Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

آرہے تھے ، حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری نے اپنے مُثْبَت جذبات کا اظہار ان الفاظ میں کیا کہ اگر میرا مَدَنی مرکز مجھے ایک مسجد تو کیا صرف ایک گھرمیں مَدَنی کام کرنے کی بھی ذمّے داری دے تو میں اس گھرمیں مَدَنی کام کرتا رہوں گا ۔ حیدر آباد کے ہی ایک اور اسلامی بھائی کا بیان ہے کہ حاجی زم زم رضا عطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری فرمایا کرتے تھے کہ بِالفرض میرا ذمّے دار مجھے لات بھی مارے تو میں جہاں جا کر گروں گا وہیں پر مَدَنی کام شُروع کردوں گا۔الغرض محبوبِ عطار رحمۃُ اللہ تعالٰی علیہ  مَدَنی مرکز کی اطاعت کے حوالے سے بڑا مضبوط ذِہْن رکھتے تھے ۔

اللہ     عَزَّوَجَلَّ کی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدقے ہماری بے حساب مغفِرت ہو۔  امین بِجاہِ النَّبِیِّ الْاَمین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۹۳)انوکھی آرزو

          مجلس مکتوبات وتعویذات عطاریہ (دعوتِ اسلامی)کے ایک ذمّے دار اسلامی بھائی کا بیان ہے کہ مَدَنی انعامات کے تاجدار ،محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضاعطاری عَلَیْہِ رَحمَۃُ اللہِ الباری مجھ سے فرماتے تھے کہ ’’میری خواہش یہ ہے کہ مجھے دنیا میں کوئی نہ جانتا ہو، بس میں ہوں اور میرا پیر،بس مرشد مجھ سے راضی رہیں۔ میں ان کو چھپ چھپ کر دیکھتا رہوں۔‘‘اس اسلامی بھائی کا مزید بیان ہے کہ 1998ء میں سفرِ ہند میں محبوبِ عطّار کی رفاقت ملنے سے قبل میری آرزو یہ تھی کہ بڑے بڑے تمام نگرانوں سے میرے رابطے

 



Total Pages: 208

Go To