Book Name:Munnay Ki Lash

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

مُنّے کی لاش

شیطان لاکھ سُستی دلائے یہ رسالہ   (18صَفْحات )  مکمّل پڑھ لیجئے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ  آپ کے دل میں غوثِ اعظم عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الاکرم کی محبت مزید بڑھ جائے گی۔  

دُرود شریف کی فضیلت

       نبیِّ معظَّم، رسولِ محترم، سلطانِ ذِی حشم، سراپا جُود و کرم، حبیبِ مُکرَّم،محبوبِ ربِّ اکرم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے فرمایا: مسلمان جب تک مجھ پر درود شریف پڑھتا رہتا ہے فِرِشتے اُس پر رَحمتیں بھیجتے رہتے ہیں اب بندے کی مرضی ہے کم پڑھے یا زیادہ۔    (اِبن ماجہ ج۱ ص۴۹۰ حدیث ۹۰۷دارالمعرفۃ بیروت)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

            خانقاہ میں ایک باپردہ خاتون اپنے منے کی لاش چادر میں لپٹائے ،    سینے سے چمٹائے زاروقِطار رورہی تھی ۔   اتنے میں ایک ’’مَدَنی مُنّا‘‘ دوڑتا ہوا آتا ہے اور ہمدردانہ لہجے میں اُس خاتون سے رونے کا سبب دریافت کرتاہے ۔    وہ روتے ہوئے کہتی ہے :   بیٹا !  میرا شوہر اپنے لخت ِجگر کے دیدار کی حسرت لیے دنیا سے رخصت ہوگیا ہے ،     یہ بچہ اُس وقت پیٹ میں تھا اور اب یِہی اپنے باپ کی نِشانی اورمیری زِندَگانی کا سرمایہ تھا، یہ بیمار ہوگیا ،    میں اسے اسی خانقاہ میں دم کروانے لا رہی تھی کہ راستے میں اس نے دم توڑ دیا ہے، میں پھر بھی بڑی اُمّید لے کریہاں حاضِر ہوگئی کہ اِس خانقاہ والے بُزُرْگ کی وِلایت کی ہر طرف دھوم ہے اوران کی نگاہِ کرم سے اب بھی بَہُت کچھ ہوسکتاہے مگر وہ مجھے صبر کی تلقین کر کے اندر تشریف لے جاچکے ہیں ۔    یہ کہہ کر وہ خاتون پھر رونے لگی۔   ’’مَدَنی مُنّے‘‘  کا دل پگھل گیااور اُس کی رَحمت بھری زَبان پر یہ الفاظ کھیلنے لگے:   ’’مُحتَرَمہ!  آپ کا منّا مرا ہوا  نہیں بلکہ زِندہ ہے!   دیکھو تو سہی!   وہ حرکت کر رہا ہے۔  ‘‘ دُکھیاری ماں نے بے تابی کے ساتھ اپنے ’’مُنّے کی لاش ‘‘ پر سے کپڑا اُٹھا کردیکھا تو وہ سچ مُچ زِندہ تھا اورہاتھ پَیر ہِلاکر کھیل رہا تھا۔   اِتنے میں خانقاہ والے بُزُرگ اندر سے واپَس تشریف لائے ۔   بچے کو زندہ دیکھ کر ساری بات سمجھ گئے اورلاٹھی اُٹھا کر یہ کہتے  ہوئے  ’’مَدَنی مُنّے ‘‘  کی طرف لپکے کہ تو نے ابھی سے تقدیرِ خداوندی   کے سَربَستہ راز کھولنے شروع کردئیے ہیں !    مَدَنی مُنّا وہاں سے بھاگ کھڑا ہوا اوروہ بُزُرْگ اُس کے پیچھے دوڑنے لگے، ’’مَدَنی مُنّا‘‘ یکایک قبرِستان کی طرف مُڑا اوربُلند آواز سے پکارنے لگا:   اے قبروالو! مجھے بچاؤ!  تیزی سے لپکتے ہوئے بُزُرْگ اچانک ٹھٹھک کر رُک گئے کیونکہ قبرِستان سے تین سو مُردے اُٹھ کر اُسی  ’’مَدَنی مُنّے ‘‘ کی ڈھال بن چکے تھے اور وہ  ’’مَدَنی مُنّا‘‘ دُورکھڑا اپنا چاند سا چہرہ چمکاتا مُسکرا رہا تھا۔   اُن بُزُرگ نے بڑی حسرت کے ساتھ ’’مَدَنی مُنّے ‘‘کی طرف دیکھتے ہوئے کہا:  بیٹا! ہم تیرے مرتبے کو نہیں پہنچ سکتے ،    اِس لیے تیری مرضی کے آگے اپنا سرِتسلیم خم کرتے ہیں ۔     (مُلَخَّص ازالحقائق فی الحدائق ج ۱ص۱۴۲ وغیرہ مکتبۃ  اویسہ رضویہ،بہاولپور پاکستان)  

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! آپ جانتے ہیں وہ ’’مَدَنی مُنّا‘‘کون تھا؟اُس مَدَنی مُنّے کا نام عبدُالقادِرتھا اورآگے چل کر وہ غوثُ الاعظم عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الاکرم کے لقب سے مشہور ہوئے ۔    

               کیوں نہ قاسم ہو کہ تو ابنِ ابی القاسم ہے

                                                کیوں نہ قادِر ہو کہ مختار ہے بابا تیرا        (حدائقِ بخشش شریف)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

بَچپَن شریف کی سات کرامات

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! ہمارے غوثُ الاعظم عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الاکرم  مادرزاد ولی تھے ۔    {۱} آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہابھی اپنی ماں کے پیٹ میں تھے اورماں کو جب چھینک آتی اور اس پر جب وہ اَلْحَمْدُ لِلّٰہ کہتیں تو آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہپیٹ ہی میں جواباً  یَرْحَمُکِ اللّٰہ کہتے   (الحقائق فی الحدائق ص۱۳۹)  {۲} آپ رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہیکُم رَمَضَانُ المبارَک بروز پیرصبحِ صادِق کے وَقت دنیا میں جلوہ گر ہوئے اُس وَقت ہونٹ آہِستہ آہِستہ حَرَکت کر رہے تھے اور اللہ اللہکی آواز آرہی تھی   



Total Pages: 7

Go To