Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(اصل قیمت دے کر)خرید لیں،پھرحاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری نے ان سے وہ کتاب پڑھنے کا ہَدَف بھی لے لیا۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

خاموش رہناایک طرح کی عبادت ہے

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!زبان اللہ عَزَّوَجَلَّ  کی عطا کردہ ایسی عظیم نعمت ہے جس کی حقیقی قَدْر وُہی شخص جان سکتا ہے جو قُوّتِ گویائی سے محروم (یعنی گونگا) ہو۔زبان کے ذَرِیْعے اپنی آخِرت سنوارنے کے لئے نیکیوں کا خزانہ بھی اِکٹھّا کیا جاسکتا ہے اور اس کے غَلَط استِعمال کی وجہ سے دنیا وآخِرت برباد بھی ہوسکتی ہے ۔ خاموش رہنا بھی ایک طرح کی عبادت اور کارِ ثواب ہے۔احادیثِ مبارَکہ میں زبان پر قابو پانے کے لئے خاموشی کی بَہُت سی فضیلتیں بیان ہوئی ہیں، سرِ دست ’’چار یار‘‘ کی نسبت سے چار فرامِینِ مصطَفٰے صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم ملاحَظہ کیجئے :{۱} اَلصَّمْتُ اَرْفَعُ الْعِبَادَۃِخاموشی اعلیٰ دَرَجے کی عبادت ہے۔(اَلْفِردَوس بمأثور الْخطاب ۲/۳۶،الحدیث۳۶۶۵) {۲} مَنْ کَانَ یُؤْمِنُ بِاللہِ وَالْیَوْمِ الْاٰخِرِ فَلْیَقُلْ خَیْرًا اَو لِیَصْمُتْ’’جواللہاور قِیامت پر ایمان رکھتا ہے اُسے چاہئے کہ بھلائی کی بات کرے یا خاموش رہے۔‘‘ (بُخاری ،۴ /۱۰۵،الحدیث۶۰۱۸) {۳}اَلصَّمْتُ سَیِّدُ الْاَخْلَاقخاموشی اَخلاق کی

 



Total Pages: 208

Go To