Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

معمول رہا کہ جیسے ہی اسکول میں چُھٹّیاں ہوتیں تو دوماہ مَدَنی قافِلوں میں سفر کیا کرتے تھے حتّٰی کہ جس سال اپریل میں شادی ہوئی اُس سال بھی(شادی کے ایک ڈیڑھ ماہ بعد) جُون جولائی کی چُھٹّیاں ہوتے ہی مَدَنی قافِلے کے مسافِربن گئے ۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                             صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۵۴) زم زم بھائی گِلگِت والے

          مبلغِ دعوتِ اسلامی ورکن شوریٰ،حاجی ابو رضا محمد علی عطاری مدظلہ العالی کا بیان کچھ یوں ہے کہ گرمیوں کی جون جولائی کی چُھٹّیوں میں یہ چھ یا سات برس تک 63دن کے مَدَنی قافلے میں حیدرآباد سے گِلگت (بلتستان)اور اس کے اطراف کے دشوار گزار پہاڑی عَلاقے میں سفر کرتے رہے ہیں جبکہ ان دنوں وہاں شدید سردی ہوتی تھی ، اُس دَوران جِیپوں پرخطرناک راستوں سے گزرتے، بعض اوقات ایک عَلاقے سے دوسرے عَلاقے میں پیدل بھی تشریف لے جاتے ،اس دَوران پہاڑوں پر چڑھنا پڑتا تو دراز گوشوں (گَدھوں )پر زادِ قافِلہ لاد کر خود پیدل چلا کرتے تھے ۔گِلگِت کے مَدَنی قافِلوں میں بار بار کے سفر کی وجہ سے یہ’’ زم زم بھائی گلگت والے ‘‘مشہور ہوگئے تھے ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                   صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 

 



Total Pages: 208

Go To