Book Name:Ashkon Ki Barsat

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ علٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

اَشکوں کی برسات    ([1])

شیطٰن لاکھ سُستی دلائے یہ رسالہ  (36صفحات)  آخر تک پڑھ لیجئے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّایمان تازہ ہو جائیگا۔    

 دُرُود شریف کی فضیلت

                                                امیرُالْمُؤمِنِینحضرتِ مولائے کائنات،   علیُّ الْمُرتَضٰی شیرِ خدا  کَرَّمَ اللہُ تَعَالٰی وَجْہَہُ الْکَرِیْم  فرماتے ہیں:  جب کسی مسجِد کے پاس سے گزرو تو رسولِ اکرم، نُورِ مُجَسَّم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ پر دُرُودِپاک پڑھو۔         (فَضْلُ الصَّلَاۃِ عَلَی النّبِیّ لِلقاضیالجَہْضَمِی ص۷۰ رقم ۸۰)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                      صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

            پُر رونق بازار میں ریشم کے کپڑے کی ایک دکان پراُس دکان کا خادِم مشغولِ دعا ہے اور اللہعَزَّوَجَلَّسے جنَّت کاسُوال کر رہا ہے۔    یہ سن کر مالِکِ دکان پر رِقّت طاری ہوگئی،   آنکھوں سے آنسو جاری ہوگئے حتّٰی کہ کنپٹیا ں اور کندھے کانپنے لگے۔   مالکِ دُکان نے فوراً دُکان بند کرنے کا حکم دیا،   اپنے سر پر کپڑا لپیٹ کر جلدی سے اُٹھے اور کہنے لگے:  افسوس!  ہماللہ عَزَّوَجَلَّ پر کس قَدَرجَری   (یعنی نِڈر)  ہوگئے کہ ہم میں سے ایک شخص صِرفاپنے دل کی مرضی سے اللہ عَزَّوَجَلَّ سے جنَّت مانگتا ہے۔      (یہ توبَہُت ہمّت بھراسُوال ہے)  ہم جیسے   (گنہگاروں )  کو تو  اللہ عَزَّوَجَلَّ  سے   (اپنے گناہوں کی)  مُعافی مانگنی چاہئے۔    یہ مالکِ دکان بَہُت زیادہ خوفِ خدا عَزَّوَجَلَّ کے حامِل تھے،   رات جب نَماز کیلئے کھڑے ہوتے تو ان کی آنکھوں سے اِس قَدَر اَشکوں کی برسات ہوتی کہ چٹائی پر آنسو گرنے کی ٹپ ٹپ صاف سنائی دیتی۔   اور اِتنا روتے اِتنا روتے کہ پڑوسیوں کو رَحم آنے لگتا۔     (مُلَخَّص از اَ لْخَیْراتُ ا لْحِسان لِلْہَیْتَمِی ص۵۰،  ۵۴ دارالکتب العلمیۃ بیروت)

          میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  آپ جانتے ہیں یہ کون تھے؟ یہ مالکِ دکان کروڑوں حنفیوں کے عظیم پیشوا،    سِراجُ الْاُمّہ،   کاشِفُ الْغُمَّہ،   امامِ اعظم،   فَقیہِ اَفْخَم حضرتِ سیِّدُنا امام ابو حنیفہ نعمان بن ثابِت رضی اللہ تعالٰی عنہ  تھے۔    

نہ کیوں کریں ناز اہلسنّت ،  کہ تم سے چمکا نصیبِ اُمّت

سِراجِ اُمّت مِلا جو تم سا،   امامِ اعظم ابو حنیفہ  (وسائلِ بخشش ص ۲۸۳)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیْب!                                    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

چاروں امام برحق ہیں

    سیِّدُنا امامِ اعظم ابو حنیفہ کا نامِ نامی نُعمان،   والِدِ گرامی کا نام ثابِت اورکُنْیَت ابو حنیفہ ہے۔    آپ رضی اللہ تعالٰی عنہ ۔      70ھ؁ میں عراق کے مشہور شہر ’’ کُوفے ‘‘میں پیدا ہوئے او ر 80  سال کی عمر میں  2 شَعبانُ الْمُعظَّم  150ھ؁میں وفات پائی۔     (نُزھَۃُ الْقارِی ج ۱ ص ۱۶۹ ،   ۲۱۹)  اور آج بھی بغدادشریف میں آپ کا مزارِ فائض الانوار مَرجَعِ خَلائِق ہے۔    اَئمّۂ اَربَعَہ یعنی چاروں امام   (امامِ ابو حنیفہ،   امامِ شافِعی،   امامِ مالک اور امامِ احمد بن حنبل  رضی اللہ تعالٰی عنہم)  بَرحق ہیں اور ان چاروں کے خوش عقیدہ مُقَلِّدین آپَس میں بھائی بھائی ہیں ،   ان میں آپس میں تَعَصُّب  (یعنی ہٹ دھرمی)  کی کوئی وجہ نہیں ۔    سیِّدُنا امامِ اعظم ابو حنیفہ عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْاَکْرَم  چاروں اماموں میں بُلند مرتبہ ہیں ،   اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ ان چاروں میں صِرف آپ تابِعی ہیں ۔     ’’تابِعی‘‘  اُس کو کہتے ہیں :    ’’ جس نے ایمان کی حالت میں کسی صَحابی رضی اللہ تعالٰی عنہ سے ملاقات کی ہو اور ایمان پر اُس کا خاتمہ ہوا ہو۔   ‘‘     (اَ لْخَیْراتُ ا لْحِسان ص۳۳)  سیِّدُنا امامِ اعظم عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللہِ الْاَکْرَم نے مختلف رِوایات کے تَحت چند صَحابۂ کِرام علیہم الرضوان سے ملاقات کا شَرَف حاصل کیا ہے اور بعض صَحابہ علیہم الرضوان



[1]   یہ بیان امیرِ اہلسنّت دامت برکاتہم العالیہ نے تبلیغِ قراٰن و سنت کی عالمگیر غیرسیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے عالمی مَدَنی مرکز فیضانِ مدینہ کے اندر ہفتہ وار سنّتوں بھرے اِجتِماع   (۳ شعبانُ المُعظم  ۱۴۳۱؁ ھ  /   15-7-10)  میں فرمایا تھا۔ ترمیم و اضافے کے ساتھ تحریراً حاضرِ خدمت ہے۔     ۔ مجلسِ مکتبۃُ المدینہ



Total Pages: 14

Go To