Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

مَدَنی کام کیا کروں گی

          *صادِق آباد(پنجاب)کی ایک اسلامی بہن کا بیان کچھ اس طرح ہے کہ پہلے میں دعوتِ اسلامی کا خوب مَدَنی کام کیا کرتی تھی ، مَدَنی انعامات کا رسالہ بھی پُر کر کے جمع کرواتی اورروزانہ فیضانِ سنّت سے چار’’گھردرس‘‘دیا کرتی تھی ، پھر میرے والد صاحب کا انتقال ہوگیا اور میں ہمت ہار بیٹھی اور سارا مَدَنی کام چھوڑ دیا۔ مَدَنی انعامات کے تاجدار، محبوبِ عطّار حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری  کے وصال پرمَدَنی چینل کے ذریعے  امیرِ اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ وارکین شوریٰ کی ان کے لئے مَحَبَّتیں ، مَدَنی قافِلوں اور اِیصالِ ثواب کی بہاریں دیکھ کر میں نے پکی نیت کی ہے کہ اب میں دوبارہ دعوتِ اسلامی کا مَدَنی کام کرنا شروع کردوں گی،اللہرب العزت مجھے اس پر استقامت عنایت فرمائے ۔ اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                   صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۱۲۱)محبوبِ عطّار پر انفرادی کوشش کرنے والے اسلامی بھائی کے تاثرات وحکایات

          زم زم نگر حیدرآباد (باب الاسلام سندھ )کے اسلامی بھائی محمد نعیم عطّاری کے بیان کا لبِّ لباب ہے کہ یہاللہ عَزَّوَجَلَّ  کا مجھ گناہ گار پر بڑا احسان ہے اور اس کا

 



Total Pages: 208

Go To