$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

حوثرہ کے اس سوال کوسنکر منہ پھیرلیا اورکچھ جواب نہ دیا ۔

        حوثرہ جواب کا انتظار کرکے جب جانے کیلئے کھڑاہوا تب آپ نے اسکی طرف دیکھتے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۰۸۔  تذکرۃ الحفاظ للذہبی،                ۱/۱۲۲

۱۰۹    تہذیب التہذیب لا بن  حجر،           ۶/۲۰۱

          تہذیب التہذیب لا بن حجر،            ۳/۹

 ہوئے فرمایا:۔        

       تقتل کل یوم خلقا وتسالنی عن دم ۔

        روزانہ خلق خداکوقتل کرتاہے اور مجھ سے کھٹمل کے خون کے بارے میں پوچھتا ہے۔

 حوثرہ نے تلملادینے والاجملہ سنا لیکن کچھ کہنے کی ہمت نہ ہوئی اور چپ چلاگیا ۔

 امام طاؤس بن کیسان

        آپ اکابر تابعین سے ہیں ،عبادلہ اربعہ ،ابوہریرہ، ام المومنین عائشہ صدیقہ وغیرہم سے شرف تلمذ حاصل رہا ۔امام زہری ،وہب بن منبہ ،عمروبن دینار ،اور مجاہد جیسے اساطین ملت آپکے تلامذہ میں شمار ہوتے ہیں ۔حضرت ابن عباس فرماتے تھے :میں انکو اہل جنت سے جانتاہوں ۔ حضرت ابن حبان نے فرمایا ،آ پ یمنی باشندگان میں عابد وزاہدلوگوں میں شمار

ہوتے تھے ۔ چالیس حج کئے اورمستجاب الداعوت تھے۔(   ۱۱۰)

        بنوامیہ کی حکومت کی طرف سے ان دنوں حجاج بن یوسف کا بھائی محمد بن یوسف یمن کا گورنر تھا ، ایک مرتبہ کسی وجہ سے یمنی عالم وہب بن منبہ کے ساتھ اسکے یہاں پہونچے ،زمانہ سردیوں کاتھا ،سخت سردی پڑرہی تھی ۔آپکے لئے کرسی منگوائی گئی ،سردی کا خیال کرتے ہوئے  

اس نے دوشالہ منگواکر آپکو اڑھادیا ۔طائوس منہ سے توکچھ نہ بولے لیکن یوں کیا کہ

        لم یزل یحرک کتفیہ حتی القی عنہ ۔

        دونوں مونڈھوں کو مسلسل ہلاتے رہے  حتی کہ دوشالہ کندھوں سے گرگیا ۔

        ابن یوسف آپکے اس طرز کودیکھ رہاتھا اوردل میں آگ بگولہ ہورہاتھا ،لیکن آپکی عوامی

مقبولیت کے پیش نظر کچھ کہہ بھی نہ سکا ۔جب یہ دونوں حضرات باہر آئے تووہب نے کہا: آج تو آپ نے غضب ہی



Total Pages: 604

Go To
$footer_html