Book Name:Qoot ul Quloob Jild 1

کی خاموشی تفکر کی بناپر نہ ہو وہ حالتِ سہو میں   ہے،   جس کا کلام بطورِ ذکر نہ ہو وہ لغو باتوں   میں   مشغول ہے اور جس کی نظر بطورِ عبرت نہ ہو وہ حالتِ لہو و لعب میں   ہے۔ ([1])

        بزرگانِ دین رَحِمَہُمُ اللہُ الْمُبِیْن سے  منقول ہے کہ لوگوں   پر ایک زمانہ ایسا آئے گا کہ نیند ان کا افضل عمل شمار ہو گی اور اعمال کے فاسد ہونے اور علوم کے مشتبہ ہونے کی وجہ سے  خاموشی کا شمار ان کے افضل علوم میں   ہو گا۔ مزید فرماتے ہیں   کہ حرام پھیل جانے اور حلال کم ہو جانے کی وجہ سے  بھوک ان کی سب سے  زیادہ فضیلت والی حالت ہو گی۔

عقل کی نیند اور بیداری: 

            علمائے کرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام فرماتے ہیں   کہ خاموشی عقل کی نیند اور گفتگو اس کی بیداری ہے اور ہر بیداری نیند کی محتاج ہوتی ہے،   کوئی عقل مند جب بھی خاموش ہوتا ہے تو اس کی عقل مجتمع ہو جاتی ہے اور اس کا ذہن حاضر ہو جاتا ہے۔ ([2])

بر محل گفتگو کرنا: 

        حضرت سیِّدُنا ابن عباس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَانے حضرت سیِّدُنا مجاہد عَلَیْہِ رَحمَۃُاللہِ الْوَاحِد کو نصیحت کرتے ہوئے ارشاد فرمایا: ’’ہر گز لایعنی باتیں   نہ کرنا کہ یہی زیادہ محفوظ طریقہ ہے،   ورنہ مجھے خدشہ ہے کہ تم کسی غلطی کے مرتکب ہو جاؤ گے اور مفید باتیں   بھی اس وقت تک نہ کرنا جب تک کہ کوئی محل نہ دیکھ لو کہ بعض اوقات مفید گفتگو کرنے والا بھی غیرِ محل میں   گفتگو کرنے کی وجہ سے  شرمسار ہو جاتا ہے۔ ‘‘   ([3])

        علمائے کرام رَحِمَہُمُ اللہُ السَّلَام فرماتے ہیں   کہ بندے کا تقویٰ اس کی گفتگو میں   نظر آتا ہے۔ ([4]) مروی ہے کہ سید الشاکرین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا: ’’جس کی گفتگو زیادہ ہو اس کی غلطیاں   بھی زیادہ ہوتی ہیں   اور جس کی غلطیاں   کثیر ہوں   اس کا دل مردہ ہو جاتا ہے۔ ‘‘   ([5])

        ایک قول ہے کہ جب کلام کم ہوتا ہے تو درستی زیادہ ہو جاتی ہے اور کئی بزرگانِ دین رَحِمَہُمُ اللہُ الْمُبِیْن سے  مروی ہے کہ سلامتی کے دس حصوں   میں   سے  نو حصے خاموشی میں   ہیں  ۔ ([6])

زبان کی وجہ  سے  گرفت: 

        منقول ہے کہ ہر ہنسی مزاح یا لغو بات پر بندے کو پانچ مقامات پر جھڑکنے اور وضاحت طلب کرنے کی خاطر روکا جائے گا:

