Book Name:Fatawa Razawiyya jild 9

 

 

 

اَلْمنَّۃُ الْمُمْتَازَۃ فِیْ دَعْوَاتِ الْجَنَازَۃ  ۱۳۱۸ ھ
(نماز ِ جنازہ سے متعلق حدیث میں وارد شدہ دُعاؤں کا بیان اور تلقینِ میّت کا طریقہ)

 

مسئلہ نمبر۶۲:         مسئولہ حافظ حاجی قاری زائر سیّد محمد عبدالکریم صاحب                                 ٢٥جمادی الاُخرٰی ١٣١٨ھ

کیا فرماتے ہیں علمائے دین کہ نمازِ جنازہ کی کےَ دعائیں ہیں؟

الجواب:

مولٰنا الحافظ القاری الحاج الزائر السید الصالح القادری البرکاتی ادام اﷲ تعالٰی کرامتکم فی الحاضرۃ والاٰتی، السلام علیکم ورحمۃ اﷲ وبرکاتہ،، وہ تیرہ۱۳ د عائیں ہیں کہ نماز جنازہ کی احادیث میں وارد ہوئیں۔ فقیر نے انہیں جمع کرکے ایك اور کا اضافہ کیا انہیں میں گزارش کرتا ہوں کہ حفظ فرمالیں اور بالحاظ معنی جنائز اہلسنّت پر پڑھا کریں، جن کلمات کو دو خط ہلالی میں لے کر اُن پرخط کھینچ کر بالائے سطر دوسرے الفاظ لکھے جاتے ہیں وہ لفظ عورت کے جنازے میں اُن کلمات کی جگہ پڑھے جائیں ۔ فقیر آپ کو وصیّت کرتا ہے کہ میرا جنازہ پائیں تو نماز خود ہی پڑھائیں اور یہ سب دُعائیں اپنے خالص قادری قلب کے خضوع وخشوع سے پڑھیں اورقبرِ فقیر محتاج پر تلقین بھی کریں وحسبنااﷲ ونعم الوکیل ولاحول ولاقوۃ الّا باﷲ العلی العظیم۔

ادعیہ بعد تکبیر سوم

 (١) اَللّٰھُمَّ اغْفِرْلِحَیِّنَا وَمَیِّتِنَا وَشَاھِدِنَا وَغَائِبِنَا وَصَغِیْرِنَا وَکَبِیْرِنَا وَذَکَرِنَا وَ


 

 



Total Pages: 948

Go To