Book Name:Fatawa Razawiyya jild 8

 

 

 

بسم اﷲ الرحمٰن الرحیم

؎

    اَلْحَمْدُ لِلْمُتَوَحِدٖ                                                                          بِجَلَالِہٖ الْمُتَفِرّدٖ
   وَصَلٰوتہ، دَوْمًا عَلٰی                                             خِیْرِالْاَنَامِ مُحَمَّدٖ
   وَالْاٰلِ وَالْاَصْحَابِ ھُمْ                                   مَأوَایَ عِنْدَشَدَائِدِیْ
    فَاِلَی الْعَظِیْمِ تَوَسُّلِیْ                                         بِکِتَابِہٖ وَبِاحْمَدٖ
                                                                                (امام احمدرضا)

ارشاد ربّانی ہے: وَ اَمَّا بِنِعْمَۃِ رَبِّکَ فَحَدِّثْ ﴿٪۱۱ یعنی اپنے رب کی نعمتوں کوبیان کیجئے۔

اعلٰیحضرت امام احمدرضاخاں رحمہ اﷲ تعالٰی اسی فرمان خداوندی پرعمل کرتے ہوئے یوں زمزمہ سراہوتے ہیں:  ؎

ملك سخن کی شاہی تم کو رضا مسلم
جس سمت آگئے ہو سکے بٹھادئیے ہیں

  اگرچہ سیاق وسباق کے اعتبارسے یہاں"سخن"سے مراد منظوم کلام ہے، لیکن درحقیقت امام احمد رضا کی شاہی ہرنوع سخن میں مسلم ہے______خواہ نظم ہو یانثر۔
مزیدکمال کی بات یہ ہے کہ کلام وبیان پر آپ کی قدرت کسی ایك زبان سے مختص نہیں ہے، بلکہ عربی، فارسی، اردو اور ہندی میں سے جس زبان کو ذریعہ اظہاربنانا چاہیں، اس کے تمام الفاظ آپ کے بے پایاں حافظے میں مستحضر ہو جاتے ہیں اور ان میں سے آپ جس کو موقع ومحل کے لحاظ سے موزوں سمجھتے ہیں، اس کو اتنی خوبصورتی اور تناسب سے استعمال میں لاتے ہیں کہ خوش گفتاری کاحق اداکردیتے ہیں اور نثر میں بھی نظم کاسماں باندھ دیتے ہیں۔


 

 



Total Pages: 673

Go To