Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

حیثیت سے یگانۂ روزگار اور اپنی مثال آپ ہیں ۔

        عمدۃ المحدثین  حافظ بخاری حضرت علامہ  شاہ  وصی احمد محدث سورتی  علیہ الرحمۃ والرضوان  سے حضور محدث اعظم کچھوچھوی نے  معلوم کیا کہ حدیث میں امام احمد رضا کا کیا مرتبہ  ہے ؟فر مایا:۔

       وہ اس وقت امیر المو منین فی الحدیث ہیں ،  پھر فرمایا: صاحبزادے ! اسکا مطلب سمجھا؟ یعنی اگر اس فن میں عمر بھر ان کا تلمذ کروں تو بھی  انکے پاسنگ کو نہ  پہونچوں، آپ نے  کہا: سچ  ہے۔ 

       ولی راولی  می شناسد و عالم را عالم می داند۔

       خود محدث اعظم کچھوچھوی  فر ما تے ہیں: ۔

       علم الحدیث کا اندازہ اس سے کیجئے کہ  جتنی   حدیثیں فقہ  حنفی کی ماخذ ہیں ہر وقت پیش نظر، اور جن حدیثوں سے فقہ حنفی  پر بظاہر زد پڑتی ہے ، اسکی روایت ود  رایت کی خامیاں ہر وقت ازبر۔ علم حدیث میں  سب سے  نازک شعبہ علم اسماء الرجال کا ہے۔ اعلی حضرت  کے سامنے کوئی  سند پڑھی جاتی اور راویوں کے بارے میں دریافت کیا جاتا تو ہر راوی کی  جرح و تعدیل کے جو الفاظ فرما دیتے، اٹھا کر دیکھا جاتا تو تقریب و تہذیب اور تذہیب میں  وہی لفظ مل  جاتا ، اسکو کہتے ہیں علم راسخ اور  علم سے شغف کامل اور علمی  مطالعہ کی وسعت ۔

       حفظ حدیث اور علم حدیث میں   مہارت تامہ کا مشاہدہ کرنا ہے  تو آپ کی تصا  نیف  کا مطالعہ کر کے اسکا  اندازہ  ہر ذی علم کر سکتا ہے۔  ورق ورق  پر احادیث و آثار کی تابشیں  نجوم و کواکب کی  طرح  درخشندہ   وتابندہ ہیں ۔

        ماہر لسانیات استاذ گرامی وقار حضرت مولانا  یسن اختر صا حب مصباحی لکھتے ہیں: ۔

        محض اپنے حافظے کی  قوت سے احادث کا اتنا ذخیرہ جمع کر لینا ۔بس آپ کے لئے انعام الہی تھا ۔جس کے  لئے زبان ودل دونوںبیک وقت پکار اٹھتے ہیں ،ذلک فضل اللہ یوتیہ من یشائ۔

       ۱۳۰۳ھ میں مدرسۃ الحدیث پیلی بھیت کے تاسیسی جلسہ میں علمائے سہارنپور، لاہور، کانپور، جونپور، رامپور، بدایوں کی موجود گی میں حضرت محدث سورتی کی خواہش پر حضرت فاضل بریلوی نے علم حدیث پر متواتر تین گھنٹوں تک پرمغز اور مدلل کلام فرمایا ۔جلسہ میں موجود سارے علمائے کرام نے حیرت واستعجاب کے ساتھ سنا اور کافی تحسین کی ۔ مولانا خلیل الرحمن بن مولانا احمد علی محدث سہارنپوری نے تقریر ختم ہونے پر بے ساختہ اٹھ کر حضرت فاضل بریلوی کی دست بوسی کی اور فرمایا :کہ اگر اس وقت والد ماجد ہوتے تو وہ علم حدیث میں آپ



Total Pages: 604

Go To