Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(از محبوب ِ عطارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری)

پھر توجہ بڑھا میرے مرشِد پیا                                نظریں دِل پر جما میرے مرشِد پیا

           نفس حاوی ہوا حال میرابرا                         تجھ سے کب ہے چھپامیرے مرشِد پیا

اب لے جلدی خبر تیری جانب نظر                     میں نے لی ہے لگا میرے مرشِد پیا

      سخت دل ہوچلا ہوگا اب کیا میرا                    دے دے دِل کو جِلا میرے مرشِد پیا

تیری بس اک نظر دل پہ ہوجائے گر                    پائے گایہ شِفاء میرے مرشِد پیا

ایسی نظریں جھکیں پھرکبھی نہ اٹھیں             دے دے ایسی حیامیرے مرشِد پیا

 گرمیں چپ نہ رہا بولتا ہی رہا                             ہوگا نامہ بُرا میرے مرشِد پیا

     بس تِری یاد ہو دِل میراشاد ہو                                  مجھ کو مے وہ پِلا میرے مرشِد پیا

ایساغم دے مجھے ہوش ہی نہ رہے            مست اپنا بنامیرے مرشِد پیا

ہربُرے کام سے خواہشِ نام سے                         دور رکھنا سدا میرے مرشِد پیا

مجھ گنہگار کو اس خطاکار کو                           تو ہی مخلص بنامیرے مرشِد پیا

   شہوتوں کی طلب ختم ہوجائے اب                  کردو تقویٰ عطا میرے مرشِد پیا

   جوملے شکرہو کل کی نہ فکر ہو                        ہوقناعت عطامیرے مرشِد پیا

  ڈال دی قلب میں عظمتِ مصطفی                     تورضا کی ضیاء میرے مرشِد پیا

        گلشنِ سنیّت پہ تھی مظلومیت                               تو نے دی ہے بقامیرے مرشِد پیا

  تیرے احسان ہیں سنتیں عام ہیں                       دیں کا ڈنکابجامیرے مرشِد پیا

 حکمتوں سے تِری ہر سُو دُھومیں پڑِ یں                  توجمالِ رضامیرے مرشِد پیا

 ہے یہ فضلِ خداکہ ہے تجھ پہ فدا                       بچہ ہویا بڑا میرے مرشِد پیا

ہوں نمازیں ادا پہلی صف میں سدا                    ہوخُشوع بھی عطامیرے مرشِد پیا

نفل سارے پڑھوں اورادامیں کروں                  سنتِ قبلیہمیرے مرشِد پیا

باوضو میں رہوں ، اک رکوع بھی پڑھوں              کنزالایماں سدامیرے مرشِد پیا

پورے دن ہونصیب سبزعمامہ شریف                سنتِ دائمامیرے مرشِد پیا

قافلوں میں سفر کرلوں میں عمر بھر        جذبہ ہووہ عطامیرے مرشِد پیا

مجھ سے بدکار سے اس گناہ گار سے        رہنا راضی سدا میرے مرشِد پیا

آخری وَقْت ہے اور بڑاسخت ہے          میرا ایماں بچامیرے مرشِد پیا

اِک عجب تھا مزاجب یہ تیرا گدا          تیری جانب چلامیرے مرشد پیا

مَدَنی مشورہ : یہ اشعاریاد کرلیں اور روزانہ چند منٹ تصورِ مرشد ضرور کریں اور یہ اشعار پڑھیں  اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  اس کی برکتیں آپ خود دیکھیں گے ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !       صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد   

ماٰخذ و مراجع

نام کتاب

مصنف/ مؤلف

مطبوعہ

ترجمۂ قرآن کنز الایمان

اعلیٰ حضرت امام احمد رضا بن نقی علی خان، متوفی۱۳۴۰ھ

مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی

تفسیر خزائن العرفان

صدر الافاضل مفتی نعیم الدین مراد آبادی، متوفی۱۳۶۷ھ

مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی

تفسیرِ نعیمی

حکیم الامت مفتی احمد یار خان نعیمی ، متوفی۱۳۹۱ھ

مکتبہ اسلامیہ مرکز الاولیاء لاہور

صحیح البخاری

امام ابوعبداللہ محمد بن اسماعیل بخاری ، متوفی ۲۵۶ھ

دار الکتب العلمیۃ بیروت، ۱۴۱۹ھ

صحیح مسلم

امام ابو الحسین مسلم بن حجاج قشیری، متوفی ۲۶۱ھ

دار ابن حزم بیروت، ۱۴۱۹ھ

سنن الترمذی

امام ابو عیسیٰ محمد بن عیسیٰ ترمذی ، متوفی ۲۷۹ھ

دار الفکر بیروت، ۱۴۱۴ھ

سنن ابی داوٗد

امام ابوداوٗدسلیمان بن اشعث سجستانی، متوفی ۲۷۵ھ

دار احیاء التراث بیروت، ۱۴۲۱ھ

الموطا

امام مالک بن انس، متوفی ۱۷۹ھ

دار المعرفۃ بیروت، ۱۴۲۰ھ

المسند

امام احمد بن حنبل، متوفی ۲۴۱ھ