Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

میں نہیں سنی۔( ۶۲)

        امیرالمومنین مولی المسلمین حضرت علی مرتضی کرم اللہ تعالیٰ وجہہ الکریم کی احتیاط ملاحظہ فرمائیں ،فرماتے ہیں :

       میں جب حضور اقدس  صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم سے کوئی حدیث سنتا تواللہ تعالیٰ اس حدیث سے جو چاہتا مجھے نفع عطافرماتا۔ جب کوئی دوسرا میرے سامنے کوئی حدیث بیان کرتاتو میں اس سے قسم لیتا، جب وہ قسم کھاتا تو میں اسکی حدیث کو تسلیم کرلیتا ۔

       حضرت امیر معاویہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے یہ اعلان کرادیا تھا ۔

       اتقواالروایات عن رسول اللہ صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم الاماکان یذکر منہا فی زمن عمر ، فان عمر کان یخوف الناس فی اللہ تعالی۔ٰ  (۶۳)

        حضور اقدس صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کی احادیث بیان کرنے میں اللہ تعالیٰ سے ڈرو ،صرف وہ احادیث بیان کرو جو حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے عہد ہمایوں میں روایت ہوتی تھیں ، کیونکہ حضرت عمر اس سلسلہ میں لوگوں کواللہ کا خوف دلاتے  تھے ۔

       اس سختی سے صحابہ کرام کا مقصد صرف یہ تھا کہ لوگ جن چیزوں کو حضور اقدس صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کے حوالے سے سنیں اس میں کسی قسم کے شک کی گنجائش نہ ہو ۔

       یہ ہی وجہ ہے کہ بعض صحابہ کرام جو اگر چہ سفر وحضر میں حضور کے ساتھ رہے لیکن ان سے احادیث بہت کم مروی ہیں ۔ عشرہ مبشرہ اگرچہ علم وفضل اور زہدوتقوی میں غیر معمولی حیثیت

کے حامل تھے لیکن ان سے احادیث کی اتنی تعداد منقول نہیں جتنا انکے فضل وکمال کا تقاضا تھا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۶۲۔    ضیاء النبی                              ۷/۱۰۴

۶۳۔     ضیاء النبی،                            ۷/۱۰۴

کہ ان حضرات کے شرائط سخت تھے ۔

        بعض صحابہ کرام تو جب احادیث روایت کرنے کا ارادہ فرماتے ان پر رعشہ طاری ہوجاتا اور لرزہ براندام ہوجاتے تھے ، حضرت عمر بن میمون رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں ۔

       میں ہرجمعرات کی شا م بلاناغہ حضرت ابن مسعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی خدمت میں حاضر ہوتا لیکن میں



Total Pages: 604

Go To