Book Name:Mahboob e Attar ki 122 Hikayaat

(۷۲)فرض عُلُوم کورس کے طالبِ علم کی عِیادت

          عطّار نگر(ننکانہ پاکستان)کے اسلامی بھائی زاہِد عطّاری کا بیان کچھ یوں ہے کہ میں ۱۴۳۳ھ میں عالَمی مَدَنی مرکز فیضانِ مدینہ بابُ المدینہ کراچی میں ہونے والے ’’فرض عُلوم کورس‘‘ میں شریک تھا کہ میری طبیعت خراب ہوگئی اور مجھے فیضانِ مدینہ کے مُستَشْفٰی(اسپتال) میں داخل کر لیا گیا تو حاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری میری عیادت کے لئے تشریف لے آئے ۔ میں اپنی خوش نصیبی پر جھوم اٹھا، اگلے دن پھر تشریف لائے اور میری عیادت ودلجوئی کی ۔ مجھے ان کا مریض کی عیادت والے مَدَنی انعام پر عمل کرنابہت اچھا لگا ۔اللہ عَزَّوَجَلَّ حاجی زم زم رضا عطاری کو جنت الفردوس عطا فرمائے۔اٰمِین بِجاہِ النَّبِیِّ الْامین صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                                                      صلَّی اللہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(۷۳)پرانے رفیق کی عِیادت

          زَم زَم نگرحیدر آباد (باب الاسلام سندھ )کے اسلامی بھائی محمد انیس عطّاری کا بیان ہے کہ مجھے طویل عرصہ محبوبِ عطّارحاجی زم زم رضا عطاری علیہ رحمۃُ اللہِ الباری کی صحبت میں رہنے کا شَرَف حاصل ہے ،بعض اوقات میں اپنے گھریلو مُعامَلات کی وجہ سے شدید پریشان ہوجاتا تو یہ میری ڈھارس بندھایا کرتے تھے ،میں نے ان کو بَہُت باعمل پایا۔ پھر میں نے رِہائش کہیں اور منتقِل کرلی ، یوں تقریباً10سال ان کا قُرب نہ


 

 



Total Pages: 208

Go To