Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(۲۷)  مَطارپر نگاہوں کی حفاظت

          مجلسِ تعویذاتِ عطاریہ کے ذمہ دار محمد اجمل عطاری(مرکزالاولیاء لاہور) کا بیان کچھ یوں ہے کہ مجھے نومبر 1998ء میں محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباریکی رفاقت میں بابُ المدینہ سے بمبئی سفر کا موقع ملا،سارا راستہ انہوں نے نگاہیں جھکا کر رکھیں حالانکہ جہاز میں بے پردگی ، پھر ایئرپورٹ پر امیگریشن کے معاملات کے وَقْت کاؤنٹر پر خواتین سے واسِطہ بھی پڑالیکن بمبئی ائیرپورٹ سے باہَر نکلنے کے بعد انہوں نے بطورِ ترغیب مجھ سے فرمایا:  اَ لْحَمْدُللّٰہعَزَّوَجَلَّ! بابُ المدینہ سے یہاں پہنچنے تک ایک بھی عورت پر میری نظر نہیں پڑی۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۲۸) آنکھوں پرسبز پٹّی باندھ لی!

          باب المدینہ کراچی کے اسلامی بھائی غلام شبیر عطاری کا بیان ہے کہ کچھ عرصے پہلے دعوتِ اسلامی کے عالمی مَدَنی مرکز فیضان مدینہ میں نابینا اسلامی بھائیوں میں مَدَنی کام کرنے کا جذبہ رکھنے والوں کو مَدَنی کورس (جس کو موبیلٹی کورس mobility courseکہتے ہیں )کروایا گیا ، جس میں بینا(یعنی انکھیارے) اسلامی بھائیوں کو نابینا اسلامی بھائیوں کا ہاتھ پکڑ کر کس طرح چلنا چاہئے، ان سے بات چیت کس طرح کی

 



Total Pages: 208

Go To