                                                                                                 (1) … تونے فلاں   کلمہ کیا کہاتھا؟ کیا اس میں   تیرا کوئی فائدہ تھا؟

                                                                                                 (2) … تونے جو بات کی تھی کیا اس سے  تجھے کوئی نفع حاصل ہوا؟

                                                                                                 (3) … اگر تو وہ بات نہ کرتا تو کیا تجھے کوئی نقصان اٹھانا پڑتا؟

                                                                                                 (4) … تو خاموش کیونکر نہ رہا تا کہ انجام سے  محفوظ رہتا؟

                                                                                                 (5) … تونے اس کی جگہ  (سُبْحَانَ اللہِ وَ الْحَمْدُ لِلّٰہِ)  کہہ کر اجرو ثواب کیوں   حاصل نہ کیا؟

        منقول ہے کہ منہ سے  نکلی ہوئی ہر بات کے لئے تین قسم کے اعمال نامے کھولے جائیں   گے:  (۱) … پہلا اعمال نامہ ہو گا یہ بات کیوں   کی؟  (۲) … دوسرا ہو گا کہ اس پر عمل کیسے  کیا اور  (۳) … تیسرا ہو گا کہ یہ بات کس کے لئے کہی اور کس کی خاطر اس پر عمل کیا؟ اگر وہ ان تینوں   اعمال ناموں   کے سوالات سے  نجات پا گیا تو درست،   ورنہ حساب وکتاب کی خاطر اس کا ٹھہرنا طویل ہو جائے گا۔

مومن ومنافق کی زبان: 

        حضرت سیِّدُنا حسن بصری عَلَیْہِ رَحمَۃُاللہِ الْقَوِی فرماتے ہیں   کہ مومن کی زبان اس کے دل کے نیچے ہوتی ہے،   جب بھی وہ کوئی بات کرنے کا ارادہ کرتا ہے تو سوچتا ہے اگر اس کے حق میں   ہو تو بولتا ہے اور اگر مخالف ہو تو رک جاتا ہے جبکہ منافق کا دل اس کی زبان کے کنارے پر ہوتا ہے یعنی دل میں   جو خیال پیدا ہوتا ہے بول دیتا ہے،   لمحہ بھر توقف نہیں   کرتا بلکہ اس بات سے  واپس بھی نہیں   پلٹتا۔ ([7])

        مروی ہے کہ حضور نبیٔ اکرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا: ’’عالم کی آفت یہ ہے کہ اس کا کلام کرنا اسے  اپنے خاموش رہنے سے  زیادہ بھاتا ہو۔ ‘‘

فضول باتوں   سے  رکنے والے کے لئے خوش خبری: 

        کلام میں   بناوٹی بناؤ سنگھار اور زیادتی ہوتی ہے جبکہ خاموشی میں   سلامتی اور غنیمت ہے۔ چنانچہ حضورنبی ٔپاک صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم  کے مواعظِ حسنہ میں   ہے:  ’’ اس شخص



[1]     تاریخ مدینۃ دمشق، الرقم ۵۵۱۹ عیسی بن مریم، ج۴۷، ص ۴۳۹

[2]     موسوعۃ لابن ابی الدنیا، کتاب العقل و فضلہ، الحدیث: ۹۸، ج۶، ص۴۸۶

[3]     موسوعۃ لابن ابی الدنیا، کتاب الصمت، باب النھی عن الکلام، الحدیث: ۱۱۴، ج۷، ص۸۸

[4]     موسوعۃ لابن ابی الدنیا، کتاب الورع، باب الورع فی اللسان، الحدیث: ۹۵، ج۱، ص۲۱۱  ’’یسبین‘‘ بدلہ ’’انک لتعرف‘‘

[5]     المعجم الاوسط، الحدیث: ۲۲۵۹، ج۱، ص۶۱۵

[6]     الفردوس بماثور الخطاب، الحدیث: ۴۰۵۳ ،ج۲، ص۸۵  مفھوم الحدیث

[7]     الزھد للامام احمد بن حنبل، الزھد الحسن بن ابی الحسن، الحدیث: ۱۵۴۰، ص۲۸۰ ’’المومن، منافق‘‘ بدلہ ’’الحکیم، الجاھل‘‘



Total Pages: 332

Go To