Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

مبلّغ اور مُبلِّغہ بن جائیں ،سب دعوتِ اسلامی کے مَدَنی ماحول سے ہر دَم وابَستہ رہیں۔یَااِلٰہَ الْعٰلَمِیْن !پیارے حبیب کی ساری اُمّت کی مغفِرت فرما۔

اٰمِین بِجاہِ النَّبِیِّ الْامین صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۱۰۸)صَحرائے مدینہ بابُ المدینہ میں تدفین

          شیخِ طریقت امیرِ اہلسنّت  دامت برکاتہم العالیہ ،نگرانِ شوریٰ اور کئی اراکینِ شوریٰ ودیگر تنظیمی ذمّے داران نے حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری کے جنازے کو کندھا دیا امیرِ اہلسنّت  دامت برکاتہم العالیہ اور نگرانِ شوریٰ حِفاظتی اُمور کے پیشِ نظر فیضانِ مدینہ ہی رُکے رہے اور جنازے کا جُلوس صحرائے مدینہ باب المدینہ کراچی کی طرف روانہ ہوگیا ، صحرائے مدینہ پَہُنچ کر اسلامی بھائیوں کو مَدَنی انعامات کے تاجدار، محبوب عطار رحمۃُ اللہ تعالٰی علیہ کا آخِری دیدار کروایا گیا ۔پھر ان کومرحوم نگرانِ شوریٰ ،بلبل روضہ ٔ رسول حاجی مشتاق عطاری اور مفتیٔ دعوتِ اسلامی حاجی محمد فاروق عطاریعلیہِما رحمۃُ اللہِ الباریکے پہلو میں دفْن کرنے کے لئے لے جایا گیا ۔ شہزادۂ عطار حضرت مولاناحاجی ابواُسَید عُبَید رضا عطاری مَدَنی  دامت برکاتہم العالیہ نے مرحوم کی قبر کی دیواروں پر انگشتِ شہادت سے (بِغیر روشنائی کے ) کلمۂ پاک لکھا ، پھر قبرکی دیوارِ قبلہ میں طاق کھود کر اس میں شجرۂ قادِریہ رضویہ عطاریہ ودیگر دعاؤں کے پرچے تبرُّکاً رکھے


 

 



Total Pages: 208

Go To