$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

کردیا ،حضرت اگرا س دوشالہ کولے لیتے اورباہر آکر فروخت کرکے اسکی رقم  غرباء میں خیرات کردیتے تو بلا وجہ اسکے غضب میں اشتعال بھی پیدا نہ ہوتا اور غریبوں کا بھی کچھ

بھلا ہوجاتا ۔

        آپ نے فرمایا: اگر میرے اس فعل کولوگ تقلیدی نمونہ سمجھ کر عمل کرتے توشاید میں ایسا ہی کرتا ،لیکن مجھے خوف ہواکہ کہیں صرف لینے کی حدتک ہی لوگ دلیل نہ بنالیں ۔(۱۱۱)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۱۰۔   تہذیب  التہذیب لا بن حجر،            ۳/۹

۱۱۱۔   الطبقات  الکبری لا بن سعد             ۵/۳۹۵

        جرأت وحق گوئی اوراستغناء وبے نیازی کی یہ مثالیں اس بات کو واضح کررہی ہیں کہ محدثین وفقہاء نے کسی حاکم وقت کے دربار کی کاسہ لیسی اختیار نہ کرکے صرف اپنے رب کریم کی عنایت کردہ حلال روزی پر قناعت کی اور حق بات کہنے میں کسی سے کبھی مرعوب نہ ہوئے ،

وہ سلاطین اسلام جنہوں نے علم حدیث  کی تدوین میں 

محدثین کی بھر پور اعانت کی

        جن سلاطین اسلام نے سرمایۂ علم وفن کی حفاظت کابیڑااٹھایا اور انکے علمی وقار کی قدرکرتے ہوئے ان سے دین ومذہب کی حفاظت اورعلوم حدیث وسنت کی ترویج واشاعت میں حکومتی سطح پر حصہ لینے کی پیش کش کی تو پھر ان چیزوں کو یہ حضرات سراہتے اورتائید غیبی منصور فرماتے تھے ۔

       امام زہری حکومت اور خلفاء کے دربار سے متعلق اسی طور پرہوئے اور آخر کار علم حدیث کی تدوین میں باقاعدہ شریک رہے ،اپنا واقعہ یوں بیان کرتے تھے ۔

        مروانیوں کے پہلے خلیفہ عبدالملک بن مراون کا ابتدائی دورحکومت مدینہ منورہ کے لوگوں کیلئے انتہائی فقروفاقہ اورآلام ومصائب کا زمانہ تھا۔ واقعہ حرہ کے جرم میں باشندگان مدینہ کو مجرم ٹہرایا گیا  اورحکومت نے زندگی کی سہولتوں کی ساری راہیں بند کردی تھیں ۔

        آ پ کے والد مسلم بن شہاب کا شمار بھی بڑے مجرموں میں تھا لہذا آپکے گھر کی حالت اورزیادہ زبوں تھی ،آخرکار معاشی مشکلات سے تنگ آکر آپ نے سفر کارادہ کیا کہ گھر سے نکل کرباہر قسمت آزمائی کریں ۔

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html