$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

  اور بعض میں عمل تو ہوسکتا تھا لیکن ناقص وناتمام رہتا یا باحسن وجوہ انجام نہ پاتا ۔

       ان تمام چیزوں کو سامنے رکھنے سے یہ نتیجہ ضرور ظاہر ہوگا کہ رسول اللہ  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی منشاء مبارک یہ ہی تھی کہ سنن واحادیث پر عمومیت کا رنگ  غالب نہ آئے اور فرق

مراتب کے ساتھ ساتھ کیفیت عمل میں بھی برابری نہ ہونے پائے ورنہ امت مسلمہ دشواری میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۳۵۔     ضیاء النبی،  ۷/۱۱۷

مبتلا ہوگی۔ 

       لہذا خدا وند قدوس نے اپنے فضل وانعام سے ’ لایکلف اللہ نفسا الا وسعہا ،کا  مژدہ اپنے محبوب کے ذریعہ اپنے بندوں کو سنایا اور حضور رحمت عالم  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم نے اپنی رحمت عامہ وشاملہ سے امت مسلمہ کو حرج وضرر میں پڑ نے سے محفوظ ومامون رکھا ۔              

 کتابت حدیث کی اجازت خود حضور نے دی

       تدوین حدیث کو کتابت حدیث کی صورت ہی میں  تسلیم کرنے والے اس بات پر بھی مصر ہیں کہ دوسری اور تیسری صدی  میںحدیث کی جمع وتدوین کا اہتمام ہوا، اس سے پہلے محض زبانی حافظوں پر تکیہ تھا ،اس مفروضہ کی حقیقت کیا ہے بعض کی طرف اشارہ کیا جاچکا ہے ،مزید تفصیل  ملاحظہ فرمائیں ۔ جب اسلام لوگوں کے قلوب واذہان میں راسخ ہوگیا اور قرآن مجید کا کافی حصہ نازل ہوچکا اور اس چیز کا اب خطرہ ہی جاتا رہا کہ قرآن وحدیث میں کسی طرح کا اختلاط روبعمل آئے گا تو کتابت حدیث کی اجازت خود حضور نے عطافرمائی ۔

       حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں :۔

        مامن  اصحاب النبی صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم احداکثر حدیثا عنی الاماکان من عبداللہ عمرو ،فانہ کان یکتب ولااکتب ۔(۳۶)

       صحابہ کرام میں سے کسی کے پاس مجھ سے زیادہ احادیث پاک کا ذخیرہ نہیں سوائے حضرت عبداللہ بن عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہما کے ، کیونکہ وہ لکھا کرتے تھے اور میں لکھتا  نہیں تھا ۔

       روی عن ابی ہریرۃ رضی اللہ تعالیٰ عنہ ان رجلا من الانصار کان یشہد حدیث رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم فلایحفظہ فیسأل  اباہریرۃ فیحدثہ ،ثم شکا قلۃ حفظہ الی رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ



Total Pages: 604

Go To
$footer_html