Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

  عَزَّ وَجَلَّ  ان کے دَرَجات بُلند فرمائے ۔

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !     صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

(۳۴) محبوبِ عطّار کی اشک باریاں

(مع نگران شوریٰ کے تأثرات)

        مبلغِ دعوتِ اسلامی ، نگرانِ مرکزی مجلسِ شوریٰ ، حضرت مولانا حاجی ابو حامد، محمدعمران عطاری مدظلہ العالی کا بیان ہے کہ محبوبِ عطّار علیہ رحمۃُ اللہ الغفّار  رقیق القلب تھے، میں نے ان کو کئی مرتبہ روتے دیکھا ہے ، جب قرآنِ پاک کی تلاوت اور اس کا ترجَمہ و تفسیر بیان ہوتا توبسااوقات ان کے آنسو نکل آتے تھے ، جب کبھی خوفِ خدا  اورقبروآخرت کی ہولناکیوں کاتذکرہ ہوتا تومیں نے ایک نہیں کئی مرتبہ دیکھا ہے کہ یہ ایسے روتے تھے کہ ان کے آنسو ٹپ ٹپ گرتے تھے۔اسی طرح نعت خوانی میں بھی ان کو روتے دیکھا ہے ۔ نگرانِ شوری مزید فرماتے ہیں : مجھ سے بارہا وہ اس طرح کے مدنی پھولوں کا مطالبہ کرتے جس سے رقت ، سوز اور عمل کا جذبہ بڑھے نیز باعمل رہتے ہوئے مدنی کام کرنے والی باتوں پر بے حد حوصلہ افزائی فرماتے ۔مجھے حاجی زم زم  علیہ رَحمَۃُ اللہ الاکرمکا تعارف اس وقت ہوا تھا جب میں ایک ذیلی نگران تھا ۔دعوتِ اسلامی کے ہفتہ وار اجتماع میں امیرِاہلسنّت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہنے ایک اسلامی بھائی کانام لے کر تعارف کروایا اور کچھ اس طرح فرمایا کہ یہ آپ کے علاقے میں آکر مدنی انعامات کی ترغیب دلائیں گے۔حاجی زم زم باب المدینہ بابری چوک جہانگیر روڈ پرواقع کنزالایمان مسجد میں بیان کے لئے تشریف لائے اور ہم بھی اپنے ذیلی حلقے(اولین مدنی مرکز دعوتِ اسلامی گلزارِحبیب مسجد) سے قافلہ لے کر پہنچے ۔ اس بیان میں وہ عمل کاجذبہ ابھارنے اور مدنی انعامات پرعمل کرنے کی ترغیب دلارہے تھے ۔ یہ ان کا پہلاتعارف تھا ۔پھرکبھی کبھی ان کا ذکرِ خیر سنتے رہتے اور اس طرح کچھ قربت بھی ہوتی چلی گئی اور آخرِکار مرکزی مجلس شوریٰ میں ان کی رُکنیت ہمارے لئے ایک بہت بڑی نعمت ثابت ہوئی۔یہ اپنے عمل کے ذریعے ہم سب کو مدنی انعامات پرعمل کی ترغیب دلاتے تھے۔ہرماہ کے اِبتدائی دنوں میں (جبکہ شوریٰ کا مشورہ ہوتا ) اپنی جیب سے تمام اراکینِ شوریٰ میں قفلِ مدینہ پیڈاور مدنی انعامات کا رسالہ تقسیم فرماتے تھے۔نمازِ باجماعت کا اہتمام مع سنت قبلیہ کا جذبہ دیدنی تھا ، میراحسنِ ظن ہے کہ یہ اکثر اوقات باوضو رہتے تھے ۔ ان کے مزاج میں چڑچڑا پن، طنز، تنقید، جھاڑناکبھی نہ دیکھا۔مسکراہٹ اور حوصلہ افزائی میں بڑی فراخی فرماتے تھے ، گویا ہر دلعزیزشخصیت تھے۔بڑی نرمی کے ساتھ اپنا موقف بیان فرماتے، طویل دورانیہ خاموش رہتے ، ان کے ساتھ رہنے والا اُکتاہٹ کا شکار نہ ہوتا تھا ، اس کے علاوہ بھی بہت ساری خصوصیات کے حامل تھے ۔ان کا جانادعوتِ اسلامی سمیت مجھ گناہ گار کے لئے بھی بہت بڑانقصان ہے  ۔ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  انہیں بے حساب بخشے اور ہمیں ان کا نِعْمَ الْبَدَل عطافرمائے ۔

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !         صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

خوفِ خدا سے رونے کی فضیلت

      میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! مرحوم حاجی زم زم رضاکی گریہ وزاری بارگاہِ ربِّ باری  عَزَّ وَجَلَّ میں قبول ہوگئی تو ان کا بیڑا پار ہوگا کیونکہ  فرمانِ مصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ہے :  جس مُؤْمِن کی آنکھوں سے اللہ عَزَّ وَجَلَّکے خوف سے آنسو  نکلتے ہیں اگرچِہ مکّھی کے سرکے برابر ہوں ، پھر وہ آنسو اُس کے چِہرے کے ظاہِر ی حصّے کو پہنچیں تو اللہ عَزَّ وَجَلَّ اُسے جہنَّم پر حرام کر دیتا ہے ۔                           

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                               (شُعَبُ الْاِیمان، ۱/ ۴۹۱، الحدیث ۸۰۲ )

         ایک مرتبہ سروَر ِ کونین، رَحمتِ دارین، نانائے حَسَنَین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نیخُطبہ دیا تو حاضِرین میں سے ایک شخص رو پڑا  ۔ یہ دیکھ کر آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا : اگر آج تمہارے درمیان وہ تمام مُؤمِن موجود ہوتے جن کے گناہ پہاڑوں کے برابر ہیں تو انہیں اس ایک شخص کے رونے کی وجہ سے بخش دیا جاتا کیونکہ فرشتے بھی اس کے ساتھ رو رہے تھے اور دُعا کر رہے تھے : اَللّٰہُمَّ شَفِّعِ الْبَکَّائِیْنَ فِیْمَنْ لَّمْ یَبْکِیعنی اے اللہ عَزَّ وَجَلَّ! نہ رونے والوں کے حق میں رونے والوں کی شَفاعت قَبول فرما۔(شُعَبُ الْاِیمان، ۱/ ۴۹۴، الحدیث ۸۱۰)

مِرے اَشک بہتے رہیں کاش ہر دم       تِرے خوف سے تیرے ڈر سے ہمیشہ

                       تِرے خوف سے یاخدا یاالٰہی               میں تھرتھر رہوں کانپتا یاالٰہی   (وسائلِ بخشش ص۷۸)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !    صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد

(۳۵)اسلامی بھائی کی نیند میں خلل نہ پڑے

        محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباریحُقُوقُ الْعِباد کے حوالے سے بے حد حُسّاس تھے ، چنانچِہ باب المدینہ(کراچی )میں مُقیم مبلغِ دعوتِ اسلامی حاجی فیاض عطّاری کا بیان ہے کہ ہم ایک مرتبہ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری کی عِیادت کے لئے نمازِ فجر کے بعد فیضان مدینہ باب المدینہ کراچی کے مُسَتشفیٰ میں پہنچے تو ہمیں اشاروں سے تاکید کی کہ آواز بلند نہ کیجئے گا تاکہ سامنے سوئے ہوئے اسلامی بھائی کی نیند میں خلل نہ پڑے ۔اللّٰہ   عَزَّ وَجَلَّ   کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو ۔  اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !        صلَّی اللہ تعالٰی علٰی محمَّد   

(۳۶) پاؤں پکڑکرمُعافی مانگی

        مبلغِ دعوتِ اسلامی ورُکنِ شوریٰ، ابُو الْقافِلہ سید محمد لقمان عطاری مدظلہ العالی کا کچھ یوں بیان ہے :  ایک اسلامی بھائی نے مجھے بتایا کہ ایک مرتبہ محبوبِ عطار حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہ الباری کا پاؤں میرے پاؤں پر آگیا ، میں نے ذرا بھی بُرا محسوس نہیں کیا تھا مگر یہ حقوقُ العباد کے بارے میں اتنے حُسّاس تھے کہ فوراً آگے بڑھے اور میرے پاؤں پکڑکر مجھ سے



Total Pages: 51

Go To