Book Name:Khofnak Jadugar

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

خوفناک جادُوگر  اور دیگر حِکایات

شیطان لاکھ سُستی دلائے یہ رسالہ  (26صفحات) مکمَّل پڑھ لیجئے،   اِن شاءَاللّٰہ عَزَّوَجَلَّایمان تازہ ہو گا اور بعض وسوسے بھی دور ہوں گے

          دُرُود شریف کی فضیلت                          

           اللہ  کے مَحبوب ،   دانائے غُیُوب،   مُنَزَّہٌ عَنِ الْعُیُوب عَزَّوَجَلَّ و  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فرمانِ حقیقت نشان ہے:  تمہارے دِنوں میں سب سے افضل دن جُمُعہ ہے،   اسی دن حضرتِ سیِّدُنا آدم صَفِیُّ اللّٰہ پیدا ہوئے ، اِسی میں ان کی روحِ مبارکہ قبض کی گئی ،   اسی دن صور پھونکا جائے گا اور اسی دن ہلاکت طاری ہوگی لہٰذا اس دن مجھ پر دُرُودِ پاک کی کثر ت کیاکرو کیونکہ تمہارادُرُود پا ک مجھ تک پہنچا یا جا تا ہے ۔   صحا بۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْواننے عر ض کی:  ’’یا رسولَ  اللہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ! آپ کے وِصال کے بعد دُرُودپاک آپ تک کیسے پہنچا یا جائے گا؟‘‘ ارشا د فرمایا کہ ’’  اللہ عَزَّوَجَلَّ   نے انبیائے کرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلام کے اجسام کو کھا نا زمین پر حرام فرمایاہے ۔   ‘‘   (سُنَنُ اَ بِی دَاوٗد ج۱ص۳۹۱حدیث ۱۰۴۷داراحیاء التراث العربی بیروت)

تُو زندہ ہے و اللہ  تو زندہ ہے و اللہ

مِری چشمِ عالم سے چُھپ جانے والے

صَلُّو ا عَلَی الْحَبِیب !                                صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

   {1}       خوفناک جادُوگر

          سلسلۂ عالیہ چِشتیہ کے عظیم پیشوا خواجۂ خواجگان،   سلطانُ الھند حضرت سیِّدُنا خواجہ غریب نواز حسن سَنْجَری علیہ رَحْمَۃُ اللّٰہِ القوی کومدینۂ منوَّرہ زادَھَااللّٰہُ شَرَفًاوَّ تَعظِیْماً  کی حاضِری کے موقع پر سیِّدُ الْمُرسَلین،     خَاتمُ النَّبِیّین ،جنابِ رَحمۃٌ  لِّلْعٰلمِین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی طرف سییہ بشارت ملی:   ’’اے مُعین الدِّین توہمارے دین کامُعِین   (یعنی دین کا مددگار)  ہے ،   تجھے ہندوستان کی وِلایت عطا کی،   اجمیر جا،تیرے وُجُود سے بے دینی دُور ہوگی اور اسلام رونق پذیرہو گا۔    ‘‘  (سیرالاقطاب ص۱۲۴ ) چُنانچِہ سیِّدُنا سلطانُ الہند خوا جہ غریب نواز  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ مدینۃ الہندا جمیر شریف تشریف لائے۔    آپ  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ کی مساعیٔ جمیلہ سے لوگ جُوق دَر جُوق حلقہ بگوشِ اسلام ہونے لگے۔    وہاں کے کافِر راجہ پرتھوی راج کو اس سے بڑی تشویش ہونے لگی۔    چُنانچِہ اس نے اپنے یہاں کے سب سے خطرناک اور خوفناک جادوگر اَجَے پال جوگی کوسرکار خواجہ غریب نواز  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ کے مقابلے کے لئے تیّار کیا۔     ’’اَجَے پال جوگی‘‘ اپنے چَیلوں کی جماعت لے کر خواجہ صاحب  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ کے پاس پہنچ گیا۔    مسلمانوں کا اِضطِراب دیکھ کرحُضُور خواجہ غریب نواز  رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ نے ان کے گرد ایک حِصار کھینچ د یا اور حکم فرمایا کہ کوئی مسلما ن اِس دائرے سے باہَر نہ نکلے۔    اُدھر جادوگروں نے جادو کے زور سے پانی،   آگ اور پتھّر برسانے شروع کر دیئے مگر یہ سارے وا رحِصار کے قریب آکر بے کار ہو جاتے ۔    اب اُنہوں نے ایسا جادو کیا کہ ہزاروں سانپ پہاڑوں سے اُتر کر خواجہ



Total Pages: 8

Go To