Book Name:Jame Ul Ahadees Jild 1

        تمام خوبیاں اللہ تعالیٰ کیلئے ،پاک ہے وہ ذات جس نے فرمانبرداربنادیا  اسے ہمارے لئے  ،اور ہم اس پر قابو پانے کی قدرت نہیں رکھتے ۔اور یقینا ہم اپنے رب کی طرف لوٹ کرجانے والے ہیں ۔

       پھر آپ نے تین مرتبہ الحمد للہ پڑھا اور تین مرتبہ تکبیر کہی اور پھر یہ کلمات پڑھے ۔

       سبحانک لاالہ الا انت قد ظلمت نفسی فاغفرلی۔

         تو پاک ہے تیرے سواکوئی معبود نہیں ،میں نے اپنی جان پر ظلم کیاہے مجھے معاف فرما۔

       اسکے بعد آپ مسکرائے ،میں نے عرض کیا : امیرالمومنین ! آپکے مسکرانے کی وجہ کیا ہے؟   آپ نے فرمایا :۔

       میں نے حضور اقدس صلی اللہ  تعالیٰ علیہ وسلم کووہ کام کرتے دیکھاہے جومیں نے اب کیا ،حضور اس کام کے بعد مسکرائے تومیں نے عرض کیا: یارسول اللہ ! مسکرانے کی وجہ کیا ہے ؟ آپ نے فرمایا :۔

        بندہ جب رب اغفرلی کہتاہے تو اللہ تعالیٰ بہت خوش ہوتا ہے اور فرماتا ہے : میرے بندہ کو یقین ہے کہ میرے بغیر کوئی گناہوں کا بخشنے والا نہیں ۔(۵۷)

        اس طرح کی مثالیں بے شمارمنقول ہیں جنکی جمع وتالیف کیلئے دفتر درکار ،منصف مزاج  اور حق تلا ش کرنے والا ان چند واقعات سے یہ فیصلہ کرسکتا ہے کہ صحابہ کرام  رضوان اللہ تعالیٰ علہم احادیث طیبہ اور سنت رسول پر کس طرح سختی سے کاربند تھے اور دیکھنے والوں کو سیرت

رسول کا عکس جمیل انکی زندگیوں میں صاف نظر آتاتھا  ۔نہ  جانے وہ کونسے اسباب تھے جنکی بناپر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۵۷۔     ضیاء النبی،                   ۷/۹۲

منکرین حدیث نے ان واضح بیانات کو بھی لائق اعتنانہ سمجھا اور آج تک وہی ایک وظیفہ ورد

زبان ہے کہ تدوین حدیث دوسوسال بعد عمل میں آئی ۔لہذا قابل عمل نہیں۔

       علامہ پیر کرم شاہ ازہری نے اس سلسلہ میں کیاخوب لکھاہے ۔فرماتے ہیں ۔

       مستشرقین (اور منکرین حدیث ) تدوین کوہی حفاطت کا واحد ذریعہ سمجھتے ہیں ۔لیکن ہم ان سے پوچھنے کاحق رکھتے ہیں کہ ذراوہ اس بات کی وضاحت فرمائیں کہ کیا وہ چیز زیادہ محفوظ رہی ہے جسکو خوب صورتی کے ساتھ  مدون کرکے کتب خانوں کی الماریوں کی زینت بنادیا جائے یاوہ چیز زیادہ محفوظ رہی ہے جسے لاکھوں بلکہ کروڑوں



Total Pages: 604

Go To