Book Name:Qoot ul Quloob Jild 1

عبادات کے ظاہری و باطنی آداب پر مشتمل تصوف کی پہلی مبسوط کتاب

قُوْتُ الْقُلُوب (مترجم،  جلد اول)

مُصَنِّف

اِمامِ اَجَلّ حَضْرتِ سَیِّدُنَا شِیْخ اَبُو طَالِبْ مَکّی عَلَیْہِ رَحمَۃُاللہِ الْقَوِی

 (اَلْمُتَوَفّٰی ۳۸۶ھ)

پیش کش: مَجْلِس اَلْمَدِیْنَۃُ الْعِلْمِیَّہ

 (شعبہ تراجم کتب)

ناشر

مکتبۃُ المدینہ بابُ المدینہ کراچی

 

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

’’فیضانِ قوتُ القلوب جاری رہے گا  ‘‘  

 کے23 حُروف کی نسبت سے اس کتاب کو پڑھنے کی ’’ 23  نیّتیں ‘‘  فرمانِ مُصطَفٰے صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنِیَّۃُ الْمُؤْمِنِ خَیْرٌ مِّنْ عَمَلِہٖ یعنی مسلمان کی نیّت اس کے عمل سے  بہتر ہے۔ ([1])

دو مَدَنی پھول:        (۱)  بغیر اچھی نیّت کے کسی بھی عملِ خیر کا ثواب نہیں   ملتا۔

 (۲)  جتنی اچّھی نیّتیں   زِیادہ،   اُتنا ثواب بھی زِیادہ۔

 (۱) ہر بار حمد و  (۲) صلوٰۃ اور (۳) تعوُّذ و (۴) تَسمِیّہ سے  آغاز کروں   گا  (اسی صَفْحَہ پر اُوپر دی ہوئی دو عَرَبی عبارات پڑھ لینے سے  چاروں   نیّتوں   پر عمل ہو جائے گا)   (۵) رِضائے الٰہی کیلئے اس کتاب کا اوّل تا آخِر مطالَعہ کروں   گا (۶)  حتَّی الْوَسْع اِس کا باوُضُو اور (۷) قِبلہ رُو مُطالَعَہ کروں   گا (۸)  قرآنی آیات اور (۹) اَحادیثِ مبارَکہ کی زِیارت کروں   گا  (۱۰) جہاں   جہاں   اللہ کا نام پاک آئے گا وہاں عَزَّ وَجَلَّ اور (۱۱)  جہاں   جہاں   سرکار کا اِسْمِ مبارَک آئے گا وہاں   صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم پَڑھوں   گا (۱۲،  ۱۳)  اس کتاب کا مطالعہ شروع کرنے سے  پہلے اس کے مؤلف اور دیگر بزرگانِ دین کو ایصالِ ثواب کروں   گا (۱۴)  (اپنے ذاتی نسخے پر)   عِندَ الضرورت خاص خاص مقامات پر انڈر لائن کروں   گا  (۱۵)  (اپنے ذاتی نسخے کے)  یادداشت والے صَفْحَہ پر ضَروری نِکات لکھوں   گا (۱۶) اولیا کی صفات کو اپنائوں   گا (۱۷) دوسروں   کو یہ کتاب پڑھنے کی ترغیب دلائوں   گا (۱۸،  ۱۹)  اس حدیثِ پاک ’’تَھَادَوْا تَحَابُّوْا ‘‘  ([2]) یعنی ایک دوسرے کو تحفہ دو آپس میں   محبت بڑھے گی۔  پرعمل کی نیت سے   (ایک یا حسبِ توفیق)  یہ کتاب خرید کر دوسروں   کو تحفۃً دوں   گا (۲۰) اس کتاب کے مطالَعہ کا ثواب ساری اُمّت کو ایصال کروں   گا (۲۱) اپنی اور ساری دنیا کے لوگوں   کی اصلاح کی کوشش کے لئے روزانہ فکر مدینہ کرتے ہوئے مَدَنی انعامات کا رسالہ پر کیا کروں   گا اور ہر اسلامی ماہ کی دس تاریخ تک اپنے یہاں   کے ذمہ دار کو جمع کروا دیا کروں   گا اور  (۲۲)  عاشقانِ رسول کے مَدَنی قافلوں   میں   سفر کیا کروں   گا  (۲۳)  کتابت وغیرہ میں   شَرْعی غلَطی ملی تو ناشرین کو تحریری طور پَر مُطَّلع کروں   گا  (ناشِرین وغیرہ کو کتابوں   کی اَغلاط صِرْف زبانی بتانا خاص مفید نہیں   ہوتا) ۔

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

 



[1]    المعجم الکبیر للطبرانی،الحدیث: ۵۹۴۲،ج۶ ،ص۱۸۵

[2]    مؤطا امام مالک ، الحدیث: ۱۷۳۱، ج۲،ص۴۰۷



Total Pages: 332

Go To