Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

مُسکرا کربات کرناسنّت ہے       

           دعوتِ اسلامی کے اِشاعَتی اِدارے مکتبۃُ المدینہ کی مطبوعہ 74 صَفحات پر مشتمل کتاب ، ’’ حُسنِ اَخلاق‘‘ صَفْحَہ 15پر ہے:حضرتِ سیِّدَتُنااُمِّ دَرداء رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ،حضرتِ سیِّدُناابو دَردا ء رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُکے مُتَعَلِّق فرماتی ہیں کہ وہ ہر بات مُسکرا کر کیا کرتے ،جب میں نے ان سے اس بارے میں پوچھا تو اُنہوں نے جواب دیا:’’ میں نے حُسنِ اخلاق کے پیکر، ملنساروں کے رہبر ،غمزدوں کے یاوَر، محبوبِ ربِّ اکبر صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّمکو دیکھا کہ آپصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم دَورانِ گفتگو مسکراتے رہتے تھے ۔‘‘( مکارِمُ الاخلاق للطَّبَرانی  ص۳۱۹ رقم ۲۱ )

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                   صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۴۷) نومسلِم پر انفرادی کوشش

          مصطفٰی آباد (رائے ونڈ ، پاکستان) کے اسلامی بھائی عبدالرَّء ُوف عطاری کا بیان ہے کہ تقریباً دو سال قبل (غالباً۱۴۳۱ھ میں )میں نے اسلام قبول کیا اورعالمی مَدَنی مرکز فیضانِ مدینہ باب المدینہ کراچی میں خود کو 12 ماہ کے مَدَنی قافلے میں سفر کے لئے پیش کردیا ۔ قبولِ اسلام کے بعد مجھے بہت سی آزمائشیں پیش آئیں جن سے میرے قدم ڈگمگا جاتے لیکن حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری میرے بہت بڑے مُحسِن ہیں انہوں نے مجھے خوب شفقتوں سے نوازا اور کسی قسم کی کمی محسوس نہیں ہونے دی ۔جب بھی میں ڈگمگانے لگتا تو مجھے ان کی نصیحتیں یا د آجاتیں۔جب کبھی

 

 



Total Pages: 208

Go To