Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

۲۔     قرآن کریم کے لئے تواتر شرط ہے حدیث قدسی کیلئے نہیں۔

۳۔      قرآن کریم  کلام معجز ہے کہ کوئی مخلوق   اسکی نظیر پیش نہیں کر سکتا ۔

۴۔    قرآن کریم کا منکر کافر ہے، حدیث قدسی کا نہیں  جب تک  تواتر سے  ثابت نہ ہو۔

مثال:۔ ان اللہ تعالیٰ یقول :ان الصوم لی و انا اجزی بہ ۔ (۵)

        بیشک اللہ تعالیٰ کا فرمان ہے: بیشک روزہ میرے لئے ہے ، اور میں اس کی  جزا دوں گا۔

مرفوع:۔ وہ حدیث ہے جو حضور  سید عالم صل اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی  طرف منسوب ہو،خواہ 

قول  ہو یا فعل ، تقریر ہو یا حال۔

       کسی حدیث کا رفع ثابت کر  نے کیلئے سند  مذکور ہو  یا غیر مذکور، ناقص ہو یا کامل، صحابی ہوں یا تابعی،  وغیرہ کوئی بھی  بیان کریں  بہر حال وہ حدیث مرفوع ہی رہے گی۔

        یہ اور مسند ہم معنی  ہیں، لہذا ان دونوں کا اطلاق متصل ، منقطع اور مرسل وغیرہا سب پر ہوتا ہے، بعض حضرات کا کہنا کہ مسند کا اطلاق صرف متصل پر ہی ہوتا ہے،  ہاں جن محدثین  نے مرفوع کو مرسل  کامقابل  قرار دیا ہے وہ مرفوع متصل  ہی   مراد  لیتے ہیں ۔(۶)

       مرفوع کی اصولی طور پر  دو قسمیں ہے:۔

       Xحقیقی              X حکمی

مرفوع حقیقی:۔ وہ حدیث جو صراحۃ حضور اقدس صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کی طرف منسوب ہو۔

                     اسکی چار قسمیں ہیں:۔

       Xقولی        X فعلی                X تقریری            Xوصفی

 قولی:۔ وہ حدیث  جو  بذریعہ قول  بیان کی جائے،  یونہی وہ حدیث جو قول کے بجائے ان الفاظ 

سے بیان کی جائے جو اسکا مفہوم ادا کریں۔

       جیسے:۔ امر،  نھی،  قضی،  حکم،  وغیرہا۔

 فعلی:۔ فعل  یا عمل  کے ذریعہ بیان کر دہ وہ  حدیث، یونہی ان الفاظ سے  جو مختلف افعال و اعمال

 



Total Pages: 604

Go To