ہماری کمزوریاں

Image
قارئین! انسان کو زندگی میں حوصلہ افزائی کرنے والے اور حوصلہ شکنی کرنے والے دونوں قسم کے لوگوں سے واسطہ پڑتا ہے۔ البتہ یہ ہمارے اختیار میں ہے کہ ہم حوصلہ شکنی کے جواب میں کیا کرتے ہیں
Image
مجھے ایک اسٹوڈنٹ نے بڑے اُداس لہجے میں بتایا کہ چار برس پہلے ہمارے جامعہ میں حُسنِ قرأت کا مقابلہ (Competition) ہونے والا تھا ،
Image
اے عاشقانِ رسول! ہماری زندگی میں بھی کئی مراحل ایسے آتے ہیں جب ہم صرف وہ کام کرتے ہیں جس میں ہمارا فائدہ ہو۔ یہ انسان کی طبیعت میں شامل ہے۔
Image
ایک شخص کسی گاؤں میں جارہاتھا کہ ایک خوف زدہ بھیڑیا (Wolf) دوڑتاہوا اُس کے پاس آیا اور فریادکرنے لگا : اے رحم دل انسان!شکاری (Hunters) میرے پیچھے پڑے ہیں ،
Image
پنجاب میں ساندل بار کےپولیس اسٹیشن میں ایک شخص نے اپنی تین سالہ بچّی کے اغوا کی رپورٹ درج کرائی کہ وہ اپنی بیٹی کے ساتھ مزار پر گیا تھا
Image
کم وبیش 12سو سال پہلے کے بُزرگ حضرت سیّدنا معروف کرخی رحمۃُ اللہِ علیہ کچھ لوگوں کے ساتھ دریائے دجلہ کے کنارے جا رہے تھے
Image
ایک بوڑھے آدمی نے ڈاکٹر سے کہا کہ میری نگاہ کمزور ہوگئی ہے ،
Image
کہتے ہیں : ایک شخص نے صابن کا کاروبار شروع کیا ، کچھ ہی عرصے میں اس کی پراڈکٹ مقبول ہوگئی ، گاہگوں کی ڈیمانڈ پوری کرنے کے لئے چھوٹی سی فیکٹری میں ڈبل شفٹ میں کام ہونے لگا۔
Image
بنی اِسرائیل کا ایک شخص جو بہت گناہ گار تھا ایک مرتبہ بہت بڑے عابد (یعنی عبادت گزار) کے پاس سے گزرا جس کے سر پر بادَل سایہ کیا کرتے تھے۔