$header_html

Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

اسے کبھی نہیں بھولا ۔

       امام عامرشعبی جنہوں نے پانچسو صحابہ کرام کا زمانہ پایا ، علم حدیث میں حفظ واتقان کا یہ عالم کہ فرماتے تھے ،بیس سال ہوئے میرے کانوں میں کوئی ایسی حدیث نہ پڑی جسکا علم مجھے اس سے زیادہ نہ ہو ۔بآں جلالت علم ارشاد فرمایا:۔

       ماکتبت سوداء فی بیضاء ،وما استعدت حدیثا من النسیان۔ (۱۸)

        میں نے کبھی سیاہی سے سفیدی پر نہ لکھا ،اور نسیان کے خوف کی وجہ سے میں نے کبھی کسی کی بات نہ دہرائی ۔

       بہر حال عربوں کا حفظ وضبط اتنا نظری مسئلہ نہیں کہ اس پر مزید شہادتیں پیش کی جائیں ، منصف کیلئے یہ بہت کچھ ہیں اور علم وفن سے تعلق رکھنے والے اس بات سے بخوبی واقف ہیں کہ یہ ان حضرات کا عام مذاق علمی تھا جس سے کام لیکر انہوں نے علوم ومعارف کے دریابہائے جنکا منہ بولتا ثبوت آج کا سرمایہ علم وفن ہے ۔

  اہل عرب کتابت سے بھی واقف تھے

       ویسے حق وانصاف کی بات یہ ہے کہ جہاں اہل عرب کے حافظے ضرب المثل تھے اور انہوں نے بہت بڑاسرمایہ زبانی یادرکھا وہیں یہ بات بھی ثابت ومتحقق ہوچکی ہے کہ انکو نوشت وخواند سے بالکلیہ بے بہرہ قرار دینا بھی درست نہیں ۔

       علامہ پیرکرم شاہ ازہری لکھتے ہیں:۔

       مستشرقین نے اس سلسلہ میں دومتضاد موقف اختیار کئے ہیں ،ایک طرف وہ لوگ ہیں جوکہتے ہیں کہ اسلام سے پہلے عربوں میں صرف گنتی کے چند لوگ لکھنا پڑھنا جانتے تھے ۔ اس سے وہ عربوں کو بالکل اجڈ ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں ۔

       دوسری طرف وہ لوگ ہیں جو کہتے ہیں : عربوں میں لکھنے پڑھنے والے لوگوں کی کمی نہ تھی بلکہ عرب میں لکھنے پڑھنے کاعام رواج تھا ۔اس خیال کے لوگ اپنے موقف کو ثابت کرنے کیلئے یہاں تک چلے جاتے ہیں کہ وہ کہتے ہیں کہ قرآن حکیم میں امت مسلمہ کو امیین ۔(۱۹)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۸۔    الطبقات الکبری لا بن سعد،

 



Total Pages: 604

Go To
$footer_html