$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

       امام ابوزرعہ کا کہناتھا کہ پچاس سال ہوئے جب میں نے حدیثیں لکھی تھیں اوروہ میرے گھر میں رکھی ہیں ،لکھنے کے بعد پھرکبھی دوبارہ مطالعہ نہیں کیا،لیکن جانتاہوں کہ کونسی حدیث کس کتاب میں ہے کس صفحہ میں ہے کس سطر میں ہے ۔

        مشہور محدث وفقیہ اسحاق بن راہویہ استاذ امام بخاری کے بارے میں منقول ہے کہ خراسانی امیر عبداللہ بن طاہر کے دربار میں ابن راہویہ کی کسی دوسرے عالم سے بعض مسائل پرگفتگوہورہی تھی ،کسی کتاب کی عبارت کے سلسلہ میں اختلاف ہوا ، اس پر ابن راہویہ نے امیر عبداللہ سے کہا: آپ اپنے کتب خانہ سے فلاں کتاب منگوایئے ،کتاب منگوائی گئی ،آپ نے فرمایا:۔

        عدمن الکتاب احدی عشرۃ ورقۃ ثم عد سبعۃ اشطر۔( ۸۴)

        کتاب کے گیارہ مدق پلٹ کرساتویں سطرمیں دیکھئے وہی ملے گا جو میں کہہ رہاہوں ۔

        جب وہ عبارت بعینہ مل گئی توامیر نے کہا: ۔

        علمت انک قد تحفظ المسائل ،ولکنی اعجب بحفظک ہذہ المشاہدۃ۔(۸۵)

        یہ چیز تو مجھے معلوم تھی کہ آپ مسائل کے خوب حافظ ہیں ،لیکن آپکی قوت یادداشت اور حفظ کے اس مشاہدہ نے مجھے حیرت میں ڈال دیا ۔

       ان چندواقعات سے اس چیز پرکافی روشنی پڑتی ہے کہ احادیث وسنن کے ذخیرہ کو ان تابعین وتبع تابعین نے اپنے سینے میں کس طرح محفوظ کرلیاتھا ۔ ساتھ ہی یہ بات بھی روزروشن  کی طرح عیاں ہوگئی کہ علم حدیث سینوں سے سفینوں کی طرف   ا   ن حضرات کے  عہد میں  بھی  منتقل ہو تا رہا  بلکہ  کافی  عروج پر تھا۔ ساتھ ہی اس  چیز کی  طرف  اشارہ ملتا ہے کہ وہ حضرات اپنے حفظ وضبط کی تائید کتابت شدہ مواد سے کرتے تھے اورکتابت کا موازنہ حفظ سے کیاجاتا

 تھا ۔

       علامہ پیرکرم شاہ ازہری تدوین حدیث کی مزید تفصیلات پر یوں روشنی ڈالتے ہیں ۔

       عہد نبوی ،عہد  صحابہ اور تابعین میں کتابت وتدوین حدیث کی جو مثالیں ہم نے گذشتہ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۸۴۔     تاریخ دمشق لا بن عساکر،              ۲/۴۱۳

۸۵۔     تاریخ دمشق لا بن  عساکر،              ۲/۴۱۲

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html