمان الاکملان* علی السمیع البصیر العلیم الخبیر الملك المستعان* المولی الکریم الرؤف الرحیم العظیم الشان* سیدنا ومولٰنا محمد النافذ حکمہ فیك عوالم الامکان* وعلٰی اٰلہ وصحبہ وابنہ الغوث الباھر السلطان* الحیّ المنعم فی القبر  المکرم

تمام تعریفیں اﷲ کے لیے جس نے انسان کو پیدا کیا۔ اسے بیان سکھایا۔ اسے سماعت، بصارت اور علم دے کر سنوارا۔ اسے رحمان کی صفات کا مظہر بنایا۔ اور بدنوں کے فناہونے سے اس کو معدوم نہ فرمایا، اورزیادہ تام وکامل تر درود وسلام ہو ان پر جو سننے، دیکھنے، جاننے، خبردینے والے سُلطان ہیں جن سے مدد مانگی جاتی ہے۔ جو کریم آقا، بڑے مہربان، رحم کرنے والے، بڑی شان والے ہیں، ہمارے سردار اور ہمارے آقا حضرت محمد جن کا حکم امکان کے جہانوں میں نافذ ہے اور ان کی آل واصحاب اور ان کے

 


 

 



Total Pages: 948

Go